1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

مصالحت کا دائرہ مسلمانوں تک بڑھانا چاہیے، یہودی رہنما

یہودیوں کے ایک اعلیٰ مذہبی رہنما نے کہا ہے کہ کیتھولک مسیحیوں اور یہودیوں کے مابین چالیس برس سے زائد عرصے سے چلی آ رہی تاریخی مصالحت کا دائرہ مسلمانوں تک بھی بڑھایا جانا چاہیے۔

default

فرانس کے دارالحکومت پیرس میں ایک بین المذاہب کانفرنس کے موقع پر یہودیوں کی بین الاقوامی کمیٹی برائے بین المذاہب مشاورت کے چیئرمین ربیّ رچرڈ مارکر نے کہا کہ اکیسویں صدی کے چیلنجز سے نمٹنے کے لیے مصالحت کا دائرہ کار مسلمانوں تک بڑھانا ہو گا۔

کیتھولک مسیحیوں اور یہودیوں کے درمیان باقاعدہ مذاکرات کا سلسلہ اس وقت سے جاری ہے جب 1962ء سے 1965ء کے عرصے میں ویٹی کن کونسل دوم کے موقع پر کیتھولک کلیسا نے یہودی مخالف رویہ ترک کیا تھا۔ ربّی مارکر نے اس حوالے سے کہا کہ اسلام کے ساتھ بہتر تعلقات کے لیے اس طریقے کو ماڈل کے طور پر اختیار کیا جانا چاہیے۔ وہ پیرس میں اتوار کو شروع ہونے والی چار روزہ بین المذاہب کانفرنس کے افتتاحی اجلاس سے خطاب کر رہے تھے۔ اس نشست میں کیتھولک کلیسا اور یہودیت کے مابین بہتر تعلقات کے لیے جاری کوششوں کا جائزہ لیا جا رہا ہے۔

ربّی مارکر نے کہا: ’دنیا کے دو عظیم مذاہب کی تاریخ میں چالیس برس کا عرصہ کچھ زیادہ نہیں ہے لیکن اس عرصے میں دونوں کے تعلق میں پختگی آئی ہے۔‘

انہوں نے مزید کہا کہ اب دنیا کی توجہ خصوصی طور پر یہودیوں اور مسیحیوں کے مابین تعلقات پر نہیں بلکہ ایسا کرنے کی متعدد وجوہات ہیں کہ تیسرے ابراہیمی مذہب کو بھی اس عمل میں شریک کیا جائے۔

Christmette Vatikan Petersdom Rom Papst

کیتھولک مسیحیوں کے روحانی پیشوا پوپ بینیڈکٹ

واضح رہے کہ یہودی اور مسیحی رہنما مسلمانوں کے ساتھ متعدد بین المذاہب نشستوں میں شریک ہو چکے ہیں تاہم ایسی ملاقاتوں سے وہ نتائج کبھی برآمد نہیں ہوئے جو 1971ء سے شروع ہونے والے کیتھولک یہودی مذاکرات سے حاصل کیے جا رہے ہیں۔

ان چالیس سالوں میں کیتھولک کلیسا نے یہودیوں کے خلاف اپنے گناہوں کی معافی مانگی جبکہ یہودیت کو اپنے روحانی ’بڑے بھائی’ کے طور پر تسلیم کیا۔ یہودی رہنما اس پیش رفت کو سراہتے ہیں۔

پیرس کے اس اجلاس میں شریک کیتھولک رہنما کارڈینل کرٹ کوخ نے بتایا کہ پاپائے روم بینیڈکٹ شانزدہم تین مرتبہ یہودی عبادت گاہوں کا دورہ کر چکے ہیں جو کسی بھی پوپ کی نسبت سب سے زیادہ ہے۔

فرانسیسی کارڈینل Andre Vingt-Trois نے کہا کہ گزشتہ چالیس برس سے جاری مذاکرات کے نتیجے میں کیتھولک مسیحی اور یہودی ایک دوسرے کے دوست کے طور پر جانے جا چکے ہیں۔

رپورٹ: ندیم گِل/خبررساں ادارے

ادارت: شامل شمس

ویب لنکس