1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

مشرق وسطیٰ میں مذاکرات کے امکانات خطرے میں

عرب لیگ کے سیکریٹری جنرل امر موسیٰ نے کہا ہے کہ فلسطینی صدر محمود عباس نے اسرائیل سے بلواسطہ مذاکرات سے انکار کردیا ہے۔ اس فیصلے کی وجہ اسرائیل کی جانب سے متنازعہ علاقے میں نئے مکانات کی تعمیر کا اعلان ہے۔

default

اس سے قبل عرب لیگ نے فلسطینیوں اور اسرائیل کے مابین بالواسطہ مذاکرات کی حمایت ترک کرنے کا عندیہ دیا۔ عرب لیگ کی مشرق وسطیٰ میں قیام امن سے متعلق کمیٹی نے اس بات کا اعادہ بدھ کو قاہرہ میں ہوئے اہم اجلاس میں کیا۔

عرب ممالک اسرائیل کی جانب سے عین ایسے وقت میں مزید متنازعہ یہودی آباد کاری کے اعلان پر شدید برہم ہیں جب فلسطینیوں نے پیشگی شرائط کو ایک طرف رکھتے ہوئے بالواسطہ مذاکرات کی حامی بھری ۔

USA Palästina Israel Nahost Joe Biden Mahmoud Abbas Ramallah

نائب امریکی صدر نے خودمختار فلسطینی ریاست کے قیام سے متعلق امریکی مؤقف دہرایا

عرب ممالک کے وزرائے خارجہ نے لیگ کی جانب سے تین مارچ کو بلواسطہ مذاکرات کی حمایت کا اعلان کیا تھا۔ عرب لیگ کے مطابق منگل کو سولہ سو مزید مکانات کی تعمیر کا اسرائیلی اعلان ظاہر کرتا ہے کہ اسرائیل مذاکرات کی بحالی کے لئے سنجیدہ نہیں۔

دوسری طرف خطے میں موجود امریکی نائب صدر جو بائیڈن نے خودمختار فلسطینی ریاست کے قیام سے متعلق امریکی مؤقف دہراتے ہوئے زور دے کر کہا ہے کہ جو بھی فریق امن کے امکانات کو متاثر کرے گا اس سے حساب لیا جائے گا۔ بائیڈن بدھ کو فلسطینی انتظامیہ کے صدر محمود عباس اور وزیر اعظم سلام فیاض سے ملے جبکہ جمعرات کو ان کی اردن کے شاہ عبداللہ دوئم سے ملاقات کا امکان ہے۔

رملا میں محمود عباس سے ملاقات کے بعد امریکی نائب صدر نے یہودی آباد کاری کے نئے منصوبے کے اعلان کی مذمت کی اور کہا کہ فریقین پر لازم ہے کہ وہ مذاکرات کے لئے سازگار ماحول پیدا کریں۔ جو بائیڈن کے بقول : ’’امن کے حصول کے لئے فلسطینیوں اور اسرائیلیوں کو ہمت اور حوصلے کا تاریخی مظاہرہ کرنا ہوگا، امریکہ ہمیشہ ان کا ساتھ دے گا جو قیام امن کی خاطر خطرات مول لیں گے‘‘۔

فلسطینی وزیر اعظم محمود عباس نے اسرئیلی عوام کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ یہی وقت ہے دو ریاستی فلسفے کی بنیاد پر امن کے حصول کا۔ ایک اسرائیلی ریاست اور ایک خودمختار فلسطینی ریاست جس کا دارالحکومت 1967ء کی سرحدوں کے مطابق یروشلم ہو۔

مشرقی یروشلم پر اسرائیل نے 1967ء کی جنگ میں قبضہ کیا تھا جس پر اب وہ ملکیت کا دعویٰ کرتا ہے جبکہ فلسطینی اسے اپنی مستقبل کی ریاست کا دارالحکومت کا درجہ دیتے ہیں۔ اس متنازعہ خطے میں مزید مکانات تعمیر کرنے کے اسرائیلی اعلان کی بین الاقوامی برادری کی جانب سے بھی مزمت کی گئی ہے۔ ‌

Biden / Netanjahu / Jerusalem / Israel / USA

جو بائیڈن نے اسرائیلی وزیراعظم سے ملاقات کے فوری بعد بستیوں کی تعمیر کے اعلان کی مذمت کردی تھی

چونکہ اس خطے پر اسرائیلی قبضے کو بین الاقوامی طور پر تسلیم نہیں کیا گیا اسی لئے اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل بان کی مون نے یہاں آباد کاری کے اسرائیلی اعلان کو بین الاقوامی قوانین کی خلاف ورزی قرار دیا ہے۔ یورپی یونین کی خارجہ امور کی نگران کیتھرین ایشٹن نے اسرائیلی حکومت پر فیصلہ واپس لینے کے لئے زور دیا ہے۔ عرب لیگ کے سیکریٹری جنرل امر موسیٰ نے اس اعلان کو عربوں کی تذلیل سے تعبیر کیا ہے۔

فلسطینیوں اور اسرائیل کے مابین غزہ جنگ کے بعد سے منقطع مذاکرات کی بحالی کی کوششوں میں چونکہ امریکہ سرفہرست ہے لہذا اس وقت تمام تر عالمی برادری کی توجہ جو بائیڈن کے حالیہ دورہ ء مشرق وسطیٰ پر ہیں۔

رپورٹ شادی خان سیف

ادارت کشور مصطفیٰ

DW.COM