1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

مشرق وسطیٰ میں قیام امن: اقوام متحدہ کے مئوثر کردار کا مطالبہ

بائیس عرب ممالک کی نمائندہ تنظیم عرب لیگ نے مطالبہ کیا ہے کہ فلسطینیوں اور اسرائیل کے درمیان امن مذاکرات کی بحالی میں اقوام متحدہ کو زیادہ مؤثر کردار ادا کرنا چاہیے۔

default

امر موسیٰ

عرب لیگ کے سیکریٹری جنرل امر موسیٰ نے مشرقی وسطیٰ میں قیام امن کے لئے اقوام متحدہ کے مزید مؤثر کردار کی اہمیت کو اجاگر کیا ہے۔ امر سویٰ نے کہا ہے کہ محض امریکی ثالثی پر انحصار نہیں کیا جانا چاہیے۔ خبر رساں ادارے روئٹرز کو دئے گئے ایک انٹرویو میں عرب لیگ کے سیکریٹری جنرل نے امریکہ کے کردار پر براہ راست تنقید سے اجتناب کرتے ہوے کہا کہ کسی بھی ثالث کو غیر جانبدار ہونا چاہیے۔

مصر سے تعلق رکھنے والے امر موسیٰ کے بقول امن عمل کی سمت میں تبدیلی ہونی چاہیے، اور ایسے ثالثین کو آگے آنا چاہیے جو دونوں دھڑوں یعنی فلسطینیوں اور اسرائیل کے مؤقف کو اچھی طرح سمجھ سکیں، نہ کہ محض کسی ایک فریق کے مؤقف کو۔

George Mitchell bei Benjamin Netanyahu in Tel Aviv

امریکی صدر کے نمائندے جارج مچل اور اسرائیلی وزیراعظم بن یامین نیتن یاہو

مشرق وسطیٰ کے معاملے میں اقوام متحدہ، امریکہ، یورپی یونین اور روس اہم ترین ثالث ہیں۔ البتہ امریکہ اس سلسلے میں قائدانہ کردار ادا کررہا ہے۔ امر موسیٰ کے بقول انہیں امریکی صدر پر اعتماد ہے تاہم ثالثی کے عمل میں دیگر اہم فریقوں کو بھی اپنا بہترین کردار ادا کرنا چاہیے۔

غزہ کی گزشتہ جنگ میں چودہ سو فلسطینیوں اور تیرہ اسرائیلوں کی ہلاکت کے بعد سے معطل امن مذاکرات کی بحالی کی اپنی کوششوں کو اجری رکھتے ہوئے امریکی صدر باراک اوباما کے خصوصی مندوب جارج مچل آئندہ ماہ دوبارہ خطے کا دورہ کریں گے۔

دریں اثنا مصر کی ثالثی میں بات چیت کا عمل دوبارہ شروع کرانے کی کوششوں میں پیش رفت کے اشارے ملے ہیں۔ فلسطینیوں اور اسرائیل نے تسلیم کیا ہے کہ معاملات مثبت سمت میں گامزن ہیں۔ البتہ اس بارے میں زیادہ تفصیلات ابھی سامنے نہیں آئیں۔

رپورٹ: شادی خان

ادارت: مقبول ملک

DW.COM