1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

مشرقی سرحد پر جنگی مشقیں کی جائیں گی: پاکستانی فوج

پاکستانی فوج ملک کی مشرقی سرحد پر ہفتے کے روز سے ’عزم نو سوئم‘ کے نام سے جنگی مشقوں کا آغاز کر رہی ہے۔ فوج کے تربیتی ڈائریکٹوریٹ کے سربراہ مزمل حسین نے ان مشقوں کو حربی صلاحیتوں کی جانچ کا بہترین موقع قرار دیا ہے۔

default

ملکی فوج کے ہیڈکوارٹرز میں غیرملکی میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے مزمل حسین نے بتایا کہ ابتدائی طور پر ان مشقوں میں 20 ہزار فوجی حصہ لیں گے اور اختتام تک ان میں شامل فوجیوں کی تعداد 40 اور 50 ہزار کے درمیان تک ہو جائے گی۔

پاکستانی فوج کے اس اعلیٰ عہدیدار کے مطابق ان مشقوں میں فوج کے تمام شعبے شامل ہوں گے اور ان میں ممکنہ روایتی جنگ کے دوران حربی صلاحیت کو مرکز بنایا جائے گا۔ مزمل حسین نے کہا کہ پاکستانی فوج ملک کے شمال مغرب میں عسکریت پسندوں کے خلاف جنگ میں مصروف ہونے کے باوجود ملک کی مشرقی سرحدوں سے غافل نہیں رہ سکتی۔ ان کا کہنا تھاکہ پاکستان خطے میں امن وسلامتی کا خواہشمند ہے اور اس خواہش کی تکمیل میں ملکی افواج کی مضبوطی کلیدی اہمیت کی حامل ہے۔

Pakistan Soldat im Swat-Tal

پاکستانی فوج ملک کے شمال مغرب میں عسکریت پسندوں کے خلاف آپریشن میں بھی مصروف ہے

دفاعی مبصرین پاکستان اور بھارت کے درمیان موجودہ کشیدہ تعلقات کے پس منظر میں ان جنگی مشقوں کو مزید تناؤ کا پیش خیمہ بھی قرار دے رہے ہیں۔ تجزیہ کاروں کا خیال ہے کہ ان عسکری مشقوں سے دونوں ملکوں کے درمیان بداعتمادی کی فضا میں اضافہ ہو سکتا ہے۔

سن 2008ء میں ممبئی حملوں کے بعد سے دونوں ہمسایہ ریاستوں کے درمیان ہر طرح کے امن مذاکرات منجمد تھے اور ابھی رواں برس فروری میں ہی اسلام آباد اور نئی دہلی کے مابین باقاعدہ بات چیت کا دوبارہ آغاز ہوا تھا۔ بھارت نے ممبئی حملوں کی ذمہ داری پاکستان سے تعلق رکھنے والے عسکریت پسندوں پر عائد کی تھی اور بھارت مسلسل مطالبہ کرتا رہا ہے کہ جب تک پاکستان اپنی سرزمین پر دہشت گردی کے نیٹ ورک ختم نہیں کرتا، دونوں ملکوں کے باہمی تعلقات معمول پر نہیں آ سکتے۔

رپورٹ : عاطف توقیر

ادارت : مقبول ملک