1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

مشرقِ وسطیٰ کے لئے امن کوششیں تیز تر

امریکی مندوب جارج مچل شام میں ہیں جب کہ وزیرِ دفاع رابرٹ گیٹس اور قومی سلامتی کے مشیر جیمز جونز بھی مشرقِ وسطٰی کا دورہ کر رہے ہیں۔

default

جارج مچل فلسطینی اتھارٹی کے صدر محمود عباس کے ساتھ

Obama Gesandter George Mitchell trifft Peres

امریکی مندوب جارج مچل کا جون کے بعد مشرقِ وسطیٰ کا یہ دوسرا دورہ ہے

امریکہ کی جانب سے مشرقِ وسطٰی میں قیامِ امن کی کوششوں میں واضح طور پر تیزی دیکھنے میں آ رہی ہے۔

مشرقِ وسطٰی کے لیے خصوصی امریکی مندوب جارج مچل نے شام کے صدر بشار الاسد کے ساتھ اتوار کو ہوئی اپنی ملاقات کو مثبت قرار دیا ہے۔ جون کے بعد یہ جارج مچل کا شام کا دوسرا دورہ ہے۔ امریکی صدر باراک اوباما کے مطابق اسرائیل اور فلسطین کے درمیان تنازعے کے حل کے لیے عرب ممالک اور اسرائیل دونوں فریقین کو کردار ادا کرنا ہوگا اور اس ضمن میں شام کا تعاون ضروری ہے۔

Netanjahu sucht zweite Chance im Weißen Haus

امریکی صدر باراک اوباما کے اقتدار میں آنے کے بعد امریکہ اور اسرائیل کے تعلقات میں سرد مہری دیکھنے میں آئی ہے

امریکہ میں باراک اوباما کے صدر بننے کے بعد مشرقِ وسطٰی میں قیامِ امن اور دو ریاستی حل کو ممکن بنانے کے لیے سنجیدہ کوششیں کی جا رہی ہیں۔ آئندہ چند روز اس حوالے سے انتہائی اہمیت کے حامل قرار دیے جا رہے ہیں۔ ایک طرف جارج مچل شامی قیادت سے ملاقات کر رہے ہیں تو دوسری جانب امریکی وزیرِ دفاع رابرٹ گیٹس مشرق وسطٰی کے دورے پر ہیں جہاں وہ اسرائیل اوراردن کا دورہ کریں گے۔ اسی دوران جارج مچل اور امریکی صدر کے قومی سلامتی کے مشیر جیمز جونز ایک وفد کے ساتھ رابرٹ گیٹس کے ساتھ شریک ہو جائیں گے۔

Benjamin Netanyahu Tel Aviv

اسرائیلی وزیرِ اعظم نیتن یاہو نے تسلیم کیا ہے کہ امریکہ کے ساتھ بعض معاملات پر اسرائیل کے اختلافات ہیں

تاہم امریکی صدر باراک اوباما کے اقتدار میں آنے کے بعد امریکہ اور اسرائیل کے درمیان دو طرفہ تعلقات اپنی نچلی ترین سطح پر پائے جا رہے ہیں۔ امریکی انتظامیہ اسرائیل کو فلسطینی قیادت کے سات مذاکرات کرنے پر زور دینے کے علاوہ غربِ اردن میں نئی یہودی بستیوں کی تعمیر مکمل طور پر روکنے کا بھی مطالبہ کر رہی ہے۔ امریکی مطالبے کے باوجود اسرائیل کی جانب سے وہاں تعمیراتی کام جاری رکھا جا رہا ہے۔ فلسطینی انتظامیہ کا کہنا ہے کہ اسرائیل کے ساتھ مذاکرات غربِ اردن میں نئی آبادیوں کو روکے جانے کے بغیر ناممکن ہیں۔

اسی مناسبت سے اسرائیل کے نو منتخب وزیرِ اعظم بین یامین نیتن یاہو نے کہا ہے کہ امریکہ اور اسرائیل کے درمیان تعلقات انتہائی مضبوط ہیں تاہم ان کے درمیان چند اختلافات بھی پائے جاتے ہیں۔

اعلیٰ امریکی عہدیداروں کی ایک ساتھ مشرقِ وسطیٰ کے دورے کو انتہائی اہم قرار دیا جا رہا ہے۔ اسرائیل اور فلسطین کے درمیان تنازعے کے علاوہ امریکی عہدیدار اس دورے میں ایران کے مسئلے پر بھی بات چیت کریں گے۔ حال ہی میں ایرانی اور اسرائیلی قیادت نے ایک دوسرے پر حملہ کرنے کی بات کی ہے۔ ایران کا متنازعہ جوہری پروگرام بھی ان ملاقاتوں کا ایک اہم موضوع رہے گا۔ اسی دوران یورپی یونین بھی امریکی صدر اوباما کی جانب سے مشرقِ وسطٰی پالیسی کی تائید کرتے ہوئے اس کو ممکن بنانے کے لیے سفارتی کوششوں میں مصروف ہے۔

DW.COM