1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

مشتبہ دہشت گردوں پرمقدمہ چلانےکے فیصلے پر تنقید

امریکہ میں ریپبلکن جماعت کے اعلیٰ عہدے داروں نے اوباما انتظامیہ کی جانب سے ملک پر دہشت گردانہ حملوں کے اہم ملزم خالد شیخ سمیت پانچ دیگر افراد کے خلاف نیویارک میں مقدمہ چلائے جانے کے اقدام کی مذمت کی ہے۔

default

نائن الیون حملوں کا مبینہ ماسٹر مائنڈ خالد شیخ محمد

Mitch McConnell zum US Konjunkturpaket

ریپبلکن رہنما مِچ میکونیل

رپبلکنز نے اس حکومتی فیصلے کو ’’غیرذمہ دارانہ‘‘ قرار دیا ہے۔ امریکی سینیٹ میں ریپبلکن رہنما مِچ میکونیل کا کہنا تھا کہ گوانتانامو بے کے حراستی کیمپ سے مشتبہ دہشت گردوں کو امریکہ لانا شہریوں کو غیرضروری خطرے میں ڈالنے کے مترادف ہے۔ ریپبلکن رہنماؤں نے ڈیموکریٹس کی حکومت کے اس فیصلے کی سخت الفاظ میں مذمت کی۔ میکونیل کا مزید کہنا تھا کہ اس فیصلے سے ملکی سلامتی پر منفی اثرات مرتب ہوں گے۔

سینیٹر جان میکین کا کہنا ہے کہ مشتبہ دہشت گردوں کے خلاف مقدمہ چلانے کی بہترین جگہ ملٹری ٹریبونل ہے۔ میکین کے مطابق خالد شیخ اور اُن کے ساتھی ایسے مجرم ہیں، جنہوں نے امریکہ سمیت متعدد ممالک کے شہریوں کے خلاف جنگی جرائم کا ارتکاب کیا ہے۔

دوسری جانب ڈیموکریٹک پارٹی نے حکومتی فیصلے کو سراہا ہے جبکہ گیارہ ستمبر کے حملوں میں ہلاک والوں کے لواحقین کی جانب سے اس پر ملے جلے ردعمل کا اظہار کیا گیا۔

ڈیموکریٹک سینیٹر پیٹرک لیہی کہتے ہیں کہ دُنیا کی طاقت ور ترین قوم کو اپنے عدالتی نظام پر بھروسہ ہے اور یہ اس فیصلے سے ظاہر بھی ہوتا ہے۔

نیویارک کے میئر مائیکل بلومبرگ نے بھی حکومتی فیصلے کی حمایت کی ہے۔’’یہی مناسب ہے کہ ملزمان ورلڈ ٹریڈ سینٹر کے قریب ہی مقدمے کا سامنا کریں، جہاں نیویارک کے بہت سے شہریوں کو قتل کیا گیا۔‘‘

خالد شیخ اور گیارہ ستمبر کے حملوں کے چار دیگر ملزمان کو گراؤنڈ زیرو کے قریب ایک عدالت میں پیش کیا جائے گا۔ وکیل استغاثہ کا کہنا ہے کہ عدالت سے ملزمان کے لئے سزائے موت کی استدعا کی جائے گی۔

یہ فیصلہ دراصل صدر باراک اوباما کی جانب سے کیوبا میں قائم گوانتانامو بے کا

Eric Holder

امریکی اٹارنی جنرل ایرک ہولڈر

حراستی کیمپ بند کرنے کے سلسلے کی ایک کڑی بھی ہے۔ یہ حراستی کیمپ مشتبہ دہشت گردوں کو قید کرنے کے لئے بنایا گیا تھا۔

تاہم اس مقدمے کے لئے ابھی تک کسی تاریخ کا اعلان نہیں کیا گیا اور نہ ہی ملزمان کو تاحال گوانتانامو بے سے امریکہ منتقل کیا گیا ہے۔ بتایاجاتا ہے حکومت کو سولہ نومبر، پیر تک اس حوالے سے کوئی فیصلہ کرنا ہوگا۔

امریکی اٹارنی جنرل ایرک ہولڈر نے ایک نیوزکانفرنس سے خطاب میں بتایا کہ محکمہ انصاف ’نائن الیون‘ کے حملوں کی منصوبہ بندی میں شامل ملزمان کے خلاف مقدمے کی وفاقی عدالت میں پیروی کرے گا۔

خالد شیخ کے علاوہ دو یمنی، ایک پاکستانی نژاد کویتی اور ایک سعودی شہری اس مقدمے کا سامنا کریں گے۔ ان تمام پر گیارہ ستمبر 2001ء کے حملوں کی منصوبہ بندی اور دہشت گردوں کے لئے مالی وسائل کی فراہمی کا الزام ہے۔ ان حملوں میں تقریباً تین ہزار افراد مارے گئے تھے۔

رپورٹ: ندیم گِل

ادارت: گوہر نذیر

DW.COM