1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

’مشال کے قتل کا مقدمہ فوجی عدالت میں چلایا جائے‘

مشال خان قتل کیس کی تحقیقاتی رپورٹ کے مطابق اُس کے قتل کی منصوبہ بندی یونیورسٹی کے اساتذہ اور حریف طلبہ نےکی تھی۔ خان کے والد نے مطالبہ کیا ہے کہ ان کے بیٹے کا مقدمہ فوجی عدالت میں چلایا جائے۔

نیوز ایجنسی اے ایف پی کے مطابق مشال خان کیس سے متعلق سپریم کورٹ کے حکم سے بنائی گئی جوائنٹ انویسٹی گیشن ٹیم کی تحقیقاتی رپورٹ میں لکھا ہے،’’ مشال خان اور اس کے دوست زبیر کے خلاف توہین مذہب کے بالواسطہ یا بلاواسطہ ثبوت نہیں ملے ہیں۔‘‘ اس رپورٹ کے مطابق مشال خان کے قتل کے پیچھے اس کے اپنے گروپ ’پاکستان اسٹوڈنٹس فیڈریشن‘ کے ارکان کا ہاتھ ہے۔ یہ وہ افراد تھے جو مشال خان کی جانب سے یونیورسٹی انتظامیہ کی بدعنوانیوں اور بڑھتی فیسوں کے خلاف آواز اٹھانے اور اس کی مقبولیت سے خطرہ محسوس کرتے تھے۔

مشال خان کے والد نے آج میڈیا سے گفتگو میں کہا،’’ ثابت ہو گیا کہ میرے بیٹے نے توہین مذہب نہیں کی۔‘‘ انہوں نے مطالبہ کیا کہ مشال خان کا کیس فوجی عدالت میں چلایا جائے۔

توہین مذہب پاکستان میں انتہائی حسّاس موضوع ہے اور اس جرم میں پھانسی کی سزا سنائی جا سکتی ہے۔ پاکستان میں سن 1990 سے65 افراد توہین مذہب کے الزام میں مشتعل ہجوم کے ہاتھوں ہلاک کیے جا چکے ہیں۔