1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

مسیحیوں کے قتل سے پاکستان کی بدنامی ہوئی، آصف زرداری

پاکستان کے صدر آصف علی زرداری نے فیصل آباد میں دو مسیحیوں کے قتل کا نوٹس لیتے ہوئے پنجاب حکومت کو ذمہ داروں کی فوری گرفتاری کا حکم دیا ہے۔ انہوں نے اس واقعے کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ اس سے ملک کی بدنامی ہوئی ہے۔

default

پاکستان کے صدر آصف زرداری

فیصل آباد میں پیر کو ایک عدالت کے باہر دو مسیحی بھائیوں کو مسلح افراد نے فائرنگ کر کے قتل کر دیا تھا۔ انہیں توہین رسالت کے الزام میں گرفتار کیا گیا تھا اور پولیس ان کا ریمانڈ حاصل کرنے کے لئے انہیں عدالت لائی تھی۔

Shahbaz Bhatti Minister für Minderheiten in Pakistan

وفاقی وزیر برائے اقلیتی امور شہباز بھٹی

آصف زرداری نے کہا کہ ہر شہری کی زندگی کا تقدس ضروری ہے اور کسی کو قانون ہاتھ میں لینے کی اجازت نہیں دی جا سکتی۔ انہوں نے مقتولین پاسٹر رشید عمانوئیل اور سجاد عمانوئیل کے خاندانوں سے اظہار ہمدردی کرتے ہوئے صوبائی حکومت کو انہیں مناسب ہرجانہ ادا کرنے کا بھی حکم دیا ہے۔

ان دونوں بھائیوں پر توہین رسالت پر مبنی مواد تقسیم کرنے کا الزام تھا۔ ان کے قتل سے ان کے آبائی علاقے داؤد نگر میں حالات کشیدہ ہوگئے۔ مظاہرین نے گاڑیوں اور دکانوں پر پتھراؤ کیا، جس کے نتیجے میں کم از کم دس افراد زخمی ہوئے۔ بعدازاں ضلع میں احتجاجی مظاہروں اور ریلیوں پر پابندی عائد کر دی گئی۔

پاکستانی ذرائع ابلاغ کے مطابق مسیحیوں کے خلاف لڑائی کے لئے مسجدوں سے اعلان کئے گئے۔

اُدھر قومی اسمبلی کی رکن فرح ناز نے پارلیمنٹ کے سیکریٹریٹ میں ایک تحریک التواء داخل کی ہے، جس میں فیصل آباد میں دو مسیحیوں کے قتل کو ’خوفناک واقعہ‘ قررا دیا گیا ہے۔

Pakistanisches Parlament

پارلیمنٹ میں تحریک التواء بھی داخل کر دی گئی

انہوں نے مؤقف اختیار کیا ہے کہ بین الاقوامی جائزہ رپورٹوں کے مطابق پاکستان میں اقلیتوں پر مظالم میں اضافہ ہو رہا ہے۔ اس تحریک التواء میں ایسے واقعات پر اظہار افسوس کرتے ہوئے، ان کی روک تھام کے لئے پارلیمنٹ میں بحث کا مطالبہ کیا گیا ہے۔

خیال رہے کہ گزشتہ برس صوبہ ء پنجاب ہی کے ایک شہر گوجرہ میں مسیحیوں کی بستی پر مشتعل افراد کے حملے میں کم از کم سات مسیحی ہلاک ہوئے تھے۔

دوسری جانب پاکستانی صدر نے راولپنڈی میں ہندوؤں کے ایک مندر کو مسمار کئے جانے کا بھی نوٹس لیا ہے۔ انہوں نے وفاقی وزیر برائے اقلیتی امور شہباز بھٹی کو حقائق پر مبنی رپورٹ پیش کرنے کے لئے کہا ہے۔ مندر کو مسمار کئے جانے پر پیر کو علاقے میں ہندوؤں نے احتجاج کیا۔

رپورٹ: ندیم گِل

ادارت: شادی خان سیف

DW.COM