1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

مسلم لیگ نون وکلاء کے دھرنے میں شمولیت پر تیار

پاکستان مسلم لیگ (ن) نے سابق صدر پرویز مشرف کی طرف سے معزول کئے گئے ججوں کی بحالی کے لئے وکلاء کے احتجاجی دھرنے کو کامیاب بنانے کی اپیل کردی ہے۔

default

پاکستان کے سابق وزیرِ اعظم نواز شریف کی جماعت کی شمولیت سے بحالیِ عدلیہ کی تحریک کو تقویت ملے گی، مبصرین

ہفتے کے روز لاہور کے نواحی علاقے رائے ونڈ میں اپنی رہائش گاہ پرپارٹی کی جنرل کونسل کے اجلاس کے بعد ایک بڑے اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے سابق وزیرِ اعظم نواز شریف کا کہنا تھا کہ وہ وکلاء کے لانگ مارچ کی پہلے ہی حمایت کر رہے تھے اور اب انہوں نے وکلاء رہنماؤں کی درخواست پر عدلیہ کی بحالی کے لئےکئے جانے والے احتجاجی دھرنےمیں بھی شامل ہونے کا حتمی فیصلہ کرلیا ہے۔

Protestierende Anwälte in Islamabad, Pakistan

پاکستانی وکلاء نے مارچ کے وسط میں پارلیمان کے سامنے دھرنا دینے کا اعلان کیا ہے

میاں نواز شریف نے پاکستانی عوام اور مسلم لیگ کےکارکنوں سے مخاطب ہوتے ہوئے کہا: اب آپ سب نےمیرے اس فیصلے کی لاج رکھنی ہے۔

انہوں نے مسلم لیگی کارکنوں سےکہا کہ احتجاجی دھرنے میں شمولیت کے لئے ہر ضلعے سے شرکا ء کی تعداد کا ہدف طے کیاجائے تا کہ لوگوں کیزیادہ سے زیادہ تعداد کی احتجاجی دھرنے میں شرکت کو یقینی بنایا جا سکے۔

یاد رہے کہ پاکستان میں وکلا ء کی بہت بڑی تعداد نے معزول چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری اور ان کے ساتھیوں کی بحالی کے حق میں مارچ کے وسط میں وفاقی دار لحکومت میں احتجاجی دھرنا دینے کافیصلہ کر رکھا ہے اور وکلا ء تنظیموں نے اعلان کیا ہے کہ یہ احتجاجی دھرنا جسٹس افتخار چوہدری کی بحالی تک جاری رہے گا۔

Pakistan Oberster Richter Iftikhar Mohammed Chaudhry abgesetzt

بحالیِ عدلیہ کی تحریک میں معزول چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری کو خصوصی اہمیت حاصل ہے

نواز شریف کی طرف سے اس احتجاجی دھرنے کی حمایت کافیصلہ ایک ایسے وقت سامنے آیا ہے جب ملک کی سپریم کورٹ شریف برادران کی اہلیت سے متعلق فیصلہ کرنے والی ہے اور مسلم لیگ (ن) اور پیپلز پارٹی کے مابین کشیدگی میں بھی کافی اضافہ ہو چکا ہے۔

پاکستان مسلم لیگ (ن) کے قائد نوازشریف کی تقریر پر تبصرہ کرتے ہوئے سابق وفاقی وزیر شیخ رشید احمد نے ڈوئچے ویلے کو بتایا کہ نوازشریف کی تقریر سے ظاہر ہوتا ہے کہ انہیں اس بات کا اندازہ ہے کہ وہ سپریم کورٹ کی طرف سے نا اہل قرار دیے جانے والےہیں اور دوئم وہ اب آصف علی زرداری کے ساتھ ٹکراؤ کی پالیسی اپناتے جا رہے ہیں۔ ان کے مطابق مسلم لیگ (ن) کی طرف سے حمایت کے بعد اب وکلاء کا احتجاجی دھرنا کافی زور دار ہوتا جا رہا ہے۔

Asif Ali Zardari trifft Nawaz Sharif in Islamabad, Pakistan

پاکستانی صدر آصف زرداری اور میاں نواز شریف کے درمیان عدلیہ کی بحالی کے مسئلے پر شدید اختلافات پائے جاتے ہیں

مبصرین کے مطابق مسلم لیگ نواز کی طرف سے وکلاء کی حمایت کا فیصلہ ججوں کی بحالی کی تحریک کو تقویت دینے کا باعث بن سکتا ہے۔

ممتازتجزیہ نگارنذیرناجی نے ڈوئچے ویلے کو بتایا کہ مسلم لیگ نون کے اس فیصلے سے وکلاء تحریک کوایک ایسی جماعت کی حمایت مل گئی ہے جو نہ صرف عوام کے اندر مقبولیت رکھتی ہے بلکہ اس کی اسمبلی میں موجودگی بھی بڑی نمایاں ہے۔ اب وکلاء کو کم ازکم ایک منتخب اور بڑی سیاسی جماعت کی حمایت حاصل ہو گئی ہے جوایک صوبے اور وفاق میں اہمیت کی حامل ہے۔ اب وکلاء کے حق میں آوازیں سڑکوں پر ہی نہیں بلکہ اقتدار کےایوانوں میں بھی سنائی دیں گی۔ ان کے مطابق نون لیگ کے حالیہ فیصلے سے وکلاء کی دم توڑتی ہوئی تحریک میں جان پڑ جائے گی۔

Bildgalerie Jahresrückblick 2008 August Pakistan

تقریر میں نواز شریف نے سابق صدرِ پاکستان اور آرمی چیف پرویز مشرّف کو بھی ہدفِ تنقید بنایا

ادھر جماعت اسلامی کےامیر قاضی حسین احمد نے بھی ہفتہ کے روز وکلاء رہنمائوں کے ساتھ ملاقات کے بعد مارچ کے وسط میں ہونے والے وکلاء کے دھرنےمیں بھرپور شرکت کا اعلان کیا ہے۔

یہ بات قابل ذکر ہے کہ نواز شریف نے اپنی تقریر میں کارگل کے حوالے سے جنرل پرویز مشرف اور ان کے ساتھی جرنیلوں کو بھی شدید تنقید کا نشانہ بنایا۔ انہوں نےکہا کہ اگرآئندہ انتخابات میں ان کی پارٹی برسر اقتدار آئی تو وہ تمام غیر آئینی اقدامات کو ختم کردیں گے۔ اس موقع پر انہوں نے آصف علی زرداری کے طرزعمل پر بھی تنقید کی اور کہا کہ آصف زرداری چاہتے تھے کہ جنرل مشرف کے تین نومبر کے غیرآئینی اقدامات کی توثیق کردی جائے۔ ان کے مطابق یہی بات ان کے اور آصف علی زرداری کے مابین فاصلےپیدا کرنے کا باعث بنی تھی۔

ادھر ہفتہ کی رات لاہور پریس کلب میں ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے پاکستان پیپلز پارٹی کے رہنما قاسم علی ضیاء نے کہا کہ اگر جنرل مشرف کےغیرآئنی اقدامات پر مسلم لیگ نون کو اتنا ہی اعتراض ہے تو پھر اسے چاہیے کہ وہ جنرل پرویز مشرف کے خلاف پنجاب کے کسی بھی تھانےمیں مقدمہ درج کرائے اور پنجاب آنے کی صورت میں وہ جنرل پرویز مشرف کو گرفتار بھی ضرور کرے۔