1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

مسلم تہواروں پر چھٹی، جرمن وزیر کی تجویز پر کئی حلقے ’حیران‘

جرمن وزیر داخلہ تھوماس ڈے میزیئر کی مسلم تہواروں پر علاقائی چھٹیاں متعارف کرانے کی تجویز نے برلن میں کئی وفاقی حکومتی حلقوں اور چانسلر انگیلا میرکل کی قدامت پسند سیاسی جماعت کے بہت سے سیاستدانوں کو حیران کر دیا ہے۔

default

کولون کی ایک مسجد میں مسلمان روزہ افطار کرتے ہوئے

اس موضوع پر جرمن دارالحکومت برلن سے ہفتہ چودہ اکتوبر کو ملنے والی نیوز ایجنسی روئٹرز کی رپورٹوں میں کہا گیا ہے کہ جرمنی کی قریب 82 ملین کی آبادی میں مسلمانوں کی تعداد تقریباﹰ 4.5 ملین بنتی ہے، جن میں سے بہت بڑی اکثریت ان ترک نژاد مسلمانوں کی ہے، جو یا تو جرمن شہریت اختیار کر چکے ہیں یا پھر ابھی تک جرمنی میں ترک شہریوں ہی کے طور پر رہائش پذیر ہیں۔

اس کے علاوہ گزشتہ دو برسوں کے دوران مہاجرین اور تارکین وطن کے طور پر جو ایک ملین سے زائد غیر ملکی جرمنی آئے ہیں، ان میں سے اکثریت کا تعلق مشرق وسطیٰ کے بحران زدہ یا جنگوں کے شکار عرب ممالک سے ہے اور وہ بھی زیادہ تر مسلمان ہی ہیں۔

اس پس منظر میں وفاقی جرمن وزیر داخلہ تھوماس ڈے میزیئر نے وفاقی صوبے لوئر سیکسنی میں ایک اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ وہ یہ سوچ سکتے ہیں کہ جرمنی میں مسلمانوں کے مختلف مذہبی تہواروں کے موقع پر علاقائی سطح پر عوامی تعطیل کا نظام متعارف کرا دیا جائے۔

ڈے میزیئر نے اپنا یہ خطاب لوئر سیکسنی میں کل اتوار پندرہ اکتوبر کو ہونے والے علاقائی پارلیمانی انتخابات کے حوالے سے ایک ریلی سے کیا۔ تھوماس ڈے میزیئر کا تعلق چانسلر انگیلا میرکل کی قدامت پسند جماعت کرسچین ڈیموکریٹک یونین یا سی ڈی یو سے ہے۔

جرمنی مسلمانوں کا گھر بن سکتا ہے، فراؤکے پیٹری

جرمن انتخابات: اے ایف ڈی کے خلاف احتجاجی مظاہرے

اپنے اس خطاب میں وفاقی وزیر داخلہ نے کہا کہ کیتھولک مسیحیوں کی طرف سے ہر سال منایا جانے والا مذہبی تہوار ’آل سینٹس ڈے‘ ایک ایسا موقع ہوتا ہے، جب ملک کے اکثریتی طور پر کیتھولک آبادی والے علاقوں اور صوبوں میں عام تعطیل ہوتی ہے۔

Deutschland Merkel Ramadan Fastenbrechen

جرمن چانسلر میرکل، درمیان میں، برلن میں مسلمانوں کے ایک افطار استقبالیے میں

ساتھ ہی ڈے میزیئر نے کہا، ’’اگر ایسا ہے تو ان علاقوں میں جہاں مسلمان بڑی تعداد میں آباد ہیں، ہم اس بارے میں کیوں غور نہیں کر سکتے کہ وہاں بھی کوئی مسلم عوامی تعطیل ہونا چاہیے۔‘‘ وزیر داخلہ کے اس خطاب کی ایک جزوی آڈیو ریکارڈنگ بعد ازاں regionalwolfsburg.de نامی ویب سایٹ پر بھی پوسٹ کی گئی۔

Deutschland Thomas de Maizière

وفاقی جرمن وزیر داخلہ تھوماس ڈے میزیئر

مہاجر اور اسلام مخالف پارٹی اے ایف ڈی پہلی بار پارلیمان میں

جرمن انتخابات: مسلم مخالف پارٹی تیسرے نمبر پر

اس آڈیو ریکارڈنگ کے مطابق تھوماس ڈے میزیئر نے مزید کہا کہ جرمنی میں وفاقی سطح پر زیادہ تر عوامی تعطیلات کا تعلق مسیحی عقیدے سے ہے، جو نئے امکانات پر غور کرنے کے باوجود آئندہ بھی اپنے وقت پر منائی جا سکتی ہیں۔

روئٹرز کے مطابق ڈے میزیئر کے اس موقف پر ان کے ساتھی قدامت پسند سیاستدانوں کی طرف سے تنقید میں کوئی دیر نہ لگی۔ اس بارے میں سی ڈی یو کے ایک سینیئر سیاستدان وولفگانگ بوسباخ نے جرمن اخبار ’بِلڈ‘ کے ساتھ ایک انٹرویو میں کہا، ’’جرمنی میں ہر کوئی اپنے مذہب اور عقیدے کے مطابق اپنے مذہبی تہوار منا سکتا ہے۔ لیکن آیا ریاست کو مستقبل میں کسی خاص قانون سازی کے ذریعے ایسی غیر مسیحی مذہبی تعطیلات کو بھی ایک طرح سے باقاعدہ تحفظ فراہم کرنا چاہیے، یہ ایک بالکل مختلف موضوع ہے۔‘‘

Kopftuch Symbolbild

برلن کی ایک مسجد میں دو مسلمان خواتین نماز پڑھتے ہوئے

اسی طرح جنوبی صوبے باویریا میں چانسلر میرکل کی جماعت کی ہم خیال سیاسی پارٹی کرسچین سوشل یونین یا سی ایس یو کے ایک مرکزی اعلیٰ عہدیدار آلیکسانڈر ڈوبرِنٹ نے روزنامہ ’بِلڈ‘ کے ساتھ ایک انٹرویو میں کہا، ’’جرمنی کی مسیحی میراث پر کوئی بات چیت نہیں ہو سکتی۔ ہم ملک میں کوئی بھی مسلم پبلک تعطیلات متعارف کرانے پر سرے سے کوئی غور ہی نہیں کریں گے۔‘‘

مسلمانوں کے حوالے سے جرمن سیاسی جماعتیں کیا سوچ رکھتی ہیں؟

جرمنی: مسلمانوں کے خلاف پرتشدد حملوں میں اضافہ

اس بحث کے شروع ہو جانے کے بعد وفاقی وزارت داخلہ کی ایک خاتون ترجمان نے کہا کہ تھوماس ڈے میزیئر کی سوچ پہلے کی طرح ابھی بھی یہی ہے کہ جرمنی میں عوامی تعطیلات بنیادی طور پر مسیحی نوعیت کی ہیں۔

جرمن آئین کے مطابق یہ اختیار وفاقی صوبوں کو حاصل ہے کہ وہ اپنے ہاں مذہبی تہواروں کے موقع پر عوامی تعطیلات کا فیصلہ خود کر سکتے ہیں اور اس بارے میں وفاقی وزارت داخلہ کو کوئی اختیار حاصل نہیں، چاہے یہ عوامی تعطیلات مسیحی مذہبی چھٹیاں ہوں یا ممکنہ طور پر مسلم تہواروں کے موقع پر متعارف کرائی جانے والی کوئی تعطیلات۔

ویڈیو دیکھیے 01:14

کیا اسلام جرمن معاشرے کا حصہ ہے ؟

DW.COM

Audios and videos on the topic