1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

مجوزہ پاک بھارت مذاکرات کے موضوعات

جمعرات 15 جولائی کو اسلام آباد میں پاکستان اور بھارت کے وزرائے خارجہ شاہ محمود قریشی اور ایس ایم کرشنا کے درمیان ملاقات ہو رہی ہے۔ خبروں میں وضاحت کئے بغیر بتایا گیا ہے کہ اِس ملاقات میں تمام معاملات پر بات ہو گی۔

default

پاک بھارت تنازعات کا حل بات چیت

سن 2008ء میں ممبئی شہر میں ہونے والے دہشت پسندانہ حملوں کے بعد نئی دہلی حکومت نے پاکستان کے ساتھ امن عمل معطل کر دیا تھا۔ تب سے دونوں ملکوں کے درمیان یہ پہلا باقاعدہ اعلیٰ سطحی رابطہ ہے، جس سے دونوں فریقوں کے درمیان اعتماد کی فضا بحال ہونے کی توقع کی جا رہی ہے۔

پاکستانی وزارتِ خارجہ کے ترجمان عبدالباسط کا کہنا تھا کہ اِن مذاکرات کے لئے کوئی طے شُدہ ایجنڈا نہیں ہے۔ ڈوئچے ویلے کے ساتھ باتیں کرتے ہوئے پاکستان کے ممتاز تجزیہ کار ڈاکٹر حسن عسکری رضوی کا کہنا تھا کہ یہ مذاکرات دراصل ہو ہی اِس ایجنڈے کی تشکیل کے لئے رہے ہیں:’’دونوں ملک بات چیت کے ذریعے یہ جاننا چاہتے ہیں کہ وہ کونسے موضوعات ہیں، جنہیں دونوں ممالک ایجنڈے میں شامل کرنے پر متفق ہو سکتے ہیں۔‘‘

Indien Außenminister SM Krishna

بھارتی وزیر خارجہ ایس ایم کرشنا

ڈاکٹر حسن عسکری کا کہنا تھا کہ بھارت دہشت گردی سے متعلقہ امور پر زیادہ زور دے گا جبکہ پاکستان کی کوشش ہو گی کہ اِس موضوع کے ساتھ ساتھ دیگر معاملات کو بھی زیرِ بحث لایا جائے۔

اِس بار بھارتی وزیر خارجہ ایس ایم کرشنا کی طرف سے کہا گیا ہے کہ ان مذاکرات کے دوران سرحد پار دہشت گردی کے ساتھ ساتھ منقسم کشمیر پر بھی بات ہو گی۔ ڈاکٹر حسن عسکری کے مطابق اگر کشمیر پر بات ہوئی بھی تو بنیادی بات یہ ہو گی کہ کیا اِس مسئلے پر بات چیت نئے سرے سے شروع کی جائے یا بات چیت کا سلسلہ وہیں سے دوبارہ جوڑا جائے، جہاں سے منقطع ہوا تھا۔

انٹرویو: امجد علی

ادارت: عدنان اسحاق

Audios and videos on the topic