1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

متنازعہ ایرانی جوہری پروگرام اور ہلیری کلنٹن

ایران کے متنازعہ جوہری پروگرام پر عالمی خدشات اور تحفظات کو دور کرنے کے لئے ایران پہلی اکتوبر سے مذاکرات کی میز پر بیٹھ تو گیا ہے لیکن بین الاقوامی کمیونٹی ابھی بھی تذبذب کا شکار ہے۔

default

امریکی وزیر خارجہ ہلیری کلنٹن اور ایرانی وزیر خارجہ منو چہر متقی : فائل فوٹو

ایرانی صدر محمود احمدی نژاد نے عالمی طاقتوں سے کہا ہے کہ اُنیس اکتوبر کی ویانا میٹنگ اُن کے ملک کے جوہری پروگرام کے سلسلے میں ایک آزمائش ہے اور اُس کے نتائج کی روشنی میں مزید مفید تعاون کا عمل جاری رکھا جائے گا۔ احمدی نژاد کے یہ خیالات سرکاری ایرانی میڈیا سے نشر کئے گئے ہیں۔

ایرانی صدر احمدی نژاد کا مزید کہنا ہے کہ اُنیس اکتوبر کی میٹنگ کی ناکامی اور پابندیوں سے ایران کم اور مغرب زیادہ متاثر ہوگا۔ ایران کی جوہری ایجنسی کے سربراہ ڈاکٹر علی اکبر صالحی اگلے منگل یعنی انیس اکتوبر کو بین الاقوامی جوہری ایجنسی کے صدر دفتر واقع ویانا میں اقوام متحدہ کے ادارے سلامتی کونسل کے پانچ مستقل اراکین اور جرمنی کے نمائندوں سے ملاقات کریں گے۔ تب یورینیم کی افزودگی پر مزید بات چیت کی جائے گی خاص طور پر اِس رُخ میں کہ ایران سے کم افزودہ یورینیم کی دوسرے ملکوں میں کیسےمزید افزودگی ممکن ہو سکتی ہے۔ اِس مناسبت سے ایران پہلی اکتوبر کے جنیوا مذاکرات میں رضامند تھا۔

Russland Sicherheitsgipfel in Jekaterinburg

روسی اور ایرانی صدور : فائل فوٹو

ایرانی صدر نے اِس عمل کو شفاف اور قابلِ عمل بنانے کو عالمی طاقتوں کی آزمائش سے تعبیر کیا ہے۔ اُن کے مطابق اب دیکھنا یہ ہے کہ تین سے پانچ فی صد تک افزودہ یورینم ناتانز کے جوہری مرکز سے لے کر ایران سے باہر کس انداز میں بیس فی صد تک افزودہ کیا جائے گا۔ ایران بیس فی صد افزودہ یورینم کو تہران کے جوہری طبی مرکز میں استعمال کرنے کا ارادہ رکھتا ہے۔

دوسری جانب یورپ کے دورے پر آئی ہوئی امریکی وزیر خارجہ ہلیری کلنٹن نے لندن میں اپنے برطانوی ہم منصب ڈیوڈ ملی بینڈ سے ملاقات کے بعد ایران کے حوالے سے کہا کہ وہ اِس پر متفق ہیں کہ جنیوا میں بات چیت کا عمل

Iran Russland Atomanlage in Bushehr

ایرانی مقام بوشہر میں قائم جوہری مرکز

ایک تعمیری شروعات ہے۔ اِس کے بعد عملی اقدامات کی اشد ضرورت ہے۔ اب الفاظ کا استعمال کافی نہیں۔ امریکی وزیر خارجہ کا مزید کہنا تھا کہ عالمی برادری کی جانب سےیک زبان ہو کر ایک واضح پیغام ایران کو دے رہے ہیں کہ بین الاقوامی کمیونٹی اب مزید شواہد کے حصول میں غیر معینہ مدت کے انتظار میں نہیں رہے گی، ایران کو عالمی برادری کی ذمہ داریوں اور توقعات پر پورا اترنا ہوگا۔

امریکی وزیر خارجہ نے جون کے الیکشن کے بعد مظاہرین کے ساتھ حکومتی سلوک پر بھی کڑی نکتہ چینی کی ہے۔ خیال کیا جا رہا ہے کہ اُن کا بیان ایرانی عدالت کی جانب سے جون الیکشن کے بعد گرفتار کئے گئے تین مظاہرین کو سزائے موت کا حکم سنائے جانے پر ردعمل ہو سکتا ہے۔

ایران کے متنازعہ جوہری پروگرام پر ویانا بات چیت کے بعد اِس ماہ کے آخر میں امکاناً اقوام متحدہ کے ادارے سلامتی کونسل کے پانچ مستقل اراکین اور جرمنی کی ایرانی مذاکرات کار کے ساتھ ایک اور میٹنگ متوقع ہے۔ امریکی وزیر خارجہ ہلیری کلنٹن نے جس طرح برطانیہ میں وزیر خارجہ ڈیوڈ ملی بینڈ کے ساتھ ایرانی جوہری پروگرام پر بات کی ہے، اسی طرح وہ اپنے دورہٴ روس کے دوران بھی اِسے خاصی اہمیت دینے کا ارادہ رکھتی ہیں۔