1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

متنازعہ انتخابات: یورپی پارلیمان کی جانب سے ایران وفد روانہ کرنے کا ارادہ

یورپی پارلیمان کے صدر نے کہا ہے کہ وہ ایران کے متنازعہ صدارتی انتخابات میں مبینہ بے ضابطگیوں کے بارے میں جانکاری حاصل کرنے کےلئے یورپی ماہرین کا ایک وفد تہران روانہ کرنے کی منصوبہ بندی کرر رہے ہیں۔

default

ایران میں متنازعہ انتخابات کے خلاف احتجاج جاری ہیں

یورپی پارلیمان کے صدر یورپی یونین پارلیمان کے صدر Hans-Gert Poettering نے کہا ہے کہ وہ ایران کے متنازعہ صدارتی انتخابات میں مبینہ بے ضابطگیوں کے بارے میں جانکاری حاصل کرنے کےلئے یورپی ماہرین کا ایک وفد تہران روانہ کرنے کی منصوبہ بندی کرر رہے ہیں۔کی طرف سے یہ بیان اس وقت سامنے آیا جب ایران کی نوبل انعام یافتہ انسانی حقوق کی کارکن شریں عبادی نے یورپی یونین سے اپیل کی ایران میں مظاہرین کے خلاف حکومتی کریک ڈاؤن پر موثر ردعمل ظاہر کیا جائے۔

برسلز میں شریں عبادی سے ملاقات کے بعد Poettering نے کہا کہ وہ یورپی پارلیمان کو تجویز دیں گے کہ وہ وفد جلد ازجلد تہران روانہ کریں۔ انہوں نے مزید کہا کہ ایران کی موجودہ صورتحال کے تناظر میں یہ بہت ضروری ہے اور وہ یورپی پارلیمان کے صدر

Briefbombe gegen Hans-Gert Poettering

Hans-Gert Poetteringنے کہا کہ وہ یورپی پارلیمان کو تجویز دیں گے کہ وہ وفد جلد ازجلد تہران روانہ کریں

کے طور پر خود ایران جانے کے لئے تیار ہیں تاکہ ایرانی عوام کے ساتھ یک جہتی کا اظہار کیا جا سکے۔
انہوں نے کہا کہ وہ نہیں جانتے کہ تہران حکومت ایسے کِسی وفد کو اپنے ملک میں آنے کی اجازت دیں گے یا نہیں تاہم انہوں نے کہا کہ وہ اس سلسلے میں باقاعدہ سفارتی طریقہٴ کار اختیار کریں گے۔

شریں عبادی نے یورپی یونین کی خارجہ پالیسی امور کے سربراہ خاوئر سولانا سے بھی ملاقات کی۔ عبادی نے اس ملاقات میں کہا کہ انہوں نے اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل بان کی مون سے پہلے ہی کہہ دیا ہے کہ وہ ایران میں اپنا ایک خصوصی مندوب روانہ کریں۔ واضح رہے کہ منگل کے روز ایرانی حکام نے ایران کے بارے میں بان کی مون کے بیان کو اندرونی معاملات میں دخل دراندازی قرار دیا تھا۔ ایران نے امریکہ ، برطانیہ ، جرمنی ، فرانس پر الزام عائد کیا ہے کہ وہ حکومت مخالف مظاہروں کو بھڑکانے کا کام کر رہے ہیں۔ دیگر مغربی رہنماوں سمیت یورپی یونین پارلیمان کے صدر Hans-Gert Poettering نے بھی تہران حکومت کے اس الزام کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ متنازعہ صدارتی انتخابات کے بعد یہ مظاہرے قدرتی امر ہے۔

Benita Ferrero-Waldner und Shirin Ebadi bei einem Treffen in Brüssel

شیریں عبادی نے یورپی یونین کی خارجہ امور کی کمشنر Benita Ferrero-Waldner سے بھی ملاقات کی

بارہ جون کو منعقد کئے جانے والے صدارتی انتخابات کے نتائج کے مطابق محمود احمدی نژاد دوسری مرتبہ چار سالوں کے لئے صدر منتخب کئے گئے ہیں جبکہ حزب اختلاف رہنماوں نے ان انتخابات کے نتائج کو دھاندلی کا پلندا قرار دیتے ہوئے مسترد کیا ہے اور نئے سرے سے انتخابات منعقد کروانے کا مطالبہ کیا ہے۔ اطلاعات کے مطابق تہران میں بارہویں روز بھی احتجاج جاری رہا اور مظاہرین اور سیکیورٹی گارڑدز کے مابین تصادم بھی ہوا۔ دوسری طرف ایران کے اعلیٰ ترین مذہبی رہنما آیت اللہ علی خامنائی نے دو ٹوک الفاظ میں کہا ہے کہ تہران حکومت صدارتی انتخابات کے معاملے پربین الاقوامی دباؤ میں نہیں آئے گا۔

عاطف بلوچ

ادارت: عابد حسین