1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

مالیاتی بحران پیدا کرنے والے اپنی زمہ داری پوری کریں: جرمن چانسلرمیرکل

وفاقی جرمن چانسلر انگیلا میرکل نے عالمی مالیاتی بحران پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ جو لوگ اس بحران کے زمہ دار ہیں ان کو اس کے تدارک کے لیے اپنی زمہ داری ادا کرنا چایے۔

default

عالمی مالیاتی بحران پر یورپ کا ردِ عمل انتہائی اہمیت کا حامل قرار دیا جا رہا ہے

یہ بات جرمن چانسلر میرکل نے ہفتے کے روز پیرس میں یورپی وینین کے چار ممالک پر مشتمل اجلاس میں شرکت سے قبل کہی۔ یورپی یونین کے صدر ملک فرانس کی جانب سے طلب کئے گئے اس اجلاس میں میں جرمنی کے علاوہ یورپ کی تین بڑی معیشتیں، برطانیہ، فرانس اور اٹلی شرکت کر رہے ہیں۔

Deutschland Angela Merkel vor Europa Karte

وفاقی جرمن چانسلر انگیلا میرکل

میرکل کا یہ بیان ایک ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب یہ قیاس کیا جا رہا تھا کہ فرانس کے صدر نکولا سارکوزی امریکی طرز کے ایک یورپی بیل آؤٹ پلان کو منظور کروانا چاہتے ہیں جس کی مشترکہ رقم تین سو بلین یوروز بتائی گئی تھی۔ یاد رہے کہ مالیاتی بحران کے تدارک کے لیے امریکہ میں سات سو بلین ڈالرز کا ایک بیل آؤٹ پیکج منظور کیا گیا ہے جس کا مقصد بحران کا شکار مالیاتی اداروں کو بچانے کے لیے ریاستی مداخلت اور ٹیکس دہندگان کی رقم کو استعمال کرنا ہے۔ مگر فرانسیسی صدر نکولا سارکوزی کا کہنا ہے کہ وہ امریکی طرز کے یورپی بیل آؤٹ پلان کے حق میں نہیں ہیں۔ برطانوی وزیرِ اعظم گورڈن براؤن بھی اس تجویز کو رد کرچکے ہیں۔

USA Finanzkrise New York Börse Wall Street Straßenschild

آزاد منڈیوں کے مالیاتی بحران پر قابو پانے کے لیے ریاست کو مداخلت کرنا پڑی۔ امریکی ٹیکس دہندگان رقم ادا کریں گے۔


جرمنی اور برطانیہ کا موقف ہے کہ دیوالیہ ہوئے، یا دیوالیہ ہونے کے قریب مالیاتی اداروں کو تحفظ فراہم کرنے کے لیے ہرادارے کے لیے انفرادی پالیسی تیّار کی جائے۔


تاہم چاروں سربراہانِ مملکت اس بات پر متفّق ہیں کہ یورپ کو سرمایہ داری نظام کے بحران سے نمٹنے کے لیے مشترکہ لائحہ عمل اختیار کرنا چاہیے۔ ان سربراہانِ مملکت کی یہ بھی کوشش ہے کہ اگلے ہفتے واشنگٹن میں صنعتی طور پر ترقّی یافتہ جی ایٹ ممالک کے وزرائے تجارت کے اجلاس سے قبل ہی کوئی مشترکہ موقف اختیا کرلیا جائے۔


اس اجلاس میں چاروں ممالک آئرلینڈ کی حکومت کے اس فیصلے پر بھی تبادلہّ خیال کریں گے جس میں اس نے اپنے بینکوں میں سرمایہ کاری کرنے والوں کو سو فیصد تحفظ فراہم کرنے کی پالیسی اختیار کی ہے۔ آئرلینڈ کی حکومت کے اس فیصلے کے نتیجے میں ایک بڑی تعداد میں برطانوی سرمایہ کاروں نے آئرلینڈ کے بینکوں کی جانب رخ کرنا شروع کردیا ہے جس کی وجہ سے برطانوی وزیرِ اعظم گورڈن براؤن کو داخلی دباؤ کا سامنا ہے۔ خود جرمن چانسلر میرکل کی حکومت بھی داخلی عدم استحکام کا شکار ہے۔

Protest gegen Rettungspaket in den USA

نیو یارک کی ایک طالبِ علم سات سو بلین ڈالرز کے بیل آؤٹ پلان کے خلاف احتجاج کر رہی ہے

دوسری جانب آئی ایم ایف نے یورپی ممالک سے اپیل کی ہے کہ وہ سرمایہ داری کے مالیاتی بحران سے نمٹنے کے لیے مشترکہ پالیسی اپنائیں۔ آئی ایم ایف نے کہا ہے کہ یورپی ممالک کو اپنے اپنے مفادات کو سامنے رکھتے ہوئے انفرادی پالیسیاں نہیں اختیار کرنا چاہیے۔