1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

مالیاتی بحران پر یورپی یونین کا غور

یورو زون کے بعض ممالک کو درپیش مالیاتی بحران کے تناظر میں یورپی یونین کی تشویش بڑھ رہی ہے۔ یونان کے مالیاتی بحران پر غور کے ساتھ اس نکتے پر بھی بات ہو رہی ہے کہ اس بحران کو اٹلی اور اسپین تک پہنچنے سے کیسے روکا جائے۔

default

اس مقصد کے لیے یورو زون کے وزرائے خزانہ کا اجلاس برسلز میں ہوا، جس میں سترہ رکنی یورو زون کے ساتھ یورپی یونین کے دیگر ممالک کے وزرائے خزانہ بھی شریک ہوئے۔

تاہم یورپی اسٹاک مارکیٹوں میں شیئرز کی قیمتیں منگل کو تیزی سے گری اور کمی کا یہ سلسلہ تیسرے سیشن تک پہنچ گیا۔ خبررساں اداروں کے مطابق تقریبا تمام یورپی اسٹاک مارکیٹوں میں شیئرز کی قیمتیں گری ہیں۔ یورپی مشترکہ کرنسی یورو لندن میں منگل کو چار ماہ کی کم ترین سطح پر آ گئی ہے۔ یہ صورت حال تشویش میں مزید اضافے کا سبب بنی ہے۔

فن لینڈ کی وزیر خزانہ Jutta Urpilainen کا کہنا ہے: ’’اس وقت حالات بہت پیچیدہ ہیں۔‘‘

اٹلی میں سرمایہ کاروں کی پریشانی اسٹاک مارکیٹوں میں مسلسل تیسرے روز مندی کا باعث رہی ہے۔ ان کی تشویش یہ ہے کہ یورپ کی تیسری اور چوتھی بڑی اقتصادی طاقتیں (اٹلی اور اسپین) بھی مالیاتی بحران میں نہ دھنس جائیں۔

یہی وجہ تھی کہ اٹلی کے وزیر خزانہ Giulio Tremonti برسلز کا اجلاس ادھورا چھوڑ کر ہی واپس چلے گئے۔ ان کا کہنا تھا کہ وہ وطن پہنچ کر بچت منصوبے کو مکمل کرنا چاہتے ہیں۔ روم حکومت اس منصوبے کے تحت چار سال کے عرصے میں چالیس ارب یورو کی بچت چاہتی ہے۔

EU-Ratspräsident Van Rompuy beim EU-Gipfel am 23.6.2011

یورپی یونین کے صدر ہیرمان فان رومپوئے

یورو زون کے ایک اعلیٰ سفارت کار نے خبر رساں ادارے روئٹرز کو بتایا ہے کہ اس جمعہ کو ایک اجلاس اور ہو سکتا ہے۔ برطانیہ کے سابق بینکر اور سٹی کے اعلیٰ ماہر اقتصادیات Willem Buiter کا کہنا ہے کہ مالیاتی بحران واضح طور پر یونان، آئرلینڈ اور پرتگال سے آگے نکل رہا ہے۔ مالیاتی بحران کے شکار ان تینوں ممالک کو مدد فراہم کی جا چکی ہے۔

اُدھر یورپی یونین کے صدر ہیرمان فان رومپوئے نے کہا ہے کہ یونین نے قرضوں کے بحران پر خصوصی سمٹ بلانے کا فیصلہ نہیں کیا، پھر بھی ایسے اجلاس کو خارج از امکاں قرار نہیں دیا جا سکتا۔

رپورٹ: ندیم گِل/خبر رساں ادارے

ادارت: عصمت جبیں

DW.COM

ویب لنکس