1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

فن و ثقافت

مالدیپ: کل کا قیدی، آج کا حکمران

مالدیپ کے سابق سیاسی قیدی محمّد نشید مالدیپ کے پہلے جمہوری انتخابات میں کامیاب ہوگئے ہیں۔ محمّد نشید نے صدر مامون عبدالقیّوم کو پینتالیس اعشاریہ سات نو فیصد ووٹوں کے مقابلے میں چوّن عشاریہ دو ایک فیصد ووٹوں سے شکست دی ہے

default

سابقہ سیاسی قیدی اور کرشماتی رہنما محمّد نشید

چند برسوں قبل کوئی نہیں کہہ سکتا تھا کہ ایشیا کی تاریخ میں سب سے طویل عرصے تک حکمرانی کرنے والے مالدیپ کے صدر مامون عبدالقیّوم کو مالدیپ کا ایک سابقہ سیاسی قیدی محمّد نشید اقتدار کی کرسی سے محروم کردے گا۔ مگر اب یہ امر بھی تاریخ کا حصّہ بن چکا ہے۔

محمّد نشید نے بدھ کے روز ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے دورانِ قید اپنے اوپر کیے گئے تشدّد کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ وہ انتقام پر یقین نہیں رکھتے کیوں کہ انتقام جمہوریت کے لیے مددگارنہیں ہوگا۔

Malediven Wahlen Präsident Abdul Gayoom

ایشیا کی تاریخ میں سب سے طویل عرصے تک حکمرانی کرنے والے معمون عبدالقیّوم کی حکمرانی کا سورج آخر غروب ہوگیا

اکتالیس سالہ محمّد نشید نے بین الاقوامی برادری کو مالدیپ میں اصلاحات کرنے اور زرائع ابلاغ کی آزادی کی یقین دہانی کروائی ہے۔

دوسری جانب مامون عبالقیّوم نے اپنی شکست تسلیم کرتے ہوئے نشید کو اقتدار کی منتقلی میں اپنے تعاون کی یقین دہانی کروائی ہے۔

جزائر پر مبنی مالدیپ ایک سنّی اکثریتی ملک ہے جہاں تقریباً تین لاکھ افراد آباد ہیں۔ اس سے قبل مالدیپ میں کبھی بھی کثیر الجماعتی انتخابات نہیں ہوئے تھے۔ اکہتر سالہ عبدالقیّوم انیس سو اٹہتر سے بلا شرکتِ غیرمالدیپ یر حکمرانی کرتے رہے۔