1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

مالاکنڈ آپریشن: لاکھوں پناہ گزینوں کا مسئلہ سنگین تر

مالا کنڈ اور سوات میں شدت پسندوں کے خلاف جاری فوجی کارروائی کے سبب ان علاقوں سے نقل مکانی کرنے والوں کی روز افزوں تعداد کے ساتھ ہی مرکزی اور صوبائی حکومتوں کی پریشانی بھی بڑھتی جا رہی ہے۔

default

مینگورہ کے شہری علاقہ چھوڑ رہے ہیں

اقوام متحدہ کے مہاجرین سے متعلق ادارے یعنی UNHCR کے مطابق صرف مئی کے مہینے میں 15 لاکھ افراد نے جنگ سے متاثرہ علاقوں سے نقل مکانی کی ہے جبکہ سرحد حکومت کے مطابق یہ تعداد 20 لاکھ سے بھی زائد ہے۔ ادھر اندرون ملک ہجرت پر مجبور ان افراد کے پناہ گزین کیمپوں میں گزرنے والے روز و شب بھی کسی سے ڈھکے چھپے نہیں جبکہ ناقدین کا کہنا ہے کہ حکومت نے آپریشن سے قبل اتنی بڑی تعداد میں ممکنہ نقل مکانی سے متعلق پہلوئوں پر غور نہیں کیا۔

Imran Khan

تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان

تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان کے مطابق نقل مکانی کرنے والوں کے ساتھ ساتھ جنگ والے علاقوں میں پھنسے ہوئے لوگوں کو نکالنے کے لئے بھی حکومت کے پاس کوئی تدبیر نہیں:'یہ اتنا بڑا آپریشن کیا ہے آرٹلری ، جہاز ، سویلین آبادی 15 ,20 لاکھ لوگ گھروں سے نکل گئے۔ بیس ، تیس لاکھ لوگ وہاں پھنس گئے ہیں۔ مینگورہ میں خون کی ہولی کھیلی جا سکتی ہے کم از کم ہم اپنے آپ سے پوچھیں ہم کدھر جا رہے ہیں۔ لوگ کہتے ہیں کہ یہ ملٹری آپریشن ٹھیک نہیں تو کہا جاتا ہے کہ آپ خود طالبان ہیں۔ یہ بالکل معاشرے کو تقسیم کیا جا رہا ہے ۔‘‘

انسانی حقوق کے لئے کام کرنے والے ایک کارکن صارم برنی کے مطابق عارضی کیمپوں میں اندراج کا موثر نظام نہ ہونے کے سبب بہت سے افراد خصوصا چھوٹے بچے اپنے خاندانوں سے بچھڑ گئے ہیں:'رجسٹریشن کرنے میں کافی مشکلات پیش آ رہی ہیں۔ ایک فرد کئی جگہ پر رجسٹرڈ ہو رہا ہے اور یہی وجہ ہے کہ ہم ابھی تک اصل تعداد معلوم ہی نہیں کر پائے تو ہم ان خاندانوں تک کیسے پہنچیں گے جن کے بچے کھو رہے ہیں یا ان بچوں تک کیسے پہنچیں جو کھوئے ہوئے ہیں۔‘

ادھر وفاقی وزیر فاروق ستار کا کہنا ہے کہ حکومت تنہا ان مسائل سے نمٹنے کی صلاحیت نہیں رکھتی اور بقول ان کے پناہ گزینوں کو کسی انسانی المیے کا شکار ہونے سے بچانے کے لئے سب کو

BIldergalerie Flüchtlingskrise im Swattal Asif Ali Zardari

صدر آصف علی زرداری

مل جل کر کام کرنا ہوگا:'یہ کام صرف حکومت کی ذمہ داری نہیں ہے اور نہ یہ حکومت کے بس میں ہے۔ لہٰذا پاکستان کے ہر شہری کو تمام غیر سرکاری ، غیر سیاسی تنظیموں کو اور بین الاقوامی اداروں کو بھی متحد، منظم اور متحرک ہونا پڑے گا‘‘۔

دریں اثناء صدر آصف علی زرداری نے نقل مکانی کرنے والے افراد کی صورتحال خصوصا ان کی بحالی کے امور پر غور کے لئے بدھ کے روز ایوان صدر میں ایک اعلیٰ سطحی اجلاس طلب کر لیا ہے جس میں وزیر اعظم یوسف رضا گیلانی کے علاوہ متعلقہ سرکاری حکام اور امدادی اداروں کے نمائندے بھی شرکت کریں گے۔