1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

مالاکنڈ آپریشن: فوجی اور سیاسی قیادت میں ہم آہنگی کی کوشش

وزیر اعظم نے کُل جماعتی کانفرنس بلا لی۔ فوج کے سربراہ پارلیمانی نمائندوں کو بریفنگ دیں گے۔ ایسا ظاہر ہوتا ہے کہ سیاسی اور فوجی قیادت اس اہم مسئلے پر اتفاق رائے اور ہم آہنگی پیدا کرنے کی کوشش کر رہی ہے۔

default

اسلام آباد میں قومی اسمبلی کی عمارت

جمعرات کے روز قومی اسمبلی میں تقریر کرتے ہوئے وزیراعظم نے کہا کہ حکومت نقل مکانی کرنے والے افراد کی بحالی کے لئے جنگی بنیادوں پر کام کر رہی ہے اور شدت پسندوں کی طرف سے ارکان پارلیمنٹ کو دی گئی دھمکیوں کے پیش نظر قبائلی علاقوں اور عسکریت پسندوں کے زیر اثر علاقوں سے تعلق رکھنے والے ارکان پارلیمنٹ کے تحفظ کو یقینی بنایا جائے گا۔

Weltwirtschaftsforum Davos Syed Yousuf Raza Gillani

وزیر اعظم یوسف رضاگیلانی

دریں اثناء پارلیمانی امور کے وزیر ڈاکٹر بابر اعوان نے بتایا کہ پیر کو بلائی گئی کُل جماعتی کانفرنس کا مقصد اس اہم مسئلے پر سب کو اعتماد میں لینا ہے: "ہم نے دعوت دینے کا سلسلہ شروع کر دیا ہے۔ ان کو میں اطلاع دے رہا ہوں اور دو طرح کی پارٹیوں کو دعوت دی جا رہی ہے۔ ایک وہ جن کی پارلیمنٹ کے اندر نمائندگی ہے اور دوسری وہ جماعتیں جو پارلیمنٹ میں نہیں ہیں۔‘‘

بعض اپوزیشن جماعتوں نے اگرچہ آل پارٹیز کانفرنس بلانے کے فیصلے کو تاخیری اقدام قرار دیا ہے تاہم اکثر نے اس کی حمایت کی ہے۔ اسی دوران پاکستانی فوج کے ترجمان میجرجنرل اطہر عباس نے سوات آپریشن کی صورتحال پر بریفنگ میں اس خبر کو غلط اور بے بنیاد قرار دیاجس کے مطابق طالبان اور ان کے حامی صوبہ سرحد کے 38 فیصدحصے پر قابض ہیں۔

Neue Militäroffensive gegen Taliban in Pakistan

دیر میں تعینات ایک فوجی

جنرل اطہر عباس کا کہنا تھا کہ پاک فوج نے عسکریت پسندوں کے خلاف مکمل طور پر ملکی وسائل استعمال کرتے ہوئے بڑی کامیابیاں حاصل کی ہیں: "اس آپریشن کی مکمل پلاننگ اور ہر قسم کے وسائل ہمارے اپنے ہیں۔ اس میں کسی قسم کی کوئی مدد یا کسی قسم کی ہدایت بیرونی طاقتوں سے نہیں لی جا رہیں۔‘‘

اُدھر حکومت نے بڑے پیمانے پر بے گھر ہونے والے افراد کی بحالی کے لئے آئندہ ہفتے ڈونرز کانفرنس بلانے کا بھی اعلان کیا ہے تا کہ بروقت امداد کے ذریعے متاثرین کو گرم موسم کی شدت اور اشیائے ضرورت کی قلت سے بچایا جا سکے۔