1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

ماریہ صداقت کو جلایا نہیں گیا،اُس نے خود کُشی کی:پولیس

پاکستانی پولیس نے کہا ہے کہ شادی کے لیے آنے والے ایک رشتے سے انکار کرنے والی ٹین ایجر ماریہ صداقت کو زندہ نہیں جلایا گیا تھا بلکہ اُس نے خود کُشی کی تھی۔

یکم جون کو پولیس اور مقتولہ کے رشے داروں نے بتایا کہ ایک پرائیوٹ اسکول میں زیر تعلیم 19 سالہ ماریہ صداقت نے اپنے اسکول کے پرنسپل کے بیٹے سے شادی کرنے سے انکار کر دیا تھا۔ جس پر اسلام آباد سے نزدیک پاکستان کے ایک نہایت پُر فضا مقام مری کے نواح میں اپر دیوال نامی گاؤں میں کئی افراد کے ایک گروہ نے تیس مئی کو حملہ کر کے ماریہ کو بری طرح تشدد کا نشانہ بنایا تھا۔

بعد ازاں اُس کی زخموں سے چور لاش کو آگ لگا دی گئی تھی۔ ماریہ نے زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے اسلام آباد کے ایک ہسپتال میں یکم جون کو دم توڑ دیا تھا۔

جمعہ یکم جولائی کو ماریہ کے مقدمے کی تفتیشی ٹیم نے اس واردات کو خود سوزی قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ یہ خود کُشی تھی۔ ساتھ ہی ماریہ کے مقدمے میں گرفتار ہونے والے چار میں سے تین ملزمان کو بے گناہ بھی قرار دے دیا گیا ہے۔

Pakistan Ehrenmord in Lahore 27.05.2014

فرزانہ اقبال بھی اپنی فیملی کے ہاتھوں قتل ہوئی تھی

پولیس کی طرف سے ماریہ کی موت کو خود کُشی قرار دینے کے عمل کی ماریہ کے والد اور انسانی حقوق کے سرگرم عناصر نے شدید تنقید کی ہے۔

ماریہ کے انتقال کے وقت پولیس نے کہا تھا کہ مرنے سے پہلے ماریہ نے ایک بیان دیا تھا جس میں اُس نے خود پر حملہ کرنے والوں کے نام لیے تھے۔ ان ناموں میں اُس شخص کا نام جس نے اُسے مبینہ طور پر شادی کی پیشکش کی تھی، اُس کے والد اور دیگر حملہ آوروں کے نام شامل تھے۔

تاہم جمعہ یکم جولائی کو پولیس نے اپنے بیان میں ماریہ کے آخری الفاظ کو نظر انداز کرتے ہوئے دعویٰ کیا کہ ماریہ کی اُس شخص کے ساتھ کئی سالوں سے دوستی تھی اور دونوں کے مابین ہزاروں ٹیکسٹ پیغامات کا تبادلہ ہوا تھا اور ماریہ نے اُس شخص سے شادی کی اتجا کی تھی۔

پولیس اہلکاروں نے مزید کہا ہے کہ ماریہ نے ایک ٹیکسٹ پیغام میں اُس مرد کو یہ دھمکی بھی دی تھی کہ وہ اُس کی خود کُشی کا ذمہ دار ہوگا۔ پولیس نے یہ بھی کہا ہے کہ ماریہ صداقت کو جلانے کے لیے جو پٹرول استعمال کیا گیا وہ اُس کے والد کے ورکشاپ سے آیا تھا۔

پولیس نے مزید کہا ہے کہ فورینزک شواہد سے کہیں سے بھی یہ ثابت نہیں ہو سکا ہے کہ اُس پر حملہ کیا گیا تھا۔ تفتیشی کمیٹی کے سربراہ ابوبکر خُدا بخش نے اس رپورٹ کی تصدیق کر دی ہے۔

Pakistan Familienrache Mutter tötet Tochter in Lahore

اپنی بیٹی کو جلا کر مار دینے والی ماں

ماریہ کے والد نے پولیس پر الزام عائد کیا ہے کہ اُن کی بیٹی کے قتل کی تفتیشی کارروائی میں پولیس نے ساز باز اور گڑ بڑ کی ہے۔

ماریہ کے والد صداقت حسین نے اے ایف پی کو بیان دیتے ہوئے کہا، ’’یہ نہایت دُکھ اور صدمے کی بات ہے کہ پولیس نے تفتیشی کارروائی میں حقائق کو کس طرح بدل دیا ہے اور غلط بیانی اور توڑ جوڑ کر کے مبینہ ملزمان کو تحفظ فراہم کیا ہے۔‘‘

دریں اثناء پاکستان کی انسانی حقوق کی سرکردہ کارکن عاصمہ جہانگیر، جنہوں نے اپنے طور پر بھی ایک کمیٹی ماریہ کیس کی چھان بین کے لیے قائم کی ہے، نے پولیس رپورٹ کو مسترد کر دیا ہے۔ انہوں نے اپنے بیان میں کہا، ’’یہ کہیں سے خود کُشی کا کیس نہیں لگتا، ماریہ کے ہاتھ جلے ہوئے نہیں تھے اگر اُسے خود کُشی ہی کرنا ہوتی تو خود کو اتنی تکلیف میں ڈالنے کے بجائے وہ زہر کھا سکتی تھی یا خود کو گولی مار لیتی۔‘‘

عاصمہ جہانگیر کے بقول ماریہ کی موت کا اعلامیہ موجود ہے۔ انہوں نے اس امر کی طرف نشاندہی بھی کی کہ چند مبینہ ملزم صداقت کے بیان کو فسق قرار دینے کے لیے سامنے آنے کی ہمت کرنے کے بجائے اس واقعے کے بعد سین سے غائب ہو گئے۔ عاصمہ جہانگیر نے حکومت پاکستان سے ماریہ کے قتل کے کیس کی نئے سرے سے تفتفشی کارروائی کروانے کا مطالبہ کیا ہے۔

DW.COM