1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

فن و ثقافت

لے کوربیوزیے کا کام عالمی ورثہ قرار دے دیا گیا

اقوام متحدہ کے ادارہ برائے ثقافت یونیسکو نے فرانکو سوئس ماہرتعمیرات لے کوربیوزیے کے کام کو عالمی ورثے کی فہرست میں شامل کر لیا ہے۔ اس ادارے کی عالمی ورثہ کمیٹی نے اتوار کے روز استنبول میں اپنے اجلاس میں یہ فیصلہ کیا۔

لے کوربیوزے کو اپنے عہد پر ان منٹ نقوش چھوڑنے والے ماہرین تعمیرات میں سے ایک قرار دیا جاتا ہے۔ انہوں نے تقریباﹰ 17 ممالک میں اپنی تعمیراتی تخلیقات چھوڑیں، جب کہ سن 1950ء کی دہائی میں بھارت میں چھتیس گڑھ شہر کی منصوبہ بندی بھی ان کا اہم کارنامہ قرار دی جاتی ہے۔

پہلی عالمی جنگ کے بعد لے کوربیوزیے نے ٹھوس بنیادوں پر کنکریٹ، لوہے اور شیشے کا استعمال کر کے متعدد تعمیراتی تخلیقات وضع کی تھیں۔ ان کی تخلیق کردہ تعمیرات، فرانس، سوئٹزلینڈ، بیلجیئم، جرمنی، ارجنٹائن، جاپان اور بھارت میں موجود ہیں۔

Bildergalerie Le Corbusier 50. Todestag

وہ اپنی جدت پر مبنی سوچ کی وجہ سے پہچانے جاتے تھے

لے کوربیوزیے تعمیرات کے علاوہ جدید فرنیچر کے ڈیزائن اور پینٹنگ سے بھی وابستہ رہے ہیں۔

چارلس ایڈورڈ جیانیرے گری کو دنیا لے کوربیوزیے کے نام سے جانتی اور پہچانتی ہے۔ ان کے سترہ پروجیکٹس کو عالمی ورثہ قرار دیا گیا ہے، جن میں سے 10 فرانس میں ہیں۔

لے کوربیوزیے سن 1887 میں سوئٹزرلینڈ میں پیدا ہوئے، جب کہ سن 1930ء میں انہوں نے فرانسیسی شہریت اختیار کر لی۔ وہ سن 1965ء میں انتقال کر گئے۔ ان کے کام کے اعتراف میں سوئس کرنسی میں دس فرانک کے نوٹ پر ان کی شبیہ موجود ہے۔