1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

لے پین یا ماکروں؟ فرانس کے نئے صدر کا فیصلہ آج ہو رہا ہے

فرانس میں صدارتی انتخابات کے دوسرے اور فیصلہ کن مرحلے میں ووٹنگ کا آغاز ہو گیا ہے۔ یہ رائے شماری بڑے شہروں میں رات آٹھ بجے جبکہ دیگر علاقوں میں شام سات بجے تک جاری رہے گی۔

فرانس کے تقریباً 46 ملین اہل ووٹرز آج فیصلہ کر رہے ہیں کہ ملک کی اگلی صدر عوامیت پسند خاتون سیاست دان مارین لے پین ہوں گی یا پھر یہ ذمہ داری لبرل اور یورپی یونین کے حامی آزاد امیدوار ایمانوئل ماکروں کو سونپی جائے۔ قبل از انتخابات کرائے جانے والے آخری جائزے کے مطابق ماکروں کو ساٹھ فیصد  تک ووٹ مل سکتے ہیں جبکہ لے پین کو چالیس فیصد عوامی تائید حاصل ہو گی۔ تاہم بہت سے فرانسیسی شہریوں نے انتخابات میں حصہ نہ لینے کا کہا ہے اور ماہرین کے مطابق اس کا فائدہ لے پین کو ہو سکتا ہے۔

انتخابی مہم کے ختم ہونے سے کچھ دیر قبل اس خبر سے مختلف حلقوں میں تشویش کی لہر دوڑ گئی کہ ماکروں کے ٹیم کو ایک بڑے سائبر حملے کا نشانہ بنایا گیا ہے۔ اس پر رد عمل ظاہر کرتے ہوئے ملکی صدر فرانسوا اولانڈ نے کہا کہ اگر واقعی صدارتی امیدوار کے دستاویزات چرائے گئے ہیں یا ان میں گڑ بڑ کی گئی ہے تو اس کے خلاف کارروائی کی جائے گی۔

یہ انتخابات فرانس کے ساتھ ساتھ یورپی یونین کے لیے بھی انتہائی اہم سمت کا تعین کریں گے۔ فتح کی صورت میں لے پین فرانس کو یورپی یونین سے الگ کرنا چاہتی ہیں ساتھ ہی وہ یورو کرنسی کو بھی تنقیدی نگاہ سے دیکھتی ہیں اور ملک کی سابق کرنسی’فرانک‘ کو دوبارہ سے رائج کرنے کے لیے ریفرنڈم کرانے کا ارادہ رکھتی ہیں۔

 تجزیہ کاروں کے مطابق اگر فرانس یورپی یونین سے نکل جاتا ہے تو اس اتحاد کو برقرار رکھنے میں شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑے گا۔ اس کے علاوہ لے پین کھل کر مہاجرین کی مخالفت بھی کرتی ہیں۔ دوسری جانب ماکروں ہیں، جو یورپی یونین کی اہمیت کو سمجھتے ہوئے جرمنی کے ساتھ باہمی تعلقات کو مزید فروغ دینا چاہتے ہیں۔

فرانس میں گزشتہ دنوں ہونے والے کئی دہشت گردانہ حملوں کے بعد ملک میں ہنگامی حالت نافذ ہے۔ 2015ء کے آغاز سے اب تک اس ملک میں 230 سے زائد شہری ان کارروائیوں کا نشانہ بن چکے ہیں۔ موجودہ صدر فرانسوا اولانڈ نے اپنی مقبولیت میں کمی کی وجہ سے دوبارہ انتخابات میں حصہ  نہ لینے کا فیصلہ کیا تھا۔