1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

کھیل

لیڈز ٹیسٹ: پاکستان کو مشکلات کا سامنا !

آسٹریلیا کی کرکٹ ٹیم نے پاکستانی ٹیم کے خلاف دوسرے ٹیسٹ میچ کے دوسرے دن اپنی دوسری اننگز میں بہتر کارکردگی کا مظاہرہ کر کے پاکستانی کرکٹ ٹیم کے لئے مشکلات پیدا کردی ہیں۔

default

رکی پونٹنگ

ایسے اندازے لگائے گئے تھے کہ پاکستانی ٹیم کے سات کھلاڑی لیڈز ٹیسٹ کے دوسرے دن بہتر کارکردگی کا مظاہرہ کرتے ہوئے ایک بڑی سبقت حاصل کرکے آسٹریلوی ٹیم کو مزید دباؤ کا شکار کر کے اپنی ٹیم کو فتح کی دہلیز تک لے جائیں گے۔ لیکن 170 رنز کی برتری اب کوئی بڑی دکھائی نہیں دے رہی کیونکہ پاکستانی باؤلر آسٹریلوی ٹیم کے صرف دو کھلاڑی آؤٹ کرنے میں کامیاب ہوئے ہیں۔

اس وقت کریز پر رکی پونٹنگ اور مائیکل کلارک موجود ہیں۔ اس کے علاوہ آسٹریلوی ٹیم کی آٹھ وکٹیں بھی باقی ہیں۔ لیڈز ٹیسٹ کے دوسرے دن جب خراب روشنی کی وجہ سے کھیل ختم ہوا تو آسٹریلوی ٹیم 34 رنز کے خسارے میں تھی۔

Kricket Waqar Younis

کوچ وقار یونس شعیب ملک کو مشورہ دیتے ہوئے

پاکستان کی جانب سے کوئی بھی بڑی اننگ لیڈر ٹیسٹ میچ کے دوسرے دن پاکستانی ٹیم کی پہلی اننگز میں دیکھنے میں نہیں آئی۔ پاکستانی بلے باز شین واٹسن کی نپی تلی باؤلنگ کا سامنا کرنے سے قاصر رہے۔ یہ امر واقع ہے کہ واٹسن کوئی ماہر باؤلر نہیں ہیں لیکن پاکستانی بلے بازوں پر ان کا جادو چل چکا ہے۔

لارڈز ٹیسٹ میں وہ پانچ کھلاڑی آؤٹ کرنے میں کامیاب ہوئے تھے اور لیڈز ٹیسٹ میں واٹسن نے اپنی باؤلنگ کارکردگی کو مزید بہتر بنایا ہے۔ وہ چھ پاکستانی بلے بازوں کی وکٹیں حاصل کرنے میں کامیاب رہے جو ٹیسٹ کرکٹ میں ان کی بہترین با‌‌‌‌‌‌‌‌‌‌‌‌‌‌‌‌‌‌‌‌‌ؤلنگ ہے۔ ٹیسٹ میچ کے دوسرے دن، پہلی اننگز میں سات پاکستانی کھلاڑیوں میں دو بغیر کسی سکور کے آؤٹ ہوئے۔ عمر امین، عمر اکمل اور شعییب ملک تیس رنز کو بھی چھو نہ سکے یہ تینوں بالترتیب 25، 21 اور 26 رنز بنا کر پولین کو سدھارے۔ اس طرح پاکستانی بلے باز ایک بار پھر باؤلروں کی کارکردگی کو سنبھالنے میں ناکام رہے۔

Mohammad Asif

محمد آصف نے آسٹریلیا کی پہلی اننگز میں تین وکٹیں حاصل کیں

مبصرین کا خیال ہے کہ اگر آسٹریلیا کی ٹیم 150 رنز کی سبقت حاصل کر جاتی ہے تو وہ یہ میچ جیتنے کی پوزیشن میں ہو گی۔ پاکستانی ٹیم گزشتہ برس آسٹریلیا کے دورے کے دوران سڈنی میں کھیلے جانے والے ٹیسٹ میچ کو جیتنے کے قریب پہنچ کر بھی ہار گئی تھی۔ تب محمد یوسف کپتان تھے۔ اب دیکھنا یہ ہے کہ سلمان بٹ کی کپتانی کیا رنگ دکھاتی ہے۔ ناقدین کا خیال ہے کہ سڈنی ٹیسٹ کی پرچھائیاں لیڈز کے میدان ہیڈنگلے پر تیرتی دکھائی دے رہی ہیں۔ پاکستان کے نوجوان بلے باز اپنے ٹیلنٹ کے مطابق کرکٹ پیش کرنے میں ناکام رہے ہیں۔ اس ناکامی کا بھرپور فائدہ آسٹریلوی ٹیم نے حاصل کیا ہے۔

لیڈز ٹیسٹ میچ کے دوسرے دن جب کھیل ختم ہوا تو رکی پونٹنگ 61 کے سکور پر ناٹ آؤٹ تھے اور نائب کپتان مائیکل کلارک اپنے کپتان کا بھرپور ساتھ دے رہے ہیں۔ دونوں نے 81 رنز کی ناقابل شکست شراکت قائم کر رکھی ہے دوسری اننگز میں آسٹریلوی ٹیم کے دونوں افتتاحی بلے باز 55 کے سکور پر آؤٹ ہو گئے تھے۔

رپورٹ: عابد حسین

ادارت: شادی خان سیف

DW.COM