1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

’لیلٰی‘ کی شدید بارش اور طوفانی ہوائیں

بھارت میں محکمہء موسمیات نے بتایا ہے کہ ’لیلٰی‘ نامی سمندری طوفان اپنی شدید بارش اور 155 کلومیٹر گھنٹہ کی رفتار والی ہواؤں کے ساتھ آج جمعرات کو بھارتی ریاست آندھرا پردیش کے ساحلوں سے ٹکرانے والا ہے۔

default

خلیج بنگال میں مسلسل شدت اختیار کرنے والے اِس طوفان کے باعث ممکنہ تباہی کے ڈر سے بھارت کے جنوبی ساحلوں پر واقع علاقوں سے پچاس ہزار سے زیادہ افراد کو محفوظ مقامات پر منتقل کر دیا گیا ہے۔

قدرتی آفات میں مدد دینے والے قومی اداروں کی ٹیمیں ساحلی علاقوں میں ہر قسم کے حالات کے لئے تیار بیٹھی ہیں۔ شدید طوفانی موسم، آسمانی بجلی اور تیز ہواؤں کے سبب گزشتہ چند روز کے دوران پہلے ہی کم از کم دَس افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔ 1996ء میں اِسی طرح کے ایک طوفان کے باعث آندھرا پردیش میں ایک ہزار چھ سو سے زیادہ افراد ہلاک ہو گئے تھے۔

Ölförderung in Indien

اِسی طوفان کے ڈر سے جنوبی بھارت کی ایک آئل فیلڈ کو بند کیا جانا پڑا ہے

اِسی طوفان کے ڈر سے جنوبی بھارت کی ایک آئل فیلڈ کو بند کیا جانا پڑا ہے۔ ریلائنس انڈسٹریز کے ذرائع کے مطابق اُنہیں اپنی تیل اور گیس کی پیداوار میں دَس فیصد کمی کرنے پر مجبور ہونا پڑا ہے۔

خیال کیا جا رہا ہے کہ آندھرا پردیش کے ساحلوں سے ٹکرانے کے بعد یہ طوفان اُڑیسہ کا رُخ کرے گا تاہم لوہے کی برآمدات کے لئے اہم بندرگاہ پردیپ پورٹ تک پہنچتے پہنچتے اِس کی قوت کافی حد تک کم ہو جائے گی۔ پردیپ پورٹ کے ایک سرکردہ عہدیدار جی کے بِسوال نے بتایا کہ اگرچہ اِس طوفان کے نتیجے میں پورٹ کی سرگرمیوں میں کسی بڑے خلل کا امکان نہیں ہے تاہم پورٹ کے حکام ہر طرح کی صورتِ حال کے لئے تیار اور چوکس ہیں۔

’لیلٰی‘ کی طوفانی ہوائیں مون سون کے اُس قدرتی عمل کی رفتار کو بھی سست بنا سکتی ہیں، جو بھارت کی ٹرلین ڈالر کے حجم کی حامل معیشت کے لئے ریڑھ کی ہڈی کی حیثیت رکھتا ہے۔ گزشتہ سال بھی یہ عمل خلل کا شکار ہوا، جس کے باعث غالباً غذائی پیداوار بھی کم رہی اور اَشیائے خوراک کی قیمتوں میں ہوش رُبا اضافہ مشتعل عوام کو سڑکوں پر بھی لے آیا۔

BdT Reis in Indien

مقامی حکام کا کہنا ہے کہ موسلا دھار بارشیں آئندہ مہینے بوئی جانے والی چاول کی فصل کے لئے بے حد مددگار ثابت ہوں گی

کچھ ماہرین نے ایک سمندری طوفان کو زرعی اجناس کی پیداوار میں کمی کی وجہ قرار دیا تھا۔ یہ اور بات ہے کہ سائنسدانوں میں مون سون کی بارشوں پر سمندری طوفانوں کے اثرات کے بارے میں اختلافِ رائے پایا جاتا ہے۔

اِس سال مون سون کی بارشیں پیر، سترہ مئی کو یعنی مقرر ہ سالانہ شیڈول سے تین روز پہلے ہی بھارت کے انڈیمان اور نیکوبار جزائر کے ساتھ ساتھ خلیج بنگال کے بہت سے حصوں میں بھی پہنچ چکی ہیں۔ مقامی حکام کا کہنا ہے کہ موسلا دھار بارشیں آئندہ مہینے بوئی جانے والی چاول کی فصل کے لئے بے حد مددگار ثابت ہوں گی کیونکہ اِن کے نتیجے میں زمین زیادہ نَم ہو جائے گی اور اُس میں ہل چلانا آسان ہو جائے گا۔

رپورٹ: امجد علی

ادارت: شادی خان سیف

DW.COM