1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

لیسبوس جزیرہ: سیاحتی مرکز سے مہاجر بستی تک

یونانی جزیرہ لیسبوس کسی دور میں یونانیوں کے لیے اپنی معروف شراب اوزو اور وہاں سترویں صدی کے شاعر شاپہو کی وجہ سے مشہور تھا، جس نے اپنی شاعری میں عورت کی محبت کو امر کیا مگر اب یہ جزیرہ ایک مہاجر بستی میں تبدیل ہو چکا۔

مہاجرین کے بحران میں اس جزیرے کو یورپ میں داخلے کے لیے مرکزی دروازے کی حیثیت حاصل ہو گئی ہے۔ گزشتہ برس اسی جزیرے کے ذریعے لاکھوں مہاجرین ترکی سے یونان پہنچے۔ اسی وجہ سے یورپی رہنما ہوں یا اہم فنکار، امدادی کارکنان ہوں یا مبصرین سبھی اس جزيرے کا دورہ کر چکے ہيں۔ کیتھولک مسیحیوں کے روحانی پیشوا پوپ فرانسِس بھی ہفتے کے روز مہاجرین کے دکھ بانٹنے کے ليے اس جزیرے کا رخ کر رہے ہیں۔

لیسبوس پہنچنے والی عالمی شہرت یافتہ شخصیات میں سوزين سارانڈن سب سے پہلی امریکی اداکارہ تھیں، جو اس جزیرے پر پہنچ کر خود اپنی آنکھوں سے مہاجرین کے اس بحران کی شدت کا اندازہ لگانا چاہتی تھیں۔

69 سالہ اداکارہ دنیا بھر میں انسانی بنیادوں پر امداد کی سرگرمیوں کی حمایت کے لیے معروف ہیں، جب کہ وہ اس وقت اقوام متحدہ کے ادارہ برائے اطفال (UNICEF) کی خیرسگالی سفیر کے طور پر بھی کام کر رہی ہیں۔ اس دورے کے بعد ان کا کہنا تھا کہ وہ اس دورے کے ذریعے اس معاملے کے حوالے سے عالمی سطح پر شعور و آگہی میں اضافے کی کوشش میں ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ اس دورے کے ذریعے وہ اپنے دادا دادی کو بھی خراج عقیدت پیش کرنا چاہتی تھیں، جو اٹلی سے ہجرت کر کے امریکا گئے تھے۔

Griechenland Angelina Jolie zu Besuch in Athen

انجلینا جولی نے بھی مہاجر بستیوں کا دورہ کیا

اپنی ایک پوسٹ میں ان کا کہنا تھا، ’’مجھے امید ہے کہ میں ان مہاجرین کی آواز بننے کی کوشش کروں گی، تاکہ لوگ سمجھ سکیں۔‘‘

یونانی دانشوورں کی جانب سے کہا گیا ہے کہ ساراڈون کو مہاجرین کی زندگیاں بچانے میں مصروف ایک یونانی خاتون ملاح اور ایک 80 سالہ مقامی خاتون کے ہم راہ نوبل انعام برائے امن سے نوازا جائے۔ اس 80 سالہ خاتون کی ایک شامی نومولود بچے کو بوتل کے ذریعے دودھ پلاتے ہوئے تصویر سوشل میڈیا پر ہر جانب شیئر ہونے کی وجہ سے وہ ایک قومی ہیرو بن چکی ہیں۔

معروف امریکی اداکار میڈی پاٹیکِن نے بھی اس جزیرے کا دورہ کیا اور عالمی برادری سے اپیل کی کہ خوف ناک حالات سے فرار ہونے والے ان مہاجرین کے لیے اپنے بازو اور دل کھول دیئے جائیں۔

چینی فنکار آئی وائی وائی نے بھی گزشتہ برس کے اختتام پر اس جزیرے کے دورے کے دوران کہا کہ مہاجرین کی ہر صورت میں مدد کی جائے۔

مشہور امریکی اداکارہ اور اقوام متحدہ برائے مہاجرین کی مندوب انجیلینا جولی نے بھی مارچ میں اس جزیرے اور یونان میں قائم مہاجرین کے سب سے بڑے رجسٹریشن مرکز کا دورہ کیا۔