1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

لیبیا کے شہر الزاویہ کا فوجی محاصرہ، کم از کم تیس افراد ہلاک

لیبیا میں معمر قذافی کے حامی دستوں نے شمال مغربی شہر الزاویہ کا محاصرہ کر رکھا ہے اور آج ہفتہ کے روز وہاں ہونے والی لڑائی میں طبی ذرائع کے مطابق کم از کم تیس افراد کی ہلاکت کی اطلاعات ہیں۔

default

قذافی ابھی تک یہ دعویٰ کرتے ہیں کہ لیبیا کے عوام ان سے محبت کرتے ہیں

لیبیا میں معمر قذافی کے حامی فوجی دستوں کو شہر زاویہ کے وسطی علاقے سے باغیوں کے ساتھ ہونے والی شدید لڑائی کے بعد آج ہفتہ کو وہاں سے نکلنا پڑ گیا تھا۔ باغیوں کے ایک ترجمان نے بتایا کہ قذافی کے حامی سینکڑوں دستے آج صبح چھ بجے بہت سے ٹینکوں کی مدد سے الزاویہ نامی شہر میں داخل ہو ئے تھے۔

تاہم باغیوں نے ایک خونریز جھڑپ کے بعد انہیں وہاں سے پسپائی پر مجبور کر دیا۔ لیکن پسپائی کے بعد قذافی کے حامی ان مسلح دستوں کو طرابلس کی طرف سے بھیجے گئے مزید فوجی دستوں کی مدد حاصل ہو گئی۔

Libyen Aufstände Proteste

لیبیا میں عورتیں بھی مظاہروں میں برابر کی شریک ہیں

اس طرح ہفتہ کی دوپہر تک لیبیا کے ان سرکاری فوجی یونٹوں نے ایک بار پھر الزاویہ نامی شہر کا محاصرہ کر لیا تھا۔ خبر ایجنسیوں کی رپورٹوں کے مطابق باغیوں پر قابو پانے کی کوششیں کرنے والے یہ دستے آہستہ آہستہ شہر کی طرف بڑھ رہے ہیں۔

طرابلس سے ملنے والی رپورٹوں کے مطابق اس وقت زاویہ شہر کے کئی حصے باغیوں کے قبضے میں ہیں، جن کے پاس وہ دو سرکاری ٹینک بھی ہیں، جو انہوں نے آج صبح ہونے والی لڑائی میں سرکاری دستوں سے چھین لیے تھے۔ ان جھڑپوں کے دوران الزاویہ میں کئی ہلاکتوں کی اطلاع بھی ملی ہے تاہم سرکاری طور پر حکام نے اس بارے میں کچھ نہیں بتایا۔

Libyen Demonstration gegen Muammar Gaddafi in Bengasi Patronengürtel

بن غازی میں قذافی حکومت کے خلاف سرگرم ایک باغی

الزاویہ میں مقامی طبی ذرائع نے بتایا کہ صرف آج ہونے والی جھڑپوں میں اس شہر میں کم ازکم تیس افراد ہلاک ہو گئے۔ شہر کے وسط میں ایک ہسپتال کے ڈاکٹر نے بتایا کہ مرنے والوں میں اکثریت عام شہریوں کی ہے۔

لیبیا میں دارالحکومت طرابلس سے چند مقامات پر مظاہروں اور جھڑپوں کے علاوہ ملک کے دوسرے سب سے بڑے شہر بن غازی سے خونریز تصادم کی رپورٹیں بھی ملی ہیں۔ العربیہ ٹیلی وژن کے مطابق کل جمعہ کی رات تک بن غازی میں ہونے والی تازہ لڑائی میں 24 افراد ہلاک ہو چکے تھے۔

آج ہی متعدد عرب نشریاتی اداروں نے یہ اطلاعات بھی دیں کہ معمر قذافی اپنے چار عشروں سے بھی طویل دور اقتدار کو ہر قیمت پر جاری رکھنا چاہتے ہیں۔ اسی لیے الزاویہ میں ہفتہ کے روز قذافی کے حامی دستوں نے رہائشی علاقوں پر بھی ٹینکوں سے گولہ باری کی۔

العربیہ ٹیلی وژن کے مطابق جب قذافی کے حامی دستے اپنے ٹینکوں کے ساتھ آج صبح الزاویہ میں داخل ہوئے تو حکومت مخالف باغیوں نے مقامی مسجدوں سے لاوڈ سپیکر وں پر سرکاری دستوں کے خلاف جہاد کے اعلانات کرنا شروع کر دیے تھے۔

Libyen / Rebell / Ras Lanuf

راس لانوف کا رہنے والا ایک حکومت مخالف باغی

اسی دوران طرابلس اور راس لانوف نامی شہر سے ملنے والی رپورٹوں میں بتایا گیا ہے کہ حکومت مخالف باغی مغربی لیبیا میں کامیابیاں حاصل کر رہے ہیں اور مشرقی لیبیا میں بھی وہ حکومتی دستوں میں اپنا دباؤ بڑھاتے جا رہے ہیں۔

اسی دوران یونانی دارالحکومت ایتھنز سے موصولہ رپورٹوں کے مطابق امریکہ نے لیبیا کے بحران کی وجہ سے اپنے جو دو جنگی بحری جہاز بحیرہء روم کے علاقے کی طرف بھیجے تھے، وہ ایک یونانی جزیرے کے ساحلوں پر لنگر انداز ہو گئے ہیں۔ ان دونوں جنگی بحری جہازوں پر بارہ سو امریکی فوجی موجود ہیں۔ یہ جہاز آج ہفتہ کو یونانی جزیرے کریٹا پر ایک امریکی بحری اڈے کی حدود میں لنگر انداز ہو گئے۔

امریکہ نے تیونس کے ساتھ لیبیا کی سرحد سے مہاجرین کے انخلاء میں مدد دینے کے لیے اپنے فوجی طیارے بھی مہیا کر رکھے ہیں۔ تاہم امریکہ اور یورپ ابھی تک یہ فیصلہ نہیں کر پائے کہ آیا لیبیا میں نو فلائی زون کے قیام کے لیے نیٹو کی فضائی طاقت استعمال کی جانی چاہیے۔

رپورٹ: عصمت جبیں

ادارت: مقبول ملک

DW.COM

ویب لنکس