1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

لیبیا کے رستے یورپ کی طرف ہجرت کے خدشات: آسٹریا اور جرمنی کی تشویش

جرمن وزير داخلہ کے مطابق برلن حکومت ان خدشات کا اظہار کیا ہے کہ ترکی والے روٹ کی بندش کے بعد اس سال موسم گرما ميں مہاجرين ليبيا سے بحيرہ روم کا سفر کرتے ہوئے اٹلی کے رستے يورپی براعظم پہنچنے کی کوششيں کر سکتے ہيں۔

جرمن وزير داخلہ تھوماس ڈے ميزيئر نے کہا ہے کہ بلقان کے خطے سے گزرنے والے روٹ کی بندش کے سبب مہاجرين اب جرمنی اور يورپ نہيں پہنچ سکتے۔ تاہم انہوں نے خبردار کيا کہ ليبيا اور اٹلی کے راستے يورپ پہنچنے والے مہاجرين کی تعداد ميں اضافہ عین ممکن ہے۔ ڈی ميزيئر نے يہ بيان اپنے آسٹريا کے ہم منصب والٹر سبوٹکا کے ساتھ جمعے انتيس اپريل کو ہونے والی ملاقات کے بعد ديا۔

چند روز سے اس بارے ميں مختلف بيانات اور خدشات سامنے آ رہے ہيں کہ يورپی يونين اور ترکی کے درميان معاہدے کے بعد پناہ گزين يورپ تک رسائی کے متبادل راستوں کی تلاش ميں ہيں اور ايسا ہی ايک ممکنہ روٹ ليبيا سے بحيرہ روم کے راستے اٹلی تک رسائی والا روٹ ہے۔ کئی يورپی اہلکاروں کے مطابق ڈيل اور مشرقی بحيرہ روم ميں مغربی دفاعی اتحاد نيٹو کے بحری مشن کے سبب يورپ تک پہنچنے کے خواہاں افراد دوبارہ ليبيا کا رخ کر سکتے ہيں۔

برلن ميں آسٹريا اور جرمنی دونوں ملکوں کے وزرائے داخلہ نے مطالبہ کيا کہ اٹلی کو اپنے جنوبی ساحلی علاقوں کی نگرانی بڑھانے کے ليے اضافی اقدامات کرنے چاہييں۔ جرمن شہر پوٹس ڈام ميں جمعے کے روز ايک نيوز کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے وزير داخلہ تھوماس ڈے ميزيئر نے کہا، ’’يہ بات واضح ہے کہ بلقان ممالک والا روٹ اب ماضی کی بات ہے اور اب اس راستے سے لوگ آسٹريا، جرمنی اور يورپ کے مرکز تک نہيں پہنچ سکتے۔‘‘ ان کے بقول اب مسئلہ متبادل راستوں کا ہے۔

تھوماس ڈے ميزيئر اپنے آسٹريا کے ہم منصب والٹر سبوٹکا کے ساتھ

تھوماس ڈے ميزيئر اپنے آسٹريا کے ہم منصب والٹر سبوٹکا کے ساتھ

قريب ايک ہفتے قبل ليبيا کے نائب صدر نے اس اميد کا اظہار کيا تھا کہ مہاجرين کی يورپ کی جانب ہجرت کو روکنے کے ليے اُن کے ملک اور يورپی يونين کے مابين اُسی طرز کا معاہدہ طے ہو سکے گا جيسا کہ ترکی اور يورپی بلاک کے درميان ہے۔ يہ ملک سن 2011 ميں سابق آمر معمر قذافی کو اقتدار سے ہٹائے جانے اور ہلاکت کے بعد سے انتشار کا شکار ہے۔ کئی افريقی ملکوں سے تارکين وطن يورپ پہنچنے کے ليے ليبيا کی سرزمين استعمال کرتے ہيں۔

يہ امر اہم ہے کہ ليبيا سے اٹلی تک کے سفر کو ترکی سے يونان تک کے سفر کے مقابلے ميں زيادہ خطرناک مانا جاتا ہے اور اس روٹ پر واقع ہونے والی اموات کی شرح بھی مقابلتاً زيادہ ہے۔ بين الاقوامی ادارہ برائے ہجرت (IOM) کے مطابق سال رواں کے دوران اب تک يورپ پہنچنے کی کوششوں کے دوران بارہ سو سے زائد افراد ہلاک ہو چکے ہيں۔