1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

’لیبیا کا بحران سنگین تر‘، بان کی مون

اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل بان کی مون نے کہا ہے کہ لیبیا میں فائر بندی کی کوششیں ناکام ہو گئی ہیں اور وہاں انسانی صورتحال سنگین تر ہوتی جا رہی ہے۔ اسی دوران معمر قذافی کی حکومت نے چار غیر ملکی صحافی رہا کر دیے ہیں۔

سیکرٹری جنرل بان کی مون

سیکرٹری جنرل بان کی مون

نیویارک میں فرانسیسی خبر رساں ادارے اے ایف پی کے ساتھ ایک انٹرویو میں بان نے کہا کہ لیبیا کے لیے اُن کے خصوصی ایلچی عبداللہ الخطیب نے بہت زیادہ کوششیں کی ہیں لیکن قذافی کی جانب سے فوری اور قابلِ تصدیق فائر بندی کے اعلان کے سلسلے میں کوئی پیش رفت نہیں ہو سکی ہے۔ بان نے خبردار کیا کہ ’خراب تر ہوتی ہوئی انسانی صورت حال کے پیشِ نظر لیبیا کا بحران سنگین تر ہوتا جا رہا ہے‘۔

حکومت کے مخالفین اور قذافی کے حامی دستوں کے درمیان جھڑپوں میں ہزاروں افراد مارے جا چکے ہیں

حکومت کے مخالفین اور قذافی کے حامی دستوں کے درمیان جھڑپوں میں ہزاروں افراد مارے جا چکے ہیں

سیکرٹری جنرل نے کہا کہ اُنہیں مصراتہ کے حالات پر بہت زیادہ تشویش ہے، جو دو ماہ سے زیادہ عرصے سے قذافی کے حامی دستوں کے گھیرے میں ہے اور جہاں سینکڑوں افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔

خطیب گزشتہ اتوار کو طرابلس گئے تھے، جہاں اُنہوں نے فائر بندی کی ضرورت اور لیبیا کے ابتر حال شہروں تک رسائی کے موضوع پر قذافی حکومت کے عہدیداروں کے ساتھ بات چیت کی تاہم وہ خود معمر قذافی سے نہیں مل پائے۔

دریں اثناء طرابلس میں چار غیر ملکی صحافیوں کو رہا کر دیا گیا ہے۔ ان میں سے دو امریکی ہیں، ایک کا تعلق برطانیہ سے اور ایک کا اسپین سے ہے۔ یہ صحافی اپنی رہائی کے بعد بدھ کو دیر گئے طرابلس کے Rixos ہوٹل پہنچ گئے تھے۔

ایک آن لائن نیوز ایجنسی ’گلوبل پوسٹ‘ سے وابستہ امریکی صحافی جیمز فولی اور فری لانس امریکی صحافی مورگانا گیلس چار اپریل کو اسپین کے ایک فوٹوگرافر مانو برابو کے ہمراہ لیبیا کے بحران پر رپورٹنگ کے دوران لاپتہ ہو گئے تھے۔ بدھ 18 مئی کو اِن تینوں کے ساتھ ساتھ برطانوی صحافی نائجل چینڈلر کو بھی رہا کر دیا گیا۔

ICC کے مستغیثِ اعلیٰ لوئیس مورینو اوکامپو انسانیت کے خلاف جرائم کے الزام میں قذافی کے ساتھ ساتھ اُن کے بیٹے سیف الاسلام اور ہم زُلف عبداللہ السینوسی کے وارنٹ گرفتاری جاری کیے جانے پر زور دے چکے ہیں

ICC کے مستغیثِ اعلیٰ لوئیس مورینو اوکامپو انسانیت کے خلاف جرائم کے الزام میں قذافی کے ساتھ ساتھ اُن کے بیٹے سیف الاسلام اور ہم زُلف عبداللہ السینوسی کے وارنٹ گرفتاری جاری کیے جانے پر زور دے چکے ہیں

قذافی کی چار عشروں سے زیادہ عرصے کی حکمرانی کے خلاف لیبیا میں عوامی احتجاج کا سلسلہ 15 فروری کو شروع ہوا تھا اور قذافی ابھی بھی اقتدار چھوڑنے سے مسلسل انکار کر رہے ہیں۔ اس دوران حکومت کے مخالفین اور قذافی کے حامی دستوں کے درمیان جھڑپوں میں ہزاروں افراد مارے جا چکے ہیں جبکہ تقریباً ساڑھے سات لاکھ انسان گھر بار چھوڑ کر فرار ہو چکے ہیں۔

اِدھر بین الاقوامی فوجداری عدالت ICC کے مستغیثِ اعلیٰ لوئیس مورینو اوکامپو انسانیت کے خلاف جرائم کے الزام میں قذافی کے ساتھ ساتھ اُن کے بیٹے سیف الاسلام اور ہم زُلف عبداللہ السینوسی کے وارنٹ گرفتاری جاری کیے جانے پر زور دے چکے ہیں۔ بدھ 18 مئی کو اوکامپو نے اس سے بھی آگے جاتے ہوئے کہا کہ لیبیا حکومت کی پوری قیادت کو تحقیقات کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔

طرابلس حکومت کے ترجمان موسیٰ ابراہیم نے بین الاقوامی عدالت ICC کی طرف سے دیے گئے بیانات کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ طرابلس حکومت اِس عدالت کے دائرہء اختیار میں نہیں آتی۔ ترجمان نے ان الزامات کی بھی تردید کی کہ حکومت نے شہریوں کے قتل کے احکامات جاری کیے تھے۔

رپورٹ: امجد علی

ادارت: مقبول ملک

DW.COM

ویب لنکس