1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

لیبیا میں مہاجرین پر ’دل دہلا دینے والا تشدد‘، اقوام متحدہ

اقوام متحدہ کے مطابق لیبیا میں اسمگلروں کے ہاتھوں تارکین وطن کو لرزہ خیز تشدد کا سامنا ہے۔ اقوام متحدہ کی جانب سے منگل کے روز سامنے آنے والے بیان میں کہا گیا ہے کہ تشدد کی یہ سطح ’دل دہلا دینے والی تھی‘۔

اقوام متحدہ کے ادارہ برائے مہاجرین UNHCR کے مطابق صبراتہ کا علاقہ انسانوں کی اسمگلنگ میں مصروف گروہوں کا مرکز بن چکا ہے اور وہاں موجود تارکین وطن کو شدید نوعیت کے حالات کا سامنا ہے۔

لیبیا: تین ہزار سے زائد غیر قانونی مہاجرین گرفتار کر لیے گئے

’یورپ نے مہاجرین کو درپیش مظالم پر آنکھیں بند کر رکھی ہیں‘

ریفیوجی بحران: فرانس میں سات ملکی سمٹ

اقوام متحدہ کے ادارہ برائے مہاجرین کا کہنا ہے کہ لیبیائی حکام نے ساڑھے چودہ ہزار تارکین وطن کو حراست میں لے رکھا ہے۔ یہ افراد پہلے صبراتہ یا اس کے نواحی علاقوں سے لے کر طرابلس کی مغربی حصوں تک مختلف اسمگلرگروپوں نے یرغمال بنا رکھے تھے۔

اقوام متحدہ کی حمایت یافتہ لیبیائی حکومت نے اس ساحلی شہر اور آس پاس کے علاقوں میں مختلف فارمز، عمارتوں اور دیگر مکانات پر چھاپے مارتے ہوئے اور وہاں موجود مسلح گروپوں کو پسپا کرتے ہوئے ان مہاجرین کو بازیاب کروایا تھا۔

عالمی ادارے کے مطابق ان تارکین وطن کو بازیابی کے بعد صبراتہ شہر ہی میں یہ کہہ کر رکھا گیا تھا کہ انہیں رفتہ رفتہ  باقاعدہ حراستی مراکز میں منتقل کیا جا رہا ہے، جہاں امدادی ادارے ان افراد کی مدد کر رہے ہیں۔

ویڈیو دیکھیے 01:11

بحیرہ روم میں مہاجرین کی کشتیاں ڈوبنے کے خوفناک مناظر

حکام کے مطابق قریب چھ ہزار مہاجرین اب بھی اسمگلروں کے قبضے میں ہیں، جس کا مطلب ہے کہ مجموعی طور پر ان تارکین وطن کی تعداد بیس ہزار سے بھی زائد ہے۔

امدادی اداروں کے مطابق اسمگلروں کے ہاتھوں شدید نوعیت کے تشدد کا شکار ہونے والے افراد میں حاملہ خواتین اور نوزائیدہ بچے بھی شامل ہیں۔ بتایا گیا ہے کہ ان میں سے سینکڑوں ایسے مہاجرین بھی شامل ہیں، جن کے پاس کپڑے اور جوتے تک نہیں جب کہ جب ان افراد کو بازیاب کروایا گیا تو یہ کئی دن سے بھوکے تھے۔

امدادی اداروں کے مطابق بہت سے افراد کو طبی امداد دی گئی، بعض کے جسموں پر گولیوں کے زخم تھے اور بہت سے جنسی تشدد اور جبری مشقت جیسی صعوبتوں کا شکار تھے۔

عالمی ادارہ برائے مہاجرین کے مطابق ان میں بہت سے بچے ایسے بھی ہیں، جن کی عمریں چھ برس سے کم ہیں اور وہ تنہا ہیں۔

DW.COM

Audios and videos on the topic