1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

لیبیا میں شہری ہلاکتیں: نیٹو کا اعتراف بھی، تردید بھی

نیٹو نے آج پیر کو اس امر کا اعتراف کر لیا کہ اتوار کو لیبیا پر اس کے جنگی طیاروں کے حملے میں عام شہریوں کی ہلاکتیں ہوئی تھیں۔ تاہم ایسی ہلاکتوں کے طرابلس حکومت کے آج کیے گئے ایک نئے دعوے کو نیٹو نے مسترد کر دیا ہے۔

default

ویک اینڈ پر طرابلس کے ایک رہائشی علاقے پر نیٹو کے ایک فضائی حملے میں جو عام شہری ہلاک ہوئے، طرابلس حکومت نے ان کی تعداد نو بتائی، جن میں دو کم سن بچے بھی شامل تھے۔ اس بارے میں برسلز میں نیٹو کی طرف سے جاری کیے گئے ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ مغربی دفاعی اتحاد کو اس بات پر افسوس ہے کہ طرابلس میں قذافی انتظامیہ کی میزائلوں سے متعلق تنصیبات میں سے ایک کو نشانہ بنانے کی کوشش کے دوران شہری ہلاکتیں ہوئی ہیں۔

Beschädigtes Wohngebäude in Tripolis Libyen NO FLASH

سیاسی تجزیہ نگاروں کی رائے میں نیٹو اتحاد کا یہ اعتراف کہ وہ لیبیا میں سویلین ہلاکتوں کی وجہ بنا ہے، اس تنظیم کے لیے شرمندگی کا باعث ہے، جو اقوام متحدہ کی ایک قرارداد کی روشنی میں لیبیا پر فضائی حملوں کے ذریعے وہاں عام شہریوں کو قذافی کے حامی سرکاری دستوں کی انتقامی کارروائیوں سے بچانے کے لیے اپنا آپریشن جاری رکھے ہوئے ہے۔

اسی دوران طرابلس حکومت کی طرف سے آج پیر کو ایک بار پھر یہ دعویٰ کیا گیا کہ نیٹو کے ایک نئے فضائی حملے میں لیبیا میں مزید 15 عام شہری مارے گئے ہیں، جن میں تین بچے بھی شامل ہیں۔ طرابلس حکومت کے ترجمان موسیٰ ابراہیم نے صحافیوں کو بتایا کہ نیٹو فضائی حملوں کے دوران یہ نئی ہلاکتیں پیر کے روز ملکی دارالحکومکت سے مغرب کی طرف چند رہائشی عمارات کی تباہی کے نتیجے میں عمل میں آئیں۔

NO FLASH NATO Angriff Tripolis Libyen

طرابلس حکومت کے اس نئے دعوے کو البتہ نیٹو کے فوجی ذرائع نے رد کر دیا ہے اور کہا ہے کہ یہ نیا دعویٰ قذافی حکومت کی طرف سے محض پروپیگنڈے کی کوشش ہے۔ اس بارے میں نیٹو کے ایک اعلیٰ اہلکار نے برسلز میں کہا کہ طرابلس حکومت کا یہ دعویٰ اس لیے سراسر جھوٹ پر مبنی ہے کہ ملکی دارالحکومت سے قریب 70 کلو میٹر مغرب کی طرف جہاں نیٹو حملوں میں نئی شہری ہلاکتوں کا دعویٰ کیا گیا ہے، وہاں مغربی دفاعی اتحاد کے جنگی طیاروں نے سرے سے کوئی فضائی کارروائی کی ہی نہیں۔

لیبیا کے بارے میں بیجنگ سے موصولہ رپورٹوں میں کہا گیا ہے کہ چینی حکومت نے لیبیا میں باغیوں کی قومی عبوری کونسل کے سربراہ محمود جبریل کو اس لیے بیجنگ کے دورے کی دعوت دی ہے کہ ان کے ساتھ لیبیا میں خانہ جنگی سے متعلق براہ راست تفصیلی بات چیت کی جا سکے۔ بیجنگ میں چینی وزارت خارجہ نے آج پیر کو بتایا کہ محمود جبریل کل منگل کو بیجنگ پہنچیں گے اور بدھ کے روز تک وہاں قیام کریں گے۔

رپورٹ: مقبول ملک

ادارت: کشور مصطفیٰ

DW.COM