1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

لیبیا: قذافی اور باغیوں پر جنگی جرائم کا الزام

اقوامِ متحدہ نے پندرہ ہفتوں سے جاری لیبیا جنگ میں حکومت اور باغیوں دونوں پر جنگی جرائم کے ارتکاب کا الزام عائد کیا ہے۔

default

اقوامِ متحدہ کی انسانی حقوق سے متعلق کونسل نے جنیوا سے جاری کردہ ایک بیان میں کہا ہے کہ لیبیا تنازعے میں حکومتی فورسز اور باغی دونوں ہی انسانیت کے خلاف جرائم میں ملوّث پائے گئے ہیں۔ اقوامِ متحدہ کے کمیشن نے فریقین پر جنگی جرائم کے ارتکاب کا بھی الزام عائد کیا ہے۔

کمیشن کے بیان میں کہا گیا ہے کہ: ’کمیشن نے اپنے مینڈیٹ کے مطابق جو تحقیقات کی ہیں اس کے بعد وہ اس نتیجے پر پہنچا ہے کہ قذافی کی فورسز وسیع پیمانے پر جنگی جرائم میں ملوّث پائی گئی ہیں۔‘ کیمشن کا تاہم کہنا ہے کو باغیوں کی جانب سے جنگی جرائم کے ارتکاب کے ثبوت ملے ہیں تاہم وہ اتنے بڑے پیمانے پر نہیں ہیں۔

NO FLASH NATO Angriff Tripolis Libyen

لیبیا میں نیٹو فورسز کی کارروائی کے تین ماہ مکمل ہو گئے ہیں

خیال رہے کہ سینتالیس ممبران پر مشتمل اقوامِ متحدہ کے اس کمیشن نے لیبیا تنازعے کے حوالے سے اپنی تحقیقات کا آغاز فروری میں شروع کیا تھا۔

دوسری جانب لیبیا کے وزیر برائے تیل شکری غنیم نے اٹلی میں اعلان کیا ہے کہ وہ اپنے عہدے سے مستعفی ہو گئے ہیں اور وہ اب لیبیا میں جمہوریت کی جدوجہد میں قذافی کے خلاف کھڑے ہیں۔

دریں اثناء لیبیا میں قذافی کی فورسز کے خلاف نیٹو کی کارروائی کے تین ماہ مکمل ہو گئے ہیں۔ برسلز میں ہونے والی نیٹو کے اجلاس میں لیبیا کے لیے نیٹو کے مشن کی مدّت میں مزید تین ماہ کی توسیع کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ نیٹو کے سیکرٹری جنرل راسموسن کا اس حوالے سے کہنا تھا کہ یہ فیصلہ قذافی کی حکومت کے لیے ایک پیغام ہے کہ نیٹو ’لیبیا کے عوام کے تحفظ کے لیے پر عزم‘ ہے۔

راسموسن کے مطابق قذافی کی رخصتی اب محض ایک وقتی بات ہے۔

تازہ ترین اطلاعات کے مطابق جمعرات کی صبح لیبیا کے شہر طرابلس میں متعدد دھماکوں کی آوازیں سنی گئی ہیں۔

رپورٹ: شامل شمس⁄ خبر رساں ادارے

ادارت: امتیاز احمد

DW.COM