1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

لیبیا: جنگ بندی کا اعلان ایک چال ہے، امریکہ

لیبیا نے فرانس، امریکہ اور برطانیہ کی جانب سے کیے جانے والے حملوں کے ا یک روز بعد جنگ بندی کا اعلان کیا ہے۔ تاہم امریکہ نے اسے ایک ڈھونگ قرار دیا ہے۔

default

امریکی صدر باراک اوباما کے قومی سلامتی کے مشیر ٹوم ڈونیلون نے کہا ہے کہ معمر قذافی کی جانب سے جنگ بندی کا اعلان ایک چال ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ لیبیا کی افواج ایک مرتبہ پھر جنگ بندی کی خلاف ورزی کریں گی۔

انہوں نے کہا کہ امریکہ اس بات کا جائزہ لے رہا ہے کہ اس اعلان میں کتنی سچائی ہے اور کیا فوری طور پر اس کی خلاف ورزی کی جائے گی۔’’ہم قذافی کے اقدامات پر نظر رکھے ہوئے ہیں نہ کہ ان کے بیانات پر، اور ہماری کوشش ہے کہ ہم لیبیا کو سلامتی کونسل کی قرارداد پر عمل کرنے پر مجبور کریں‘‘۔

Krieg in Libyen

طرابلس حکام کے بقول ان حملوں میں 64 افراد ہلاک ہوئے ہیں

لیبیا کی فوج نے جنگ بندی پر آمادگی کا اعلان کرتے ہوئے کہا ہے کہ وہ افریقی یونین کی جنگی کارروائیوں کی فوری موقوفی کی درخواست کی جانب رجوع کر رہے ہیں۔

اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل بان کی مون کے بقول وہ امید کرتے ہیں کہ لیبیا اپنے الفاظ پر قائم رہے گا۔ قاہرہ میں صحافیوں سے بات کرتے ہوئے بان کی مون کا کہنا تھا کہ لیبیا کی جانب سے ابھی تک شہری آبادی کو نشانہ بنایا جا رہا ہے اور جنگ بندی کی تجویز کی تصدیق ہونا لازمی ہے۔

اس سے قبل سلامتی کونسل میں لیبیا کے خلاف قرارداد کی منظوری کے ساتھ ہی طرابلس حکام نے فائر بندی کا اعلان کیا تھا۔ تاہم قذافی کی فورسز نے اس کی خلاف ورزی کرتے ہوئے بن غازی پر حملے جاری رکھے۔ اس کے بعد فرانس، برطانیہ اور امریکہ نے فضائی کارروائی کی ابتدا کی تھی۔ طرابلس حکام کے بقول ان حملوں میں 64 افراد ہلاک ہوئے ہیں۔

پینٹاگون کے ترجمان وائس ایڈمرل بل گورٹنی نے اس دعوے کو مکمل طور پر مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ ان کارروائیوں میں کسی شہری ہلاکت کی اطلاع نہیں ہے۔ لیبیا پر حملوں کے بعد معمر قذافی نے شدید نوعیت کی جوابی کارروائی کا اعلان کرتے ہوئے بحیرہ روم کے علاقے کو میدانِ جنگ میں تبدیل کر دینے کی دھمکی دی تھی۔

فرانس، امریکہ اور برطانیہ کی افواج نے کارروائی کے پہلے مرحلے کو کامیاب قرار دیا ہے۔ امریکی وزیر دفاع

Krieg in Libyen

سلامتی کونسل کی قرارداد پر عمل کرنا اس وقت سب سے ضروری ہے، رابرٹ گیٹس

رابرٹ گیٹس نے کہا ہے کہ یہ خبریں بے بنیاد ہیں کہ اتحادی فوجیں معمر قذافی کو قتل کرنا چاہتی ہیں۔ ’’میرے خیال میں اس وقت یہ ضروری ہے کہ سلامتی کونسل کی قرارداد کا احترام کرتے ہوئے قانون کے دائرے میں رہا جائے‘‘۔ انہوں نے کہا کہ آپریشن کو توسیع دینے کی صورت میں مسائل پیدا ہوں گے۔ گیٹس کے بقول قذافی کو براہ راست نشانہ بنانا کوئی عقلمندانہ فیصلہ نہیں ہو گا۔

دوسری جانب اتحادی افواج کی ایک کارروائی میں معمر قذافی کی رہائش گاہ کا ایک حصہ تباہ ہوگیا ہے۔ قذافی اس عمارت میں اپنے مہمانوں سے ملا کرتے ہیں۔

رپورٹ: عدنان اسحاق

ادارت: شامل شمس

DW.COM