1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

لیبیا: تنازعے کے سفارتی حل کے لیے فرانس کی کوششیں

پیرس میں لیبیا اور فرانس کے حکومتی اہلکاروں کے درمیان لیبیا کے تنازعے کے پر امن حل سے متعلق ایک ملاقات کی اطلاعات ہیں۔

default

قذافی مخالف باغی، فائل فوٹو

کئی ماہ سے جاری نیٹو کے جنگی مشن میں خاطر خواہ نتائج سامنے نہ آنے کے بعد تازہ پیشرفت کو سفارتی ذرائع سے معاملے کے حل کی ایک اہم کوشش قرار دیا جا رہا ہے۔ لیبیا کے رہنما معمر قذافی نیٹو کے فضائی حملوں، اقتصادی پابندیوں اور باغیوں کی مزاحمتی تحریک کے باوجود اقتدر پر براجمان ہیں۔ لیبیا کے وزیر اعظم بغدادی المحمودی نے ایک فرانسیسی اخبار کو دیے گئے انٹریو میں کہا ہے کہ حکومت باغیوں اور فرانسیسی حکومت سے غیر مشروط مذاکرات کے لیے تیار ہے۔ انہوں نے امریکہ کی جانب اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ فرانس کے ’آمر صلاح کار‘ کو اس میں مداخلت نہیں کرنی چاہیے۔

البغدادی کا یہ انٹرویو فرانسیسی اخبار لا فیگارو میں چپھا ہے، جس کے نمائندے نے اُن سے یہ انٹرویو طرابلس میں کیا تھا۔ اگرچہ لیبیا کے وزیر اعظم نے مذاکرات کے آغاز کے لیے کوئی ٹھوس شرط عائد نہیں کی تاہم یہ ضرور کہا کہ لیبیا کے شہروں پر نیٹو کی بمباری رکنی چاہیے۔ دوسری جانب نیٹو کے ترجمان نے واضح کیا ہے کہ اگر قذافی کی فورسز نے کارروائیاں ترک نہیں کیں تو اگست میں ماہ رمضان کے دوران بھی بمباری کا سلسلہ جاری رہے گا۔

Libyen / Gaddafi / Tripolis

معمر قذافی گزشتہ 41 برس سے حکمرانی کر رہے ہیں

فرانسیسی پارلیمان اور سینیٹ نے گزشتہ روز ہی لیبیا مشن میں توسیع کے حق میں رائے دی۔ فرانسیسی وزیر اعظم فرانسواں فیئوں نے پارلیمان کو بتایا کہ لیبیا کے مسئلے کا سیاسی حل پہلے سے زیادہ اہم ہوگیا ہے اور اب ایک شکل میں ڈھلنا شروع ہوگیا ہے۔ دوسری طرف لیبیا میں باغیوں کی نمائندہ تنظیم نیشنل ٹرانزیشنل کونسل کے ترجمان محمود شمام نے خبر رساں ادارے اے ایف پی کو بتایا، ’’ انقلابی محض سنجیدہ اقدامات پر ردعمل ظاہر کریں گے، جو قذافی اور اس کے بیٹوں کے اقتدار سے علیٰحدگی سے متعلق ہوں۔‘‘

واضح رہے کہ فرانس کا اب سے پہلے تک موقف رہا تھا کہ قذافی کو اقتدار چھوڑنے پر مجبور کرنے کے لیے فوجی کارروائی چلتی رہے گی۔ اب پیرس حکومت مذاکرات کے لیے تیار نظر آرہی ہے۔ روس اور ترکی بھی لیبیا کے تنازعے کے سفارتی حل کی ضرورت کو اجاگر کر چکے ہیں۔ امریکی صدر باراک اوباما نے اپنے روسی ہم منصب دیمتری میدویدیف کو یقین دلایا ہے کہ اگر قذافی اقتدار سے علیٰحدہ ہوجائیں تو واشنگٹن لیبیا کے معاملے کے سفارتی حل کے لیے ماسکو کی کوششوں کی حمایت کرے گا۔

رپورٹ: شادی خان سیف

ادارت: عدنان اسحاق