1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

لندن میں G20 سربراہی کانفرنس کامیاب رہی

جمعرات کے روز لندن منعقدہ G20 سمٹ کے اختتام پر فرانسیسی صدرنکولا سارکوزی اور جرمن چانسلر اینگلا میرکل نے اطمینان ظاہر کرتے ہوئے اس عالمی مالیاتی سربراہی کانفرنس کو ایک کامیاب اجلاس قرار دیا۔

default

جی بیس کے موقع پر عالمی رہنماؤں کا ایک گروپ فوٹو

سارکوزی نے کہا کہ عالمی مالیاتی نظام میں اصلاحات اس بحران کے حل کے لئے ایک بڑا قدم ہے۔ جرمن چانسلر اینگلا میرکل نے عالمی مالیاتی بحران سے نمٹنے کے لئے G20 سمٹ کو ایک تاریخی سمجھوتہ قرار دیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس سمٹ میں جن اقتصادی اور مالیاتی اقدمات پر اتفاق رائے ہوا ہے اس سے مالیاتی نظام میں شفافیت پیدا ہو گی۔

G20 Demonstrationen London

جی بیس کے خلاف جرمنی میں ایک مظاہرے کا منظر

اس سمٹ میں عالمی رہنماؤں نے مالیاتی بحران کا شکار عالمی معیشت میں تحریک پیدا کرنے کے لئے عالمی مالیاتی ادارے آئی ایم ایف جیسےعالمی مالیاتی اداروں کو ایک ٹریلین ڈالرمہیا کرنے کا عہد کیا ہے۔

G20 سمٹ کے اختتام پر گورڈن براون نے ایک پریس کانفرنس میں اعلان کیا کہ عالمی مالیاتی بحران سے متاثرہ ممالک کی مدد کے لئے آئی ایم ایف کو اضافی طور پانچ سو بلین ڈالر دئے جائیں گے جبکہ ڈھائی سو بلین ڈالر کے ڈرائینگ رائٹس دئے جائیں گے اور ڈھائی سو بلین ڈالر ہی کی رقم عالمی تجارت میں تیزی کے لئے مختص کی جائے گی۔

انہوں نے کہا کہ آج جن فیصلوں پر اتفاق ہوا ہے اس سے فوری طور پر بحران کا حل ممکن نہیں ہو سکے گا لیکن ہم نے اس عمل کا آغاز کر دیا ہے جس سے اس بحران پر قابو پایا جا سکتا ہے۔

Merkel zu Besuch in Frankreich

فرانس اور جرمنی نئے اور سخت ضوابط متعارف کروانے پر زور دیتے رہے ہیں

گورڈن براؤن نے اپنی پریس کانفرنس کے دوران سب سے پہلے عالمی مالیاتی اور بینکاری کے نظام میں میں اصلاحات کا تذکرہ کیا۔ انہوں نے کہا عالمی بینکاری کے نظام میں اصلاحات کرنے کی ضرورت ہے تاکہ بین الاقوامی سطح پر مالیاتی اداروں کو شفاف بنایا جائے اور اس نظام کی موثر نگرانی ہو سکے۔

براؤن نے کہا کہ Tax Havens یعنی ان خطوں پر کریک ڈاون کی ضرورت ہے جہاں پرٹیکس چوری کے لئے مواقع مہیا کئے جاتے ہیں۔ براؤن نے کہا کہ G20 نئی ہزاری کے مقاصد کے حصول کے لئے پر عزم ہے اور غریب ممالک کے ساتھ امدادی رقوم کے وعدوں پر بھی عالمی رہنما برقرار ہیں۔

Barack Obama und Gordon Brown in der Downing street in London

امریکہ اور برطانیہ عالمی مالیاتی نظام میں سخت ضوابط سے پہلے عالمی مالیاتی بحران سے مقابلے کے لئے مزید امدادی پیکیج یعنی ملکی سطح پر اخراجات کو بڑھانے پر زور دے رہے تھے

فرانسیسی صدر نکولا سارکوزی نے کہا کہ اس سمٹ کے نتائج ، خیالات سے بھی زیادہ اچھے نکلے ہیں۔

جرمن وزیرخزانہ پئیر شٹائن بروک نے بھی اس سمٹ کے نتائج کی شتائش کرتے ہوئے کہا کہ ملکی سطح پر امدادی پیکیج یعنی اخراجات کو مزید بڑھانے کے لئے پابند نہیں کیا گیا۔

اس سمٹ سے قبل امریکہ اور برطانیہ کی طرف سے پیش کی گئی تجاویز پر جرمن اور فرانسیسی رہنما اپنے تحفظات ظاہر کررہے تھے کیونکہ امریکہ اور برطانیہ عالمی مالیاتی نظام میں سخت ضوابط سے پہلے عالمی مالیاتی بحران سے مقابلے کے لئے مزید امدادی پیکیج یعنی ملکی سطح پر اخراجات کو بڑھانے پر زور دے رہے تھے جبکہ فرانس اور جرمنی نئے اور سخت ضوابط متعارف کروانے پر بضد تھے۔

دوسری طرف اس سمٹ کے دوران اقتصادی عالمگیریت کے مخالف ہزاروں افراد اپنے شدید مظاہرے بھی جاری رکھے ہوئے ہیں جن کے دوران پولیس اب تک نوے کے قریب پر تشدد مظاہرین کو گرفتار کر چکی ہے اور ایک شخص کی تو کل بدھ کے روز موت بھی واقع ہو گئی تھی۔

ملتے جلتے مندرجات