1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

لشکر جھنگوی کے پانچ مشتبہ عسکریت پسند ہلاک، سکیورٹی فورسز

سکیورٹی فورسز نے صوبہ بلوچستان میں فرقہ وارانہ حملوں میں ملوث اور داعش سے منسلک لشکر جھنگوی کے پانچ عسکریت پسندوں کو ہلاک کر دیا گیا ہے جبکہ ایک دوسرے واقعے میں دس بلوچ باغیوں کو بھی گرفتار کرنے کا دعویٰ کیا گیا ہے۔

پیراملٹری فورسرز کے ایک ترجمان خان واسع کا نیوز ایجنسی اے ایف پی سے گفتگو کرتے ہوئے کہنا تھا، ’’فرنٹیئر کور نے جنوب مغربی صوبے بلوچستان میں ایک کمپاؤنڈ پر حملہ کیا اور فائرنگ کے تبادلے میں میں پانچ عسکریت پسند مارے گئے ہیں۔‘‘ اس ترجمان کا دعویٰ تھا کہ یہ عسکریت پسند لشکر جھنگوی سے منسلک تھے اور یہ گروپ اس وقت داعش اور القاعدہ کے ساتھ مل کر کام کر رہا ہے۔

صوبائی سیکرٹری داخلہ محمد اکبر حریفال کا اس واقعے کی تصدیق کرتے ہوئے کہنا تھا کہ یہ پشین ڈسٹرکٹ کے ایک گاؤں میں پیش آیا ہے۔ پشین ڈسٹرکٹ صوبائی دارالحکومت کوئٹہ کے شمال میں پینتیس کلومیٹر کی دوری پر واقع ہے۔

لشکر جھگنوی گروپ ماضی میں بلوچستان میں ہونے والے متعدد فرقہ وارانہ اور خون ریز حملوں کی ذمہ داری قبول کر چکا ہے اور حالیہ کچھ عرصے سے اس گروہ کی طرف سے پاکستانی سکیورٹی فورسز پر بھی حملے کیے گئے ہیں۔

علاوہ ازیں  صوبائی وزیر داخلہ سرفراز بگٹی نے اے ایف پی کو بتایا ہے کہ خضدار ڈسٹرکٹ میں دو طرفہ فائرنگ کے بعد دس بلوچ علیحدگی پسندوں کو گرفتار کر لیا گیا ہے۔

معدنیاتی ذخائر سے مالا مال پاکستانی صوبہ بلوچستان میں کئی دہائیوں سے علیحدگی پسند سرگرم ہیں۔ خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق علیحدگی پسند نہ صرف پاکستانی حکومت کی جانب سے قدرتی وسائل کے حوالے سے اس صوبے کو استحصال کا شکار بنائے جانے کا شکوہ کرتے ہیں بلکہ وہ انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں کا بھی الزام عائد کرتے ہیں۔

بلوچستان رقبے کے لحاظ سے پاکستان کا سب سے بڑا جب کہ آبادی کے لحاظ سے سب سے چھوٹا صوبہ ہے۔ یورپی ملک اٹلی کے برابر رقبے کے حامل اس صوبے کی آبادی محض 90 لاکھ ہے۔ اس صوبے کو وسیع خودمختاری دیے جانے کا معاملہ پاکستانی سیاست میں ایک انتہائی نازک موضوع سمجھا جاتا ہے۔

ملتے جلتے مندرجات