1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

لبنان میں بڑھتا سیاسی تناؤ، سعودی اور شامی رہنماؤں کی ملاقات

سعودی اور شامی رہنما لبنان میں سن 2005ء میں قتل ہونے والے وزیراعظم رفیق حریری کے حوالے سے اقوام متحدہ کی تحقیقات کے بعد بڑھتی ہوئی کشیدگی کے تناظر میں آج اتوار کے روز ملاقات کر رہے ہیں۔

default

سعودی فرمانروا شاہ عبداللہ اور شامی صدر بشار الاسد کے درمیان ہونے والی اس ملاقات کو ایرانی صدر محمود احمدی نژاد کے دو روزہ دورہ لبنان کے دوران شیعہ عسکریت پسند تنظیم حزب اللہ کی بھرپور مدد کا اعلان کرنے کے تناظر میں دیکھا جا رہا ہے۔ شامی صدرسعودی عرب کا یہ دورہ ایک ایسے موقع پر کر رہے ہیں، جب لبنانی وزیراعظم سعد حریری بھی اپنے ایک نجی دوری پر سعودی عرب میں موجود ہیں۔ تاہم لبنان کے حکومتی ترجمان کے مطابق سعد حریری کے اس دورے میں ان کا سعودی فرمانروا سے ملنا شامل نہیں ہے۔

Libanon Beirut Saad Hariri Iran Mahmud Ahmadinedschad

ایرانی صدر احمدی نژاد لبنانی وزیراعثم سعد حریری کے ہمراہ

مبصرین کے مطابق بشار الاسد اور شاہ عبداللہ کے درمیان ملاقات میں لبنان کے موجودہ وزیراعظم سعد حریری اور مخالف مذہبی سیاسی جماعت حزب اللہ کے درمیان اقوام متحدہ کی تحقیقات کے پیدا ہو جانے والے شدید تناؤ کے موضوع کو مرکزی حیثیت حاصل ہے۔ رپورٹوں کے مطابق اس تفتیش میں رفیق حریری کے قتل میں حزب اللہ سے وابستہ متعدد افراد کے نام سامنے آ سکتے ہیں، جب کہ سعد حریری اپنے والد کے قتل میں حزب اللہ کے مبینہ طور پر ملوث ہونے کے باعث شدید غم و غصے میں ہیں۔

دونوں رہنماؤں کے درمیان ملاقات میں عراق میں حکومت سازی کے راستے میں حائل مشکلات کو بھی اہم حیثیت حاصل ہے۔ مارچ میں عراق میں منعقد ہونے والے عام انتخابات میں کسی جماعت کو واضح اکثریت حاصل نہ ہونےکے باعث وہاں سیاسی طور پر ایک ڈیڈ لاک پیدا ہو چکا ہے، اور کئی ماہ گزرنےکے باوجود کوئی جماعت بھی وہاں حکومت سازی میں کامیاب نہیں ہو پائی ہے۔خلیج کے سیاسی امور پر نگاہ رکھنے والے ایک سکیورٹی مبصر مصطفیٰ عالانی کے مطابق اگر حریری مقدمہ بین الاقوامی عدالت میں جاتا ہے اور اس میں حزب اللہ سے وابستہ افراد کے نام سامنے آتے ہیں، تو خطے میں فرقہ وارانہ فسادات کا ایک نیا دور شروع ہو سکتا ہے، جو یقینی طور پر خطے میں سلامتی کے لئے ایک نیا مسئلہ ہو گا۔

رپورٹ : عاطف توقیر

ادارت : عدنان اسحاق

DW.COM