1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

لبنانی بحران کے حل کے لئے قطر میں مذاکرات

عرب لیگ کی مداخلت کے بعد لبنان کے موجودہ سیاسی بحران کے حل کے لئے متحارب دھڑوں کے رہنما خلیجی ریاست قطر میں مذاکرات کررہے ہیں۔

default

ایک نقاب پوش عسکریت پسند لبنانی دارالحکومت بیروت میں پہرہ دیتے ہوئے

ہیہ مذاکرات ایک ایسی فضاء میں ہورہے ہیں جب ابھی حال ہی میں حزب اللہ نے لبنانی دارالحکومت بیروت پر تقریباً مکمل کنٹرول حاصل کرکے‘ امریکہ کی حمایت یافتہ لبنانی مخلوط حکومت کو ایک زبردست دھچکہ دے دیا تھا۔چھہ روز تک جاری رہنے والی ان خون ریزجھڑپوں کے بعد حزب اللہ کے عسکریت پسند واپس اپنی پوزیشنوں پر چلے گئے تھے لیکن تب تک اکیاسی افراد جاں بحق ہوچکے تھے۔

Nahost USA Präsident George Bush in Saudiarabien König Abdullah

سعودی عرب کے دارالحکومت ریاض میں امریکی صدر جارج بُش شاہ عبداللہ کے ہمراہ

عرب لیگ کی مداخلت کے نتیجے میں اب فریقین مذاکرات پر آمادہ ہوگئے ہیں۔حکومت اور حزب اللہ‘ دونوں ہی لچک دار موقف اختیار کرنے پر بھی راضی ہیں۔

وفاقی جرمن حکومت نے لبنانی حکومت اور حز ب اللہ کی طرف سے قطر مذاکرات پر آمادگی کے اعلان کا خیر مقدم کیا ہے۔جرمنی نے یہ امید ظاہر کی ہے کہ لبنان کے حریف سیاستدان ملک کے موجودہ سیاسی بحران کو مذاکرات کے ذریعے حل کرسکیں گے اور پھر اپنے صدر کا انتخاب بھی کرپائیں گے۔

مغرب کی حامی لبنانی حکومت اور حزب اللہ کے عسکریت پسندوں کے مایبن جھڑپوں اور شدید اختلافات کے باعث گُذشتہ برس نومبر کے مہینے سے ابھی تک لبنان میں صدارتی عہدہ خالی پڑا ہوا ہے۔

Brasilien Deutschland Angela Merkel bei Lula da Silva in Brasilia

جنوبی امریکہ کے دورے پر وفاقی جرمن چانسلر انگیلا میرکل نے لبنان کے بحران کے لئے قطر مذاکرات کی حمایت کی ہے

جنوبی امریکہ کے دورے پر گئی ہوئیں جرمن چانلسر انگیلا میرکل نے خلیجی ریاست قطر میں مذاکرات کو خوش آئیند قرار دیا ہے۔ واشنگٹن حکومت ہمیشہ ہی شام اور ایران پر یہ الزام عائد کرتی ہے کہ یہ ممالک لبنانی حکومت کے خلاف مہم میں حزب اللہ کی بھرپور معاونت کرتے ہیں لیکن یہ دونوں ممالک امریکی الزام کو مسترد کرتے ہیں۔

مشرق وسطیٰ کے دورے پر گئے ہوئے امریکی صدر جارج بُش نے یروشلم میں ایک مرتبہ پھر کہا کہ ان کا ملک حز ب اللہ اور حماس کے خلاف لبنان اور اسرائیل کی حکومتوں کی حمایت جاری رکھے گا۔

Das kleine Rad an der Achse des Bösen

ایران اور شام پر امریکہ کا الزام ہے کہ وہ حزب اللہ کی معاونت کرتے ہیں لیکن محمود احمدی نژاد اور بُشارا لسد اس الزام کو مسترد کرتے ہیں

یہ حقیقت اپنی جگہ ہے کہ حز ب اللہ لبنان میں ایک مضبوط سیاسی قوت ہے اور اس کے علاوہ اسکے پاس زبردست عسکری طاقت بھی ہے۔

Libanon Imad Mughnija Befehlshaber der Hisbollah bei Anschlag in Syrien getötet

حزب اللہ کے ایک سرکردہ کمانڈر عماد مغنیہ

عرب لیگ کی مداخلت کے بعد لبنانی سیاستدان امن مذاکرات پر راضی تو ہوگئے ہیں لیکن قطر مذاکرات نتیجہ خیز ثابت ہوں گے یا نہیں‘ یہ مذاکرات کے بعد ہی معلوم ہوسکے گا!