1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

فن و ثقافت

لاہور کتاب میلہ ختم ، ڈوئچے ویلے کی کامیاب شرکت

پاکستان کے شہر لاہور میں جاری ملک کا سب سے بڑا کتاب میلہ آج پیر کی شام ختم ہو رہا ہے، اس پانچ روزہ کتاب میلے میں پاکستان، برطانیہ، امریکہ، یورپی ریاستوں اور بھارت سمیت کئی ملکو ں کے تاجروں نے 200 کے قریب اسٹال لگائے۔

default

بک فیئر کے دوران وزیراعلیٰ پنجاب شہباز شریف نے بھی ڈوئچے ویلے کے اسٹال کا دورہ کیا

لاہور انٹرنیشنل بک فیئر ٹرسٹ کے زیر اہتمام ہونے والے اس کتاب میلے میں ڈوئچے ویلے کا اسٹال بھی پورا عرصہ لوگوں کی بھر پور توجہ کا مرکز بنا رہا۔اس میلے کے منتظمین کے مطابق امسالہ کتاب میلے میں چار لاکھ سے زائد افراد شریک ہوئے۔ کتابوں سے پیارکرنے والے بہت سے لوگ صوبے کے دور دراز علاقوں سے بھی خصوصی طور پر اس میلے میں شرکت کرنے کے لیے آئےتھے۔

بہاولنگر سے آئے ہوئے شاہد نامی ایک مہمان نے بتایا کہ وہ خاص طور پر اس میلے میں شرکت کے لیے اپنے بچوں کے ساتھ یہاں آیا ہے اور اسے کتابیں خرید کر بڑی خوشی ہوئی ہے۔ اس میلے میں پنجاب کے وزیراعلیٰ، گورنر، یونیورسٹیوں کے وائس چانسلرز، اساتذہ اور طلبہ کے علاوہ نامور ادیب، صحافی، دانشوراور عام لوگ بھی بڑی تعداد میں شریک ہوئے۔

Pakistan Lahore International Book Fair 2011

میلے کے آخری دن کئی پبلشرز نے کتابوں کے قیمتیں مزید کم کر دی ہیں۔ فیصل آباد سے آئی ہوئی ایک خاتون ذکیہ بیگم نے اس کتاب میلے کے انعقاد کو سراہتے ہوئے بتایا،’’ اس طر ح کے کتاب میلے سے کتب بینی کے رجحان کو فروغ ملتا ہے اور لوگوں کو کتابوں کی سستے داموں خریداری کا موقع بھی ملتا ہے۔‘‘

کتاب میلے میں ڈوئچے ویلے کے اسٹال پر بھی لوگوں کا بہت رش لگا رہا۔ اس اسٹال پر ڈوئچے ویلے کی اردو ویب سائٹ کے حوالے سے شرکاء کو معلومات فراہم کی جاتی رہیں۔ ملک کے کئی حصو ں سے ڈوئچے ویلے کی اردو نشریات کے سامعین اور ویب سائٹ کے قارئین کے علاوہ مختلف لسنرز کلبوں کے عہدے داران بھی ڈوئچے ویلےکا سٹال دیکھنے کے لیے خاص طور یہاں پہنچے تھے۔ اس موقع پر ڈوئچے ویلے کے سامعین کے ساتھ ایک خصوصی نشست کا انعقاد بھی کیا گیا۔

Pakistan Lahore International Book Fair 2011

میلے کے آخری دن کئی پبلشرز نے کتابوں کے قیمتیں مزید کم کر دی ہیں

ڈوئچے ویلےکی نشریات باقاعدگی سے سننے والے پاکستان رینجرز کے ایک جوان بلال بھٹہ نے بتایاکہ انہیں ڈوئچے ویلے کا اسٹال دیکھ کر خوشی ہوئی ہے کیونکہ اس سے لوگوں کو ڈوئچے ویلے کی اردو نشریات ، ویب سائٹ اور ڈوئچے ویلے اردو کے فیس بک پیج کے حوالے سے اچھی معلومات مل رہی ہیں۔

میلے میں آئی ایک جرمن خاتون نے ڈوئچے ویلے کے اسٹال کو دیکھ کر خوشگوار حیرت کا اظہار کیا۔ ڈوئچے ویلے کے سٹال پر آنے والوں میں ایک سات سالہ پاکستانی بچہ بھی شامل تھا، جس نے اپنے ذاتی شوق سے جرمن زبان میں گنتی بھی یاد کر رکھی تھی۔ ایک اور چھوٹے سے معصوم بچے کی خواہش تھی کہ اس کا گایا ہوا حمدیہ کلام ڈوئچے ویلےکے پروگرام میں جگہ پا سکے۔

مبصرین کا کہنا ہے کہ اس طرح کے کتاب میلےپاکستانی لوگوں کے شعور اور آگہی میں اضافے کے لیے اہم کردار ادا کر سکتے ہیں۔

رپورٹ: تنویر شہزاد، لاہور

ادارت: عصمت جبیں

DW.COM

ویب لنکس