1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

کھیل

لارڈز ٹیسٹ: آسٹریلیا کو 205 رنز کی برتری

پاکستانی بلے بازوں نے لارڈز ٹیسٹ میں اپنے بولرز کی شاندار کارکردگی کو اپنی ناقص پرفارمنس سے پس منظر میں ڈال دیا ہے۔ آسٹریلیا نے اپنی دوسری اننگز میں چار وکٹوں کے نقصان پر 100رنز بنا کر 205 رنز کی برتری حاصل کر لی ہے۔

default

آسٹریلیا کے نائب کپتان مائیکل کلارک

دوسرے دن کے کھیل کے اختتام پر افتتاحی بیٹسمین سائمن کیٹچ 49 جبکہ نائٹ واچ مین مچل جانس دو رنز کے ساتھ کریز پر ناٹ آوٴٹ تھے۔

Simon Katich 2000

آسٹریلوی اوپنر سائمن کیٹچ نے لارڈز ٹیسٹ کی دونوں ہی اننگز میں پاکستان کو پریشان کر کے رکھا

دوسری اننگز میں باصلاحیت پاکستانی بولرعمر گل نے ایک ہی اوور کی مسلسل دو گیندوں پر مائیکل کلارک اور مائک ہَسی جیسے خطرناک بلے بازوں کو پویلین کی راہ دکھائی تاہم وہ ہیٹ ٹرک کرنے میں کامیاب نہ ہو سکے۔

پاکستانی گیند بازوں نے لارڈز کے میدان پر مضبوط آسٹریلوی ٹیم کو پہلی اننگز میں 253 رنز پر ڈھیر کردیا تھا لیکن اس معمولی سکور کا فائدہ اٹھانے کے بجائے جواب میں پاکستانی ٹیم 148 کے شرمناک سکور پر آل آؤٹ ہو گئی۔ آسٹریلوی آل راؤنڈر شین واٹسن نے پانچ وکٹیں حاصل کیں، جو ان کے ٹیسٹ کیریئر میں اب تک کی بہترین کارکردگی ہے۔

پاکستان کی طرف سے سلمان بٹ ہی واحد ایسے بیٹسمین نظر آئے، جن کے پاس ٹیسٹ میچ کھیلنے کی صحیح تکنیک ہو۔ اوپنر سلمان بٹ 63 جبکہ کپتان شاہد آفریدی 31 رنز بنا کر ٹیم کے لئے نمایاں سکورر رہے۔

Pakistan Sri Lanka Cricket Salman Butt

سلمان بٹ نے پہلی اننگز میں نصف سنچری سکور کی

انتہائی ناتجربہ کار مڈل آرڈر نے پاکستان کی مشکلات میں بے پناہ اضافہ کیا۔ اپنا پہلا ٹیسٹ میچ کھیلنے والے اظہر علی اور عمر امین سلیکٹرز کو متاثر نہیں کر سکے اور دونوں آسٹریلیا کی سوئنگ بولنگ کے سامنے انتہائی بے بس نظر آئے۔

لارڈز ٹیسٹ میچ کا دوسرا دن بولرز کے لئے انتہائی مدد گار ثابت ہوا۔ ایک ہی دن میں کل پندرہ وکٹیں گریں۔

Pakistanischer Cricketspieler Wasim Akram

سابق کپتان وسیم اکرم فاسٹ بولر عمر گُل کو سوینگ بولنگ ٹپس دیتے ہوئے

پہلی اننگز میں آسٹریلیا کی جانب سے اوپنر سائمن کیٹچ نے 80، مائک ہَسی نے 56 اور مائیکل کلارک نے 47 رنز بنائے تھے۔ پاکستان کی طرف سے محمد عامر نے چار، محمد آصف نے تین، لیگ سپنر دانش کنیریا نے دو جبکہ عمر گل نے ایک وکٹ حاصل کی تھی۔

انگلینڈ میں جاری دو ٹیسٹ میچوں کی یہ سیریز پاکستان کے لئے ’نیوٹرل وینیو‘ پر ہوم سیریز ہے کیونکہ پاکستان میں سکیورٹی کے نامساعد حالات کے باعث وہاں بین الاقوامی کرکٹ مقابلے منعقد نہیں ہو پا رہے۔

پاکستان نے ٹیسٹ سیریز کے شروع ہونے سے پہلے انگلینڈ میں آسٹریلیا کے خلاف دو میچوں پر مبنی ٹی ٹوئنٹی کرکٹ کی ایک سیریز بھی کھیلی، جس میں اسے دو صفر سے کامیابی حاصل ہوئی لیکن ایسا لگتا ہے کہ ٹیسٹ سیریز کے نتائج اس سے بالکل مختلف ہوں گے۔

رپورٹ: گوہر نذیر گیلانی

ادارت: مقبول ملک

DW.COM