1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

قیمتی پتھر نہیں یہ بارودی مواد تھا

ایک جرمن خاتون اس وقت حادثے سے بال بال بچ گئی، جب اس کی جیکٹ کو آگ لگ گئی۔ ایسا کس طرح ہوا؟ پڑھیے اس رپورٹ میں۔

دریائے ایلب پر چہل قدمی کو جانے والی ایک جرمن خاتون نے وہاں کنارے سے قیمتی پتھر کے شبے میں سفید فاسفورس کا ایک ٹکڑا اٹھا لیا۔ اکتالیس سالہ اس خاتون کو لگا کہ غالباﹰ یہ  قیمتی پتھر عنبر کا ٹکڑا ہے۔ اسے تب تک معلوم نہ ہوا کہ اس نے کوئی خطرناک چیز اٹھا لی ہے، جب تک اس کے کوٹ کے جیب میں موجود دھماکا خیز مواد فارسفورس کے اس ٹکڑے کا آگ نہ لگی۔

دوسری عالمی جنگ کے دور کا گولہ بارود: شوق، دھماکے، گرفتاری

جرمنی، دوسری عالمی جنگ کا بم کرسمس کے دن ناکارہ بنایا جائے گا

جرمنی میں بم ناکارہ بنانے کی کوشش، کوبلینس شہر میں تاریخی آپریشن

جب یہ حادثہ رونما ہوا، تو وہاں موجود لوگوں نے فوری طور پر فائر بریگیڈ کو بلوا لیا۔ اس واقعے کے بعد جرمن حکام نے دریائے ایلب کی سیر کو جانے والوں کے لیے خصوصی ہدایات جاری کر دی ہیں کہ اگر انہیں عنبر کی طرح کے کوئی پتھر نظر آئیں تو اسے فوری طور پر ہاتھوں سے مت اٹھائیں۔

اس خاتون نے ایک سینٹی میٹر لمبے سفید فارسفورس کے ٹکڑے کو اپنی کوٹ کی جیب میں تو ڈالا لیکن اس کی قسمت اچھی تھی کیونکہ جب اس کوٹ میں آگ لگی تو اس وقت اس نے اس جیکٹ کو پہنا نہیں ہوا تھا۔ دریائے ایلب کے کنارے پڑی، اس جیکٹ میں آتشزدگی کے بارے میں اسے وہاں موجود لوگوں نے باخبر کیا۔

جرمن شہر ویڈل میں فائر بریگیڈ اور متعلقہ عملے نے اس واقعے کے بعد وہاں دریائے ایلب کے کنارے کا مکمل معائنہ کیا لیکن ایسا مزید کوئی عنبر کی شکل کا کوئی ٹکڑا برآمد نہیں ہوا۔ سفید فارسفورس انتہائی خطرناک دھماکا خیز مواد ہے، جس سے جسم بری طرح جھلس سکتا ہے۔ اس سے پیدا ہونے والی آگ یا کیمیکل ردعمل کو پانی سے بھی قابو میں نہیں لایا جا سکتا۔

پولیس نے بتایا ہے کہ سفید فاسفورس کا یہ ٹکڑا جب خشک ہوا تو اس میں کیمیائی ردعمل پیدا ہوا اور اسے آگ لگ گئی۔ پولیس کے مطابق سفید فاسفورس کا یہ ٹکڑا دراصل دوسری عالمی جنگ کے دوران کے کسی بم کا کوئی حصہ تھا۔ یہ امر بھی اہم کہ عالمی جنگ کے زمانے کے ایسے بم یا ان کے حصے اب بھی جرمنی کے مختلف علاقوں سے برآمد ہوتے رہتے ہیں۔

DW.COM