1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

قندہار فوجی کارروائی میں شہری ساتھ دیں ، افغان صدر

افغان صدرحامد کرزئی نے مذہبی اور قبائلی رہنماؤں سے اپیل کی ہے کہ وہ قندہار میں عسکری کارروائی کے لئے اپنی بھرپور حمایت کا اعلان کریں۔

default

اتوار کو کرزئی نےافغانستان میں تعینات مغربی دفاعی اتحاد نیٹو کے اعلیٰ کمانڈر جنرل اسٹینلے میک کرسٹل کے ہمراہ قندہار کے عمائدین اور مقامی لوگوں سے ملاقات کی۔

اس ملاقات میں کزرئی نے مقامی آبادی پر زور دیا کہ جنگ سے تباہ حال اِس علاقے میں استحکام کے لئے وہ امریکی اتحادی افواج کی کارروائیوں میں برابر کا ساتھ دیں۔

حامد کرزئی نے قندہارشوریٰ کے اجلاس کے دوران خطاب کرتے ہوئے کہا:’’اس وقت قندہار میں معیارزندگی انتہائی خراب ہے۔ ہم اس علاقے میں دشمن کا خاتمہ کرنے کے لئے عسکری کارروائی شروع کرنا چاہتے ہیں، اس حوالے سے ہمیں آپ کے تعاون اور حمایت کی ضرورت ہے۔‘‘

NO FLASH Afghanistan Angriff Friedens-Dschirga Kabul Taliban Karzai

افغان صدر حامد کرزئی

اطلاعات کے مطابق اتوار کو منقعدہ اس روایتی شوریٰ اجلاس میں تمام مذہبی اور قبائلی عمائدین نے اپنی بھرپورحمایت و مدد کا یقین دلایا۔

طالبان باغیوں کا گڑھ سمجھے جانے والے صوبہ قندہار میں فوجی آپریشن کو امریکی اتحادی افواج کے لئے ایک کڑی آزمائش قرار دیا جا رہا ہے۔ جیسا کہ کرزئی کے ترجمان وحید قمر نے ذرائع ابلاغ کو بتایا، صدر کرزئی مقامی آبادی کو اس بات کا قائل کرنے کی کوشش کر رہے ہیں کہ وہاں استحکام پیدا کرنے کے عمل کا آغاز کیا جا رہا ہے نہ کہ فوجی آپریشن کا۔

قندہارکے عوام کی حمایت حاصل کرنے کے لئے حامد کرزئی نے کہا ہے کہ قندہار میں فوجی کارروائی کی نگرانی افغان فورسز خود کریں گی اور اس دوران نہ تو ٹینک استعمال کئے جائیں گے اور نہ ہی فضائی کارروائی کی جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ شہری ہلاکتوں سے بچنے کے لئے کوئی بھاری اسلحہ استمعال میں نہیں لایا جائے گا۔

NATO-Treffen in Bratislava

اعلیٰ امریکی فوجی افسر جنرل اسٹینلے میک کرسٹل

خیال رہے کہ نیٹو افواج نے اس علاقے میں طالبان باغیوں کے خلاف اپنی کارروائی شروع کر رکھی ہے۔ اس بات کی توقع ہے کہ آئندہ کچھ ماہ کے دوران اس آپریشن میں تیزی آ سکتی ہے۔ اطلاعات کے مطابق چار ملین آبادی والے قندہار صوبے کی نصف آبادی اس شک میں مبتلا ہے کہ وہاں فوجی کارروائی کے نتیجے میں حالات مزید خراب ہو جائیں گے۔

جنرل میک کرسٹل نے ابھی حال ہی میں کہا تھا کہ قندہار میں کامیاب کارروائی کے لئے مقامی آبادی کا بھرپور ساتھ ضروری ہے۔ انہوں نے کہا تھا کہ وہ طے شدہ منصوبے کے برخلاف، قندہار میں نیٹو کی عسکری کارروائی کی رفتار سست رکھیں گے تاکہ شہری ہلاکتوں سے بچا جائے اور عوامی حمایت حاصل ہو سکے۔

رپورٹ: عاطف بلوچ

ادارت: امجد علی

DW.COM