1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

قندوز میں حملہ: جرمن اَفواج کے سربراہ مستعفی

جرمن وزیر دفاع کارل تھیوڈور سُو گٹن برگ نے آج جرمن پارلیمان میں اِس بات کا اعتراف کیا کہ افغان صوبے قُندوز میں آئل ٹینکرز پر متنازعہ بمباری کے حوالے سے جرمن وزارتِ دفاع کئی اہم معلومات جان بوجھ کر منظرِ عام پر نہیں لائی۔

default

وفاقی جرمن وزیردفاع کارل تھیوڈورسُو گٹن برگ نے کہا کہ اِسی وجہ سے جرمن اَفواج کے سربراہ وولف گانگ شنائیڈر ہان اورایک اوراعلیٰ فوجی عہدیدار کو اُن کے عہدوں سے سبکدوش کر دیا گیا ہے۔

جمعرات کو جرمنی کے سب سے زیادہ پڑھے جانے والے اخبار ’’بِلڈ‘‘ کے پہلے صفحے پر بڑی بڑی شہ سُرخیوں میں یہ بتایا گیا تھا کہ جرمن وزارتِ دفاع کو ستمبر میں افغان صوبے قُندوز میں طالبان کے زیرِ قبضہ آئل ٹینکروں پر فضائی بمباری اور اِس واقعے میں عام شہریوں کی ہلاکت کے بارے میں اہم حقائق کا علم تھا،

Generalinspekteur Wolfgang Schneiderhahn Flash-Galerie

جرمن فوج کے سربراہ نے مستعفی ہونے کا اعلان کیا

تاہم اِن حقائق کو اب تک عوام سے چھپایا گیا۔ اِن شہ سُرخیوں کی بازگشت آج جرمن پارلیمان میں بھی سنی گئی، جہاں افغانستان میں جرمن فوجی مشن میں توسیع سے متعلق عام بحث ہو رہی تھی۔ یہ بحث اُس وقت ہنگامہ خیز شکل اختیار کر گئی، جب وفاقی جرمن وزیر دفاع کارل تھیوڈور سُو گٹن برگ نے یہ اعتراف کیا کہ درحقیقت ایک خفیہ تحقیقاتی رپورٹ تھی، جو وَزارتِ دفاع کا قلمدان سنبھالتے وقت خود اُن سے بھی پوشیدہ رکھی گئی: انہوں نے کیا: ’’جب مَیں نے قُندوز کے واقعے کے بعد جاری کردہ آئی سیف رپورٹ پر اپنا بیان دیا تھا، تب مجھے بِلڈ اخبار میں شائع ہونے والی اِس خفیہ تحقیقاتی رپورٹ کا علم نہیں تھا۔ یہ رپورٹ مجھے کل پہلی مرتبہ دکھائی گئی ہے۔ جرمن اَفواج کے سربراہ نے مجھے درخواست کی ہے کہ اُنہیں اُن کی ذمہ داریوں سے ہٹا دیا جائے، اِسی طرح اسٹیٹ سیکریٹری وِشَرٹ نے بھی ذمہ داری قبول کر لی ہے۔‘‘

Bundesverteidigungsminister Karl-Theodor zu Guttenberg, lEx- Bundesverteidigungsminister Franz Josef Jung

موجودہ اور سابقہ جرمن وزراء دفاع پارلیمان میں

اپنے عہدوں سے رخصت ہونے والے جرمن اَفواج کے سربراہ وولف گانگ شنائیڈرہان اور وَزارتِ دفاع کےایک اسٹیٹ سیکریٹری پیٹر وِشَرٹ نے یہ تسلیم کرلیا کہ درحقیقت فرانس یوزیف یُنگ کی جگہ نئے وزیر دفاع بننے والے کارل تھیوڈورسُو گٹن برگ کواِن حقائق سے بے خبر رکھا گیا تھا اوروہ دونوں اِس کوتاہی کی ذمہ داری قبول کرتے ہیں۔

یہ حملہ چار ستمبر کو ہوا اورچار ستمبر کو ہی افغانستان متعینہ جرمن فوج کی طرف سے برلن میں وَزارتِ دفاع کو یہ بتا دیا گیا تھا کہ مرنے والوں میں ’’واضح طور پر عام شہری بھی‘‘ شامل ہیں اور یہ کہ اِس حملے میں زخمی ہونے والے دَس تا بیس برس کے چھ مریضوں کا علاج کیا جا رہا ہے۔ تاہم چھ ستمبر کو اُس وقت کے وزیر دفاع یُنگ ابھی اِس بیان پر ڈٹے ہوئے تھے کہ غالباً کوئی عام شہری اِس حملے میں ہلاک یا زخمی نہیں ہوئے۔

موجودہ وزیر دفاع سُو گٹن برگ نے اگرچہ یُنگ کو براہِ راست ہدفِ تنقید نہیں بنایا، تاہم اُنہوں نے کہا:’’یہ بات طے ہے کہ اِن رپورٹوں کا فوری طور پر تجزیہ کیا جائے گا اور یہ تمام پارلیمانی احزاب کو فراہم کی جائیں گی۔ یہی میرے خیال میں شفافیت اور اِس طرح کے واقعات کا تقاضا بھی ہے۔ یہی رپورٹ دفترِ استغاثہ کے بھی حوالے کر دی جائے گی۔‘‘

ایسے میں اپوزیشن کی جانب سے بھی فرانس یوزیف یُنگ پر، جو موجودہ مخلوط حکومت میں وزیرِ محنت ہیں، اپنے عہدے سے مستعفی ہونے کے لئے دباؤ بڑھ گیا ہے۔ اپوزیشن جماعتوں نے فوری طور پر ایک پارلیمانی تحقیقاتی کمیٹی کی تشکیل کا مطالبہ کیا ہے۔

رپورٹ: امجد علی

ادارت: مقبول ملک

DW.COM