1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

قطر کو مزید 48 گھنٹے کی مہلت

سعودی عرب اور تین دیگر عرب ریاستوں نے خلیجی ملک قطر کو دیے گئے اپنے مطالبات پر عملدرآمد کی مہلت میں اڑتالیس گھنٹوں کی توسیع کر دی ہے۔ مقامی میڈیا کے مطابق یہ اضافہ کویت کی تجویز کیا گیا ہے۔

جرمن خبر رساں ادارے ڈی پی اے نے مقامی میڈیا کے حوالے سے بتایا ہے کہ سعودی عرب، متحدہ عرب امارات، بحرین اور مصر نے قطر کو دی گئی مہلت میں 48 گھنٹے کی توسیع پر اتفاق کیا ہے۔ کویت نیوز ایجنسی کے مطابق یہ فیصلہ قطر بحران کے حل کی کوششوں میں مصروف خلیجی ریاست کویت کی تجویز پر اتوار دو جون کو رات دیر کیا گیا۔

کویت نے یہ تجویز دی تھی کہ دوحہ حکومت کو تیرہ مطالبات پر عملدرآمد کے لیے دیے گئے اس الٹی میٹم میں اضافہ کیا جائے۔ قبل ازیں ایک ہفتے کی ڈیڈ لائن ختم ہونے پر سعودی ملکیتی ٹیلی وژن نیٹ ورک العربیہ نے کہا تھا قطر کی طرف سے مطالبات پر عملدرآمد نہ کرنے کے سبب سعودی عرب، متحدہ عرب امارات، بحرین اور مصر دوحہ حکومت کے خلاف ممکنہ سیاسی اور معاشی پابندیوں کی فہرست پر غور کر رہے ہیں۔ نئی پابندیوں میں سے ایک ممکنہ پابندی قطر کی چھ ملکی خلیجی تعاون کونسل سے اس کی رُکنیت کا خاتمہ بھی ہو سکتا ہے۔

سعودی عرب، بحرین، متحدہ عرب امارات اور مصر نے کا الزام ہے کہ دوحہ حکومت دہشت گردوں کو مالی تعاون فراہم کرتی ہے تاہم قطر ان الزامات کو مسترد کرتا ہے۔ ان ریاستوں نے قطر سے اپنے تمام تعلقات منقطع کرتے ہوئے قطر کے ساتھ زمینی، فضائی اور سمندری رابطے بھی توڑ لیے تھے۔ سعودی سربراہی میں ان ممالک نے ایک ہفتہ قبل قطر حکومت کو 13 مطالبات پر مبنی ایک فہرست فراہم کی تھی جن پر عملدرآمد کے لیے دوحہ کو ایک ہفتے کا وقت دیا گیا تھا۔

Grenze Katar / Saudi-Arabien (Getty Images/AFP/K. Jaafar)

قطر کی ہمسایہ ریاستوں نے قطر کے ساتھ اپنے تمام تعلقات منقطع کرتے ہوئے قطر کے ساتھ زمینی، فضائی اور سمندری رابطے بھی توڑ لیے تھے

عالمی طاقتیں قطر کے بحران کے حل کی کوشش میں ہیں۔ انہی کوششوں کے سلسلے میں جرمن وزیر خارجہ زیگمار گابریئل آج پیر کے روز سے خلیجی ممالک کا تین روزہ دورہ شروع کر رہے ہیں۔ مقامی میڈیا کے مطابق گابریئل قطری بحران کے حل کی خاطر علاقائی رہنماؤں سے ملاقاتیں کریں گے۔ ان کا پہلا پڑاؤ سعودی عرب ہے،  جس کے بعد وہ متحدہ عرب امارات، کویت اور قطر بھی جائیں گے۔ برلن حکومت کا اصرار ہے کہ خلیجی ممالک کے اس بحران کو پرامن مکالمت کے ساتھ حل کیا جانا چاہیے۔

ویڈیو دیکھیے 02:37

قطر کا بحران: کون کس کے ساتھ ہے؟

Audios and videos on the topic