1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

قطری وزیر خارجہ ماسکو میں، روس کا مکالمت پر زور

قطری وزیر خارجہ شیخ محمد بن عبدالرحمان الثانی جرمنی اور برسلز کے بعد دس جون ہفتے کے روز ماسکو میں تھے، جہاں اُنہوں نے اپنے روسی ہم منصب سیرگئی لاوروف سے ملاقات کی۔ ترکی نے بھی قطری تنازعے کے جلد از جلد حل پر زور دیا ہے۔

Russland Scheich Mohammed bin Abdulrahman bin Jassim Al-Thani und Aussenminister Lawrow (picture alliance/AP/P. Golovkin)

دس جون ہفتہ: ماسکو میں روسی وزیر خارجہ سیرگئی لاوروف اور قطری وزیر خارجہ شیخ محمد بن عبدالرحمان بن جاسم الثانی کے درمیان ملاقات کا ایک منظر

گزشتہ پیر کو سعودی عرب، بحرین، مصر، متحدہ عرب امارات، یمن  اور مالدیپ نے قطر پر یہ الزامات عائد کرتے ہوئے اُس کے ساتھ تعلقات منقطع کر لیے تھے کہ یہ عرب ملک دہشت گردی کی پشت پناہی کر رہا ہے۔ قطر نے ان الزامات کو بے بنیاد قرار دیا تھا اور اپنے وزیر خارجہ کو بیرونی طاقتوں کی حمایت حاصل کرنے کی غرض سے کئی ملکوں کے ایک دورے پر روانہ کر دیا تھا۔

قطری وزیر خارجہ شیخ محمد بن عبدالرحمان الثانی جرمنی اور برسلز سے ہوتے ہوئے دس جون ہفتے کے روز ماسکو پہنچے، جہاں اُنہوں نے روسی وزیر خارجہ سیرگئی لاوروف کے ساتھ ملاقات کی۔ دونوں وزرائے خارجہ کی اس ملاقات کے دوران روس کی جانب سے اس امر پر زور دیا گیا کہ قطر اور اُس کے ہمسایہ عرب ممالک کے درمیان تنازعے کو بات چیت سے حل کیا جانا چاہیے۔

لاوروف نے کہا:’’ہم ایک ایسی صورتِ حال پر خوش نہیں ہو سکتے، جب ہمارے ساتھی ممالک کے درمیان تعلقات خراب تر ہوتے جا رہے ہوں۔ ہم اس حق میں ہیں کہ تمام تر اختلافِ رائے کو مکالمت کے ذریعے دور کیا جائے۔‘‘ انہوں نے یہ بھی کہا کہ روس اس سلسلے میں ہر ممکن تعاون فراہم کرنے کے لیے تیار ہے۔

Wolfenbüttel Bundesaußenminister Sigmar Gabriel trifft den katarischen Außenminister Scheich Mohammed Al Thani (Imago/photothek/T. Koehler)

قطری وزیر خارجہ شیخ محمد بن عبدالرحمان الثانی (بائیں) نو جون کو جرمن وزیر خارجہ زیگمار گابریئل کے ہمراہ

اس موقع پر قطری وزیر خارجہ نے کہا کہ اُن کے اس دورے کا مقصد روس کو اس امر سے آگاہ کرنا ہے کہ قطر کے خلاف کیسے ’غیر قانونی ہتھکنڈے‘ اپنائے جا رہے ہیں:’’اختلافات کو ہمیشہ بات چیت ہی سے دور کیا جاتا ہے اور خلیجی تعاون کونسل اس مقصد کے لیے سب سے موزوں پلیٹ فارم ہے۔‘‘

دوسری جانب یہ تنازعہ جمعے کے روز اُس وقت اور زیادہ شدت اختیار کر گیا جب سعودی عرب نے ’دہشت گردانہ‘ سرگرمیوں میں ملوث اُنسٹھ قطری اداروں اور شخصیات کی، جن میں شاہی خاندان کے ارکان بھی شامل ہیں، ایک پوری فہرست جاری کر دی۔

روس کا اس تنازعے کو مکالمت کے ذریعے حل کرنے کا بیان ایک ایسے وقت پر سامنے آیا ہے، جب قطر کے ہمسایہ ممالک امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے اُس بیان کا خیر مقدم کر رہے ہیں، جس میں یہ کہا گیا ہے کہ قطر ایک طویل عرصے سے دہشت گردی کے لیے مالی وسائل فراہم کرتا چلا آ رہا ہے  اور اُسے اب یہ سلسلہ ختم کر دینا چاہیے۔

Katar nach dem Boykott (picture-alliance/AP Photo/Doha News)

ہمسایہ عرب ممالک کی جانب سے بائیکاٹ کے بعد قطر میں اَشیائے خورد و نوش کی قلت کا خطرہ پیدا ہو گیا ہے

سعودی عرب اور بحرین کی جانب سے قطر پر زور دیا گیا ہے کہ اُسے اپنی پالیسیاں تبدیل کرنا ہوں گی اور دہشت گردی کے خلاف جنگ میں شمولیت اختیار کرنا ہو گی۔ یہ ہمسایہ عرب ممالک قطر پر ایسے عسکریت پسند گروہوں کی مدد کرنے کا الزام عائد کر رہے ہیں، جو اُن کے کٹر حریف ایران کے ساتھ نظریاتی قربت رکھتے ہیں۔

دوسری جانب ترک صدر رجب طیب ایردوآن کے مطابق اُن کے علم میں ایسی کوئی بات نہیں کہ قطر نے ’دہشت گرد‘ تنظیموں کے ساتھ تعاون کیا ہو۔ جمعے کے روز ایردوآن نے کہا کہ اُن کا ملک دوحہ کو ہر ممکن تعاون فراہم کرے گا۔

دس جون ہفتے کے روز ایردوآن نے ترک دارالحکومت انقرہ میں بحرین کے وزیر خارجہ شیخ خالد بن احمد بن محمد الخلیفہ کے ساتھ ملاقات میں اس امر پر زور دیا کہ قطر اور اُس کے ہمسایہ عرب ممالک کے درمیان تنازعے کو ماہِ رمضان کے اختتام تک حل ہو جانا چاہیے۔