1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

قرآن کی بے حرمتی کے واقعے پر پاکستانی وزیرِ اعظم کی جانب سے مذمت

وزیرِ اعظم پاکستان سیّد یوسف رضا گیلانی نے ایک امریکی پادری کے ہاتھوں مسلمانوں کی مقدّس کتاب قرآن کی بے حرمتی اور اس کو نذرِ آتش کیے جانے کے واقعے کی مذمت کی ہے۔

default

دنیا بھر میں مسلمانوں نے اس واقعے پر احتجاج کیا ہے

امریکی ریاست فلوریڈا کے متنازعہ پادری ٹیری جونز کے ہاتھوں گزشتہ ہفتے قرآنِ پاک کو نذر آتش کیے جانے پر دنیا بھر کے مسلمانوں نے احتجاج کیا ہے۔ خود امریکی حکومت کے اعلیٰ عہدیداروں نے بھی اس واقعے پر کڑی تنقید کی ہے۔ پیر کے روز وزیرِ اعظم پاکستان نے کابینہ کے ایک خصوصی اجلاس کے موقع پر اس واقعے کی سرکاری طور پر مذمت کی۔

وزیر مملکت برائے امورِ خارجہ حنا ربّانی کھر کا کہنا ہے کہ یہ کام انتہا پسندوں کا ہے، جن کا مقصد دنیا میں مذاہب کے مابین ہم آہنگی کو زک پہنچانا ہے۔

Jones Koran-Verbrennung NO FLASH

خود امریکہ میں مختلف مذاہب سے تعلق رکھنے والے افراد نے پادری ٹیری جونز کے اقدام کو اشتعال انگیز قرار دیا ہے

اس واقعے کے بعد پاکستان بھر میں احتجاجی مظاہرے کیے گئے، جن کا اہتمام زیادہ تر مذہبی جماعتوں نے کیا۔ واضح رہے کہ یہ جماعتیں پاکستان میں جاری دہشت گردی کے خلاف جنگ اور اس حوالے سے پاکستانی حکومت کے امریکہ سے اتحاد کی سخت مذمت کرتی ہیں۔ اس واقعے پر ان جماعتوں کا موقف ہے کہ یہ مجموعی طور پر امریکہ کے اسلام دشمن جذبات کی عکاسی کرتا ہے۔

تاہم اسلام آباد میں امریکی سفارت خانے نے ایک بیان جاری کیا ہے، جس میں کہا گیا ہے کہ قرآن کی بے حرمتی کا یہ واقعہ کسی ایک شخص یا کسی ایک گروپ کی کارروائی ہے اور یہ اسلام کے بارے میں امریکی عوام کے جذبات کی عکاسی نہیں کرتا ہے۔

پاکستان میں امریکی سفیر کیمرون پی منٹر کا کہنا ہے کہ قرآن کی دانستہ بے حرمتی ایک ’نفرت انگیز اقدام ہے‘۔ ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ امریکہ کسی بھی نوع کی مذہبی عدم برداشت کا قائل نہیں ہے۔

رپورٹ: شامل شمس⁄  خبر رساں ادارے

ادارت: امجد علی

DW.COM