1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

قرآن اور گائے کے گوشت سے متعلق بی جے پی کے دعوے پر تنازعہ

بھارتی ریاست گجرات کی ہندو قوم پسند حکومت کی وہ تشہیری مہم انتہائی متنازعہ ہو گئی ہے جس میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ مسلمانوں کی مقدس کتاب قرآن میں مبینہ طور پر گائے کا گوشت کھانے کی حوصلہ شکنی کی گئی ہے۔

بھارت کی مغربی ریاست گجرات میں احمد آباد سے بدھ نو ستمبر کے روز ملنے والی نیوز ایجنسی اے ایف پی کی رپورٹوں کے مطابق ملک کی ہندو اکثریت کی طرف سے اپنے لیے مقدس جانور گائے کے تحفظ کے لیے کی جانے والی اس تازہ ترین لیکن متنازعہ کوشش کے بعد نہ صرف بھارتی مسلمان شدید ناراض ہیں بلکہ ایک سرکردہ ملسمان رہنما نے مذمت کرتے ہوئے یہ تنبیہ بھی کر دی ہے کہ ایسے دعوے نئی مذہبی بدامنی کی وجہ بن سکتے ہیں۔

ریاست گجرات میں، جہاں موجودہ ملکی وزیر اعظم ماضی میں کئی برسوں تک وزیر اعلٰی رہ چکے ہیں اور اب بھی مودی کی جماعت بھارتیہ جنتا پارٹی یا بی جے پی کی حکومت ہے، ریاستی حکومت نے کئی مقامات پر تشہیر کے لیے ایسے بل بورڈز لگا دیے ہیں، جن میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ قرآن میں ایک آیت کی صورت میں مبینہ طور پر یہ تنبیہ کی گئی ہے کہ گائے کا گوشت کھانے سے بیماریاں لاحق ہو سکتی ہیں۔

اے ایف پی کے مطابق بھارت میں ہندو انتہا پسند گروپ طویل عرصے سے یہ کوششیں کر رہے ہیں کہ گائے کا گوشت کھانے پر پورے ملک میں پابندی عائد کی جانا چاہیے کیونکہ گائے ہندوؤں کے لیے ایک مقدس جانور ہے۔ کھانے کے طور پر گوشت کے لیے گائے کے استعمال کے خلاف کٹر ہندوؤں کی اس مہم میں اس وقت سے خاصی تیزی آ گئی ہے، جب سے گ‍زشتہ برس مئی میں عام انتخابات کے نتیجے میں نئی دہلی میں بی جے پی کی مرکزی حکومت اقتدار میں آئی ہے۔

اسی تناظر میں یہ بات بھی اہم ہے کہ گجرات میں حکومت کی طرف سے جو اشتہاری مہم شروع کی گئی ہے، اس میں ظاہری طور پر مسلمانوں کو اس مہم میں کیے گئے دعووں کا قائل کرنے کے لیے مسلمانوں کی مذہبی علامت قرار دیے جانے والے ہلال اور ستارے کو بھی استعمال کیا گیا ہے۔

اب تک بھارت میں کئی یونین ریاستوں کی طرف سے گائے کے ذبح کیے جانے پر پابندی لگائی جا چکی ہے حالانکہ کئی ماہرین کی رائے میں یہ پابندی ان مسلمانوں اور دیگر مذہبی اقلیتی گروپوں کے خلاف امتیازی فیصلے کے طور پر بھی دیکھی جاتی ہے، جن کے لیے خوراک کے طور پر گائے کا کم قیمت گوشت پروٹین کا واحد ذریعہ تھا۔

گجرات حکومت کی اس تشہیری مہم پر اپنے سخت ردعمل کا اظہارکرتے ہوئے احمد آباد کی مرکزی جامع مسجد کے ایک مذہبی رہنما شبیر عالم نے کہا کہ حکومتی تشہیری مہم اس لیے اسلام کی توہین کے مترادف ہے کہ قرآن میں ایسی کوئی آیت موجود ہی نہیں جو مسلمانوں کو گائے کا گوشت کھانے کے خلاف تنبیہ کرتی ہو۔

انہوں نے کہا، ’’ایسے بل بورڈز اور ہورڈنگز بدامنی کی وجہ بن کر امن عامہ کو نقصان پہنچا سکتے ہیں اور یہ بات ہندوؤں اور مسلمانوں دونوں کے آپس میں تعلقات کو بری طرح متاثر کر سکتی ہے۔‘‘

An der Grenze zwischen Indien und Bangladesch

ہندو گائے کو مقدس سمجھتے ہیں

شبیر عالم نے مزید کہا کہ کوئی بھی ایسی بات جو اسلام میں یا قرآن میں نہ کہی گئی ہو اور اس کی کسی نام نہاد قرآنی آیت کا حوالہ دے کر جھوٹ پر مبنی تشہیر کی جائے، تو اسے اسلام کی توہین کے سوا کوئی دوسرا نام نہیں دیا جا سکتا۔ انہوں نے کہا، ’’ہم گجرات کی حکومت کے اس اقدام کی سختی سے مذمت کرتے ہیں۔‘‘

اسی دوران گجرات کی صوبائی حکومت کے ’گائے کے تحفظ کے بورڈ‘ کے سربراہ ولبھ کاتھیریا نے اس تشہیری مہم کا دفاع کرتے ہوئے کہا ہے کہ ریاست کے مرکزی شہر احمد آباد اور اس کے گرد و نواح میں جو بل بورڈ لگائے گئے ہیں، ان میں ’اسلامی اور دیگر مذہبی رہنماؤں کا حوالہ‘ دیا گیا ہے۔

گجرات بھارت کی ایک ایسی ریاست ہے، جہاں ہندو مسلم فسادات کی ایک باقاعدہ تاریخ موجود ہے۔ وہاں نریندر مودی کی وزارت عظمٰی کے دور میں 2002ء میں ہونے والے مذہبی فسادات میں کم از کم ایک ہزار افراد مارے گئے تھے، جن میں اکثریت مسلمانوں کی تھی۔

بھارت کی مغربی ریاست مہاراشٹر میں تو گائے کے گوشت کے بارے میں علاقائی قوانین اسی سال اتنے سخت کر دیے گئے تھے کہ وہاں گائے کے گوشت کا کسی شخص کے قبضے میں ہونا بھی ایک قابل سزا جرم ہے۔