1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

فیس بک سے نفرت انگیز مواد خود کار طریقے سے ختم کرنے کا عزم

فیس بک کے بانی مارک سوکر برگ نے کہا ہے کہ مستقبل میں دنیا کے سب سے بڑے سوشل میڈیا نیٹ ورک فیس بک پر نفرت انگیز مواد والی پوسٹیں خود کار طریقے سے ختم کر دی جایا کریں گی۔ اس مقصد کے لیے نئی ٹیکنالوجی پر کام جاری ہے۔

جرمنی کے دارالحکومت برلن کے ٹاؤن ہال میں تقریر کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا، ’’فیس بک پر نفرت انگیز تقریروں کے لیے کوئی جگہ نہیں ہے اور ہم ابھی تک اس سلسلے میں کچھ زیادہ نہیں کر پائے ہیں۔‘‘

فیس بک کے سربراہ مارک سوکر برگ دو روزہ دورے پر جرمنی میں ہیں اور ان کے اس دورے کا مقصد اس ملک میں فیس بک پر بڑھتی ہوئی تنقید کو کم کرنا ہے۔ جرمنی کے متعدد حلقے فیس بک پر مہاجرین کے خلاف نفرت انگیز مواد شائع کیے جانے اور اس مواد کے نہ ہٹائے جانے پر فیس بک انتظامیہ سے نالاں ہیں۔

سوکر برگ کا ان حقائق کو تسلیم کرتے ہوئے کہنا تھا کہ ان سے اس معاملے میں تاخیر ہوئی ہے اور یہ کہ اب انہوں نے جرمنی میں ایسے فیس بک ملازمین کی تعداد میں اضافہ کر دیا ہے، جو پوسٹ کیے جانے والے مواد کا گہری نظر سے جائزہ لیتے ہیں۔

Deutschland Townhall Q&A mit Mark Zuckerberg in Berlin

سوکر برگ کے مطابق وہ اس بات سے بخوبی آگاہ ہیں کہ جرمنی میں مہاجرین کے تناظر میں نفرت انگزیز پیغامات کا مسئلہ کس قدر حساس نوعیت کا ہے

سوکر برگ کے مطابق وہ اس بات سے بخوبی آگاہ ہیں کہ جرمنی میں مہاجرین کے تناظر میں نفرت انگزیز پیغامات کا مسئلہ کس قدر حساس نوعیت کا ہے۔ فیس بک کے اکتیس سالہ سربراہ کا ہال میں موجود تقریباﹰ چودہ سو افراد سے خطاب کرتے ہوئے کہنا تھا، ’’پیغام ہم تک پہنچ چکا ہے اور ہم اسے بہتر بنانے کی منصوبہ بندی کر رہے ہیں۔‘‘

سوکر برگ نے امریکا سے مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ مہاجرین کے معاملے میں اسے یورپ کی سب سے بڑی معیشت جرمنی کی تقلید کرنی چاہیے، جو اب تک تقریباﹰ گیارہ لاکھ تارکین وطن کو ملک میں داخلے کی اجازت دے چکا ہے۔ ان کا کہنا تھا، ’’مہاجرین کے مسئلے پر جرمن لیڈر شپ نے قائدانہ کردار ادا کیا ہے اور باقی دنیا کو بھی اس کی پیروی کرنی چاہیے۔‘‘

فیس بک کے بانی نے یہ اعلان بھی کیا کہ ان کے ادارے نے یورپ کے ان تحقیقی مراکز کو گیارہ لاکھ یورو کی امداد فراہم کی ہے، جو مصنوعی ذہانت پر تحقیق کر رہے ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ ایسی مشینیں تیار کرنے سے ، جو انسانی رویوں کو سمجھ سکیں، انسانی کارکردگی میں اضافہ ہو گا۔

ان کا کہنا تھا کہ ایسے نظام تیار کیے جا رہے ہیں، جن سے نفرت انگیز مواد کی خودکار طریقے سے شناخت کر لی جایا کرے گی۔

اس دوران انہوں نے فیس بک کے لائیو ویڈیوز سے متعلق منصوبوں پر بھی اظہار خیال کیا۔ ان کا کہنا تھا کہ دس برس پہلے تک انٹرنیٹ پر کمیونیکیشن کا سب سے بڑا ذریعہ ٹیکسٹ میسجز تھے لیکن مستقبل میں کمیونیکیشن صرف ویڈیوز کے ذریعے ہوا کرے گی۔