1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

فورٹ ہڈ فائرنگ :ندال ملک حسن پرنئی فردجرم عائد

امریکی ریاست ٹیکساس کے ایک اہم اور بڑے فوجی اڈے فورٹ ہڈ میں فائرنگ کر کے تیرہ افراد کے قتل میں ملوث میجر ندال ملک حسن پر مزید بتیس افراد کو ہلاک کر نے کی کوشش کی بھی فرد جرم عائد کردی گئی ہے۔

default

امریکی فوج کے پروسیکیوٹرز نے امریکی ریاست ٹیکساس کے اہم فوجی مرکز فورٹ ہڈ میں تیرہ افراد کے قتل کے مبینہ ملزم میجر ندال ملک حسن پر بتیس زخمی افراد کے حوالے سے اقدام قتل کا بھی فرد جرم عائد کردیا ہے۔ پانچ نومبر کو امریکی فوجی بیس فورٹ ہُڈ ٹکساس میں میجر ندال ملک حسن کی اندھا دھند فائرنگ تیرہ افراد کی ہلاکت کا باعث بنی تھی جبکہ اس واقع میں تیس فوجی اور دو پولیس اہلکار شدید زخمی ہوئے تھے۔

میجر ندال ملک حسن کو امریکی ریاست ٹیکساس کے ایک اور شہر سان انتونیو کے ایک فوجی ہسپتال میں انتہائی نگہداشت میں رکھا گیا ہے۔ جوابی فائرنگ سے میجر ندال ملک حسن کا نچلا دھڑ خاصا زخمی ہوچکا ہے اور وہ تقریباً مفلوج ہیں۔ پہلی عدالتی کارروائی بھی اِسی ہسپتال کے اُس کمرے میں کی گئی تھی جہاں میجر حسن کو فوجی نگرانی میں رکھا گیا ہے۔ تازہ فرد جرم کی نقل زخمی میجر حسن کو فراہم کی جا چکی ہے۔ ابھی تک یہ پورے طور پر واضح نہیں ہے کہ امریکی فوج کا استغاثہ عدالت میں میجر ندال ملک حسن کے لئے موت کی سزا تجویز کرنے کا ارادہ رکھتا ہے یا نہیں لیکن کافی زیادہ امکانات ہیں کہ فوجی عدالت میں دوران مقدمہ موت کی سزا کے حق میں ہی دلائل دیئے جائیں گے۔

Amoklauf auf Militärbasis Ford Hood USA

میجر حسن کے بارے میں مصروف تفتیش کار

دوسری جانب شوٹنگ کے اِس واقعہ میں ملوث امریکی فوج کے مسلمان فوجی ڈاکٹر کے غیر فوجی وکیل جان گیلی گن نے امریکی خبر رساں ادارے ایسوسی ایٹڈ پریس کو ٹیلی فون پر بتایا کہ فوجی عدالت کو فیصلہ کرتے ہوئے اُن کے مؤکل کی ذہنی حالت کو ملوظ خاطر رکھنا ہو گا کیونکہ ان پر لگے الزامات اُن کے فوجی کیریئر اور روزمرہ زندگی میں ان کے رویے کا تضاد لگتے ہیں۔ جان گیلی گن کا یہ بھی کہنا ہے کہ میجر حسن اپنے اوپر لگائے گئے الزامات کی صحت سے انکار کرتے ہوئے دماغی عارضے میں مبتلا ہونے کو بطور دفاع استعمال کر سکتے ہیں۔ تازہ فرد جرم پر تبصرہ کرتے ہوئے میجر ندال ملک حسن کے وکیل کا مزید کہنا ہے کہ یہ اُس صورت میں بے معنی ہے اگر ان کے مؤکل کو عدالت کی جانب سے تیرہ افراد کو ہلاک کرنے کی جرم پر موت کی سزا سنا دی جاتی ہے۔

میجر ندال ملک حسن کے خلاف انکوائری کے عمل میں تفتیش کار سن دو ہزار دو میں اُن کے مسلمان عالم انور العلاقی کے ساتھ رابطوں کی ایک بار پھر جانچ پڑتال کر رہے ہیں۔ یہ تفتیشی عمل امریکی ریاست کولو راڈو کے شہر فورٹ کولنز میں جاری ہے۔ نیو میکسیکو سے تعلق رکھنے والے انور العلاقی سن دو ہزار دو میں کولوراڈو سٹیٹ یونی ورسٹی میں طالب علم تھے اور بعد میں وہ یمن منتقل ہو گئے تھے۔ بعض اخباری رپورٹوں کے مطابق شعلہ بیان عالم دین آج کل یمن میں قدرے روپوشی کی زندگی گزار رہے ہیں لیکن میجر حسن اور انور العلاقی کے درمیان ای میل پر رابطے کی تصدیق ہو چکی ہے۔

رپورٹ: عابد حسین

ادارت: کشور مصطفیٰ