فوجی مشقوں سے مسلم ممالک میں عسکری تعاون بہتر ہو گا، سعودی عرب | حالات حاضرہ | DW | 22.02.2016
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

فوجی مشقوں سے مسلم ممالک میں عسکری تعاون بہتر ہو گا، سعودی عرب

ریاض حکومت نے کہا ہے کہ مشرقی وسطیٰ میں جاری فوجی مشقوں سے مسلم ممالک کے مابین عسکری تعاون میں بہتری پیدا ہو گی۔ چودہ فروری سے دس مارچ تک جاری رہنے والی ان فوجی مشقوں میں پاکستان سمیت بیس ممالک کی افواج شریک ہیں۔

Symbolbild Kampfflugzeuge von Saudi Arabien

ان مشقوں میں پاکستان سمیت بیس ممالک سے تعلق رکھنے والے ڈیرھ لاکھ فوجی حصہ ہیں

تھنڈر آف دی نارتھ نامی ان مشقوں کو مشرق وسطیٰ میں اب تک کی سب سے بڑی وار گیمز قرار دیا جا رہا ہے۔ خلیجی عرب ممالک کے علاوہ پاکستان، مصر، مراکش، بنگلہ دیش، اردن، سوڈان اور سنیگال کی افواج بھی ان مشقوں میں شریک ہیں۔

DW.COM

مجموعی طور پر ڈیرھ لاکھ فوجی ان مشقوں کا حصہ ہیں۔ ان عسکری مشقوں میں بحری، بری اور فضائی افواج حصہ لے رہی ہیں۔

سیاسی ناقدین کے مطابق سعودی عرب مشرقی وسطیٰ میں جاری تنازعات میں ایک نیا عسکری اتحاد بنانے کی کوشش میں ہے جب کہ ریاض حکومت کو یوں خطے میں ایران کے اثرورسوخ سے نمٹنے میں بھی مدد ملے گی۔

سعودی عرب کی کابینہ کی طرف سے جاری ہونے والے ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ اس طرح کے مشترکہ تعاون سے مسلم ممالک کے مابین عسکری تعاون بہتر ہو گا اور موجودہ دور کے چینلجز سے نمٹنے میں مدد ملے گی۔

سعودی حکام نے ان مشقوں میں شریک ممالک کی افواج کی تیاری اور عزم کی بھی تعریف کی ہے۔ شیعہ ملک ایران اور عالمی طاقتوں کے مابین حالیہ جوہری ڈیل کی وجہ سے سنی ملک سعودی عرب کو ایسے تحفظات لاحق ہیں کہ ایران علاقائی سطح پر اپنا اثرورسوخ پھیلا سکتا ہے۔

اس ضمن میں شامی خانہ جنگی اور یمن میں جاری بحران ریاض حکومت کے لیے پریشانی کا باعث بھی ہیں۔ ایران نہ صرف شامی صدر بشار الاسد کی حمایت کرتا ہے بلکہ وہ یمن میں حوثی باغیوں کو بھی معاونت فراہم کر رہا ہے۔

دوسری طرف سعودی عرب شامی باغیوں کا حامی ہے اور یمن میں سعودی نواز منصور ہادی کی حکومت کو مضبوط کرنا چاہتا ہے۔

Streitkräfte von den Vereinigten Arabischen Emiraten

تھنڈر آف دی نارتھ نامی ان مشقوں کو مشرق وسطیٰ میں اب تک کی سب سے بڑی وار گیمز قرار دیا جا رہا ہے

سکیورٹی مبصرین کے مطابق مشرق وسطیٰ میں امریکا کا کم ہوتا ہوا کردار بھی ریاض کے لیے تشویش کا باعث ہے، اس لیے وہ علاقائی سطح پر نئے اتحادیوں کی تلاش میں ہے۔

ان فوجی مشقوں میں زیادہ تر فوجیوں کا تعلق سعودی عرب سے ہی ہے۔ سعودی عرب کا کہنا ہے کہ یہ اتحاد مستقبل میں خفیہ معلومات کے تبادلے کے علاوہ دیگر معاملات میں بھی تعاون کرے گا۔