1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

فلسطین اسرائیل تنازعہ اور امریکہ

امریکی ایوان نمائندگان نے غزہ جنگ کے حوالے سے اقوام متحدہ کی تحقیقات کی مذمت کردی ہے۔ دوسری جانب امریکی وزیر خارجہ ہلیری کلنٹن دورہ مشرقی وسطیٰ کے دوران امن مذاکرات دوبارہ بحال کرانے کی کوششوں میں مصروف ہیں ۔

default

فائل فوٹو

امریکی ایوان نمائندگان نے غزہ جنگ کے حوالے سے اقوام متحدہ کی تحقیقاتی رپورٹ کوجانبدارانہ قراردیتے ہوے اس کی مذمت کردی ہے۔ جنوبی افریقی جج رچرڈ گولڈ سٹون کی سربراہی میں تیار کردہ اس رپورٹ میں اسرائیلی انتظامیہ اور فلسطینی عسکریت پسندوں کی تنظیم حماس پر جنگی جرائم کا الزام عائد کیا گیا تھا۔

منگل کے روز امریکی ایوان نمائندگان میں منظورکردہ قرارداد کے مطابق اس رپورٹ میں امریکہ کے قریبی حلیف اسرائیل کے ساتھ تعصبانہ رویہ اختیار کیا گیا ہے۔ یاد رہے کہ گولڈ اسٹون رپورٹ میں غزہ جنگ کے دوران تقریباً چودہ سو بے گناہ افراد کی ہلاکت کا ذمہ دار اسرائیل اور حماس دونوں کو قراردیا گیا تھا۔ دونوں اس رپورٹ کو مسترد کر چکے ہیں۔

رپورٹ میں اسرائیل پر زیادہ الزام تراشی کی گئی تھی اور چھ ماہ کے اندر غزہ جنگ کی قابل اعتماد تحقیقات نہ کرنے کی صورت میں دونوں کو متنبہ کیا گیا تھاکہ معاملہ جنگی جرائم کی عالمی عدالت میں پیش کر دیا جائے گا۔

Nahostreise Hillary Rodham Clinton 2009

ہلیری کلنٹن نے اپنے ایک حالیہ بیان میں کہا تھا کہ یہودی بستیوں کی تعمیر روکنے کو مذاکرات کی پیشگی شرط نہیں ہونا چاہئے

اھر امریکی وزیرخارجہ ہلیری کلنٹن نے فلسطینی اور اسرائیلی رہنماؤں سے ملاقاتوں کے بعد، پیرکو مراکش میں عرب ملکوں کے وزرائے خارجہ سےملاقات کی۔ اس ملاقات کے بعد اپنے ایک بیان میں کلنٹن نے کہا کہ یہودی بستیوں میں تعمیر و توسیع سے متعلق اسرائیلی مؤقف اس حوالے سے سبھی توقعات پوری نہیں کرتا۔ ماہرین کلنٹن کے اس بیان کو عرب دنیا کی اِسی وجہ سے امریکہ سے ناراضگی کم کرنے کی کوشش کا نام دے رہے ہیں۔

اس ناراضگی کی وجہ عرب دنیا میں پایا جانے والا ایہ احساس ہے کہ اوباما انتظامیہ نے شروع میں تو اسرائیل کو فلسطینیوں کے ساتھ مذاکرات شروع کرنے پر مجبور کرنے کے لئے کافی دباؤ ڈالا، اور یہ بھی کہا کہ اسرائیل کو یہودی بستیوں میں تمام تعمیراتی منصوبے فوری طور پر روک دینا چاہیئں لیکن وزیر اعظم نیتن یاہو کے سخت گیر مؤقف کے بعد ہلیری کلنٹن نے ابھی حال ہی میں یہ بھی کہہ دیا کہ اسرائیل کے لئے اس بات کی حیثیت کسی پیشگی شرط کی نہیں کہ فلسطینیوں کے ساتھ مکالمت سے پہلے یہودیوں بستیوں میں تعمیراتی منصوبے روکے جائیں۔

اس پس منظر میں عرب وزرائے خارجہ کی طرف سے امریکہ پر تنقید میں کمی کی کوشش کرتے ہوئے ہلیری کلنٹن نے کہا کہ اسرائیل کا اِن بستیوں سے متعلق رویہ توقعات سے کم لچکدار ہے۔ یہی وجہ ہے کہ عرب ملکوں کے وزارتی اجلاس میں کلنٹن شرکاء کو اس امر کا قائل کرنے میں ناکام رہیں کہ امریکہ بڑی سنجیدگی سے مغربی کنارے کے مقبوضہ فلسطینی علاقے میں یہودی تعمیرات رکوانا چاہتا ہے۔

Israelische Luftwaffe greift weiter Ziele im Gazastreifen an

غزہ جنگ میں بچوں کی بڑی تعداد متاثر ہوئی

مراکش میں اپنے تازہ ترین بیان میں کلنٹن نے یہ تاثر زائل کرنے کی کوشش کی کہ موجودہ دورے کے دوران ان کا اسرائیلی توسیع پسندی کے حوالے سے تنقیدی رویہ بہت نرم تھا۔ اپنے اس بیان میں ساتھ ہی کلنٹن نے یہ بھی کہا کہ فلسطینی صدر محمود عباس کی امن کوششیں اور مغربی کنارے کے علاقے میں اضافی سیکیورٹی مثبت عوامل ہیں، اور وہ توقع کرتی ہیں کہ اسرائیل بھی اس حوالے سے مثبت رد عمل کا مظاہرہ کرے گا۔ محمود عباس نے ابو ظہبی میں ہلیری کلنٹن کے ساتھ ملاقات میں واضح کر دیا تھا کہ فلسطینی اسرائیل کے ساتھ جس طرح کا قیام امن چاہتے ہیں، اُس کے لئے جغرافیائی طور پر سرحدوں کا تعین 1967 کی جنگ سے پہلے کی صورت حال کے مطابق ہو گا۔

عرب لیگ کے سیکریٹری جنرل امر موسی کے مطابق "امریکہ کا اسرائیلی آبادکاری کے حوالے سے سست رویہ اُن توقعات کو نقصان پہنچا سکتا ہے، جو صدر اوباما کی عرب اسرائیل پالیسی کے بعد پیدا ہوئی تھیں"۔

اپنے دورہء مشرق وسطیٰ کے اگلے مرحلے میں ہلیری کلنٹن کو مصر جانا ہے، جہاں وہ صدر حسنی مبارک سے ملاقات کریں گی۔

رپورٹ : عبدالرؤف انجم

ادارت : مقبول ملک

DW.COM