1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

فلسطینی علاقوں میں تمام یہودی بستیاں غیر قانونی، یورپی یونین

یورپی یونین نے اسرائیل سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ مغربی کنارے کے مقبوضہ علاقے میں نئی یہودی بستیوں کی تعمیر لازمی طور پر بند کرے۔ یونین کے مطابق ان نئے آباد کاری منصوبوں سے فلسطینیوں کے ساتھ ممکنہ قیام امن کو خطرہ ہے۔

default

دریائے اردن کے مغربی کنارے کے مقبوضہ فلسطینی علاقے میں قائم کردہ یہودی آباد کاروں کی ایک بستی

بیلجیم کے دارالحکومت برسلز میں یورپی یونین کے صدر دفاتر سے بدھ اٹھارہ اکتوبر کو ملنے والی نیوز ایجنسی روئٹرز کی رپورٹوں کے مطابق یونین کے خارجہ امور کے شعبے کی طرف سے جاری کردہ ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ اسرائیل ویسٹ بینک کے مقبوضہ فلسطینی علاقے میں یہودی آباد کاروں کے لیے جو نئے گھر تعمیر کرنے کے منصوبے بنا رہا ہے، وہ تمام منصوبے فوری طور پر روکے جانا چاہییں۔

فلسطینی وزیر اعظم غزہ پہنچ گئے

اسرائیل کی مخالفت کے باوجود فلسطین انٹرپول کا رکن بن گیا

مصری صدر کی اسرائیلی وزیراعظم سے پہلی عوامی ملاقات

بیان کے مطابق اسرائیل کی یہودی آباد کاری کی سیاست کے تحت کیے جانے والے ایسے فیصلے اور فلسطینی علاقوں میں یہودی بستیوں کا قیام اور ان میں توسیع فلسطینیوں کے ساتھ مستقبل میں طے پانے والے کسی بھی امن معاہدے کے لیے بڑا خطرہ ہیں۔

یورپی یونین کے خارجہ امور کے دفتر نے کہا ہے، ’’یورپی یونین نے اسرائیل سے کہا ہے اور برسلز کو توقع ہے کہ اسرائیل اس بات پر عمل بھی کرے گا کہ ان تمام فیصلوں پر نظر ثانی کی جانا چاہیے، جو اسرائیل اور فلسطینیوں کے مابین بامقصد امن بات چیت کی بحالی کی کوششوں میں بڑی رکاوٹ ثابت ہو رہے ہیں۔‘‘

West Bank | Bau neuer Häuser in der territorial umstrittenen Shiloh Siedlung

اسرائیل اب تک مقبوضہ فلسطینی علاقوں میں بہت سی بستیاں تعمیر کر چکا ہے، جن میں ہزارہا یہودی رہتے ہیں

یورپی یونین کی طرف سے یہ بھی کہا گیا ہے، ’’بین الاقوامی قانون کے تحت مقبوضہ فلسطینی علاقوں میں یہودی آباد کاری کی ہر قسم کی سرگرمیاں غیر قانونی ہیں اور ان سے اس دو ریاستی حل کے قابل قبول ہونے کی بھی نفی ہو رہی ہے، جس کے لیے خطے میں دیرپا امن کی خاطر کوششیں کی جا رہی ہیں۔‘‘

اسرائیل میں الجزیرہ کا دفتر اور نشریات بند کرنے کا فیصلہ

یہودی آباد کاری کے لیے ہم سے زیادہ کسی نے نہیں کیا، نیتن یاہو

اسرائیل اشتعال انگیزی کر رہا ہے، مسلم ملکوں کی تنظیم

یورپی یونین کا عرصے سے موقف ہے کہ اسرائیل نے 1967ء کی عرب اسرائیل جنگ میں مغربی کنارے، مشرقی یروشلم اور گولان کی پہاڑیوں سمیت جن علاقوں پر قبضہ کر لیا تھا، وہ قطعی غیر قانونی ہے اور یہ تمام مقبوضہ علاقے اسرائیل کی بین الاقوامی سطح پر تسلیم شدہ سرحدوں سے باہر  ہیں، جو اسرائیلی ریاست کا حصہ ہو ہی نہیں سکتے۔

DW.COM